Europe kashmir

10

یورپین پارلیمنٹ میں کشمیر ویک کی تقریبات کا آغاز

برسلز(سٹیٹ ویوز)یورپین پارلیمنٹ میں کشمیر ای یو ویک کی تقریبات کا آغاز ہو گیا ،پہلے روز تصویری نمائش کے ساتھ بین الاقوامی کانفرنس کا انعقاد،یورپی اراکین پارلیمنٹ ،سول سوسائٹی ،میڈیا سے تعلق رکھنے والے نمایا ں افراد کی شرکت ،وزیراعظم آزادکشمیر راجہ فاروق حیدر خان نے کانفرنس کا افتتاح کیا جبکہ میزبانی یورپین رکن پارلیمنٹ سجاد کریم نے کی

وزیراعظم آزادکشمیر نے کانفرنس کے افتتاحی سیشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یورپین اقوام بھارت سے آزاد تجارت معاہدوں کے بجائے انسانی حقوق کو ترجیح دے ،بھارتی وزیراعظم کی انتہا پسندانہ پالیسوں سے خطے کے امن کو شدید خطرات لاحق ہیں ،وہ گجرات میں مسلمانوں کی نسل کشی میں ملوث اور مسلمانوں کے خلاف نسلی فسادات کا ماسٹر مائنڈ ہے ، ہندوستان کے دوچہرے ہیں ایک اقوام عالم کے لیے جس پر اس نے شرافت کا نقاب اوڑھ رکھا ہے اور دوسرا کشمیریوں کے لیے جن کی وہ کئی دہائیوں سے نسل کشی کررہا ہے

اقوام متحدہ کی قراردادوں اور عالمی انسانی منشور کے تحت اپنے پیدائشی حق سے محروم قوموں کو اپنے حقوق کے لیے مسلح جدوجہد کرنے کی اجازت دی گئی ہے اور یہ کشمیریوں کا بنیادی حق ہے ،لائن آف کنٹرو ل کشمیریوں کے لیے کوئی معنی نہیں رکھتی نہ اس کے تقدس کو کشمیری مانتے ہیں میرا حلقہ انتخاب لائن آ ف کنٹرول پر واقع ہے ہندوستانی فوج مقبوضہ وادی میں ظلم و بربریت کے ساتھ ساتھ لائن آف کنٹرول پر چھوٹے بچوں ،بوڑھوں،عورتوں اور جانوروں کو نشانہ بنارہی ہے کشمیری قوم ڈرنے والی یا اپنی جدوجہد ترک کرنے والی نہیں ہندوستان کے مظالم ہمارے عزم کو کمزور نہیں کر سکتے وہ اپنے آپ کو خطے میں برطانیہ کا جانشین سمجھتا ہے اسی وجہ سے اس نے کشمیر سمیت کئی ریاستوں پر جبری قبضہ کیا اور ان کے بنیادی حقوق سلب کیے وزیراعظم آزادکشمیر نے کہا کہ کشمیری دنیا کی پرامن ترین قوم ہیں یورپین اقوام انسانیت دوستی اور انسانی حقوق کی علمبردار ہیں ہندوستان سے تجارتی معائدوں کو مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں بند کرنے سے مشروط کرے اور وہاں اپنا مبصر مشن بھیجے جو کہ موقع پر صورتحال کا جائزہ لیکر رپورٹ پیش کرے ۔

وزیراعظم آزادکشمیر نے چیئرمین کشمیر کونسل یورپ علی رضا سید کی جانب سے مسئلہ کشمیر کو یورپین یونین میں اجاگر کرنے کے حوالے سے کی جانے والی کاوشوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ ہر سال کشمیر کونسل یورپ کشمیر کے حوالے سے مختلف خصوصی تقریبات کا انعقاد کرتی ہے جس سے ایک بڑی تعداد مسئلہ سے متعلق آگاہی حاصل کرتی ہے ۔

آزادکشمیر کے سینئر وزیر چوہدری طارق فاروق نے کہا کہ بھارت اور پاکستان کے مابین دوطرفہ مذاکرات سے مسئلہ کشمیر حل نہیں ہو سکتا کیونکہ اس سے قبل اب تک اس طرح کے مذاکرات کارگر ثابت نہیں ہوئے انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کے حل کے لیئے عالمی برادری کو مداخلت کرنا ہو گی ۔انہوں نے علی رضا سید اور ان کی ٹیم کی جدوجہد کی تعریف کی رکن یورپی پارلیمنٹ سجاد کریم جو پارلیمنٹ میں کشمیر ای یو ویک کے میزبان بھی ہیں کہا کہ یورپی پارلیمنٹ میں کشمیر کے بارے میں نام لینا بھی بہت مشکل تھا لیکن چیئرمین کشمیر کونسل ای یو علی رضا سید اور ان کے ساتھیوں نے اس کام کو ممکن بنایا ہے

انہوں نے مزید کہا کہ بھارت کے ساتھ آزاد تجارت کے معاہدے میں انسانی حقوق کے تحفظ پر زور دیا گیا ہے چیئرمین کشمیر کونسل ای یو علی رضا سید نے اپنے خطاب میں بیرون ممالک میں مقیم کشمیریوں کے مابین قریبی تعلقات اور تعاون کی تجویز پیش کی اور کہا کہ اس طرح مسئلہ کشمیر کو بھرپور طور پر اجاگر کرنے میں مدد ملے گی انہوں نے کہا کہ یورپ میں رہنے والی کشمیری برادری یورپ اور کشمیر کے مابین رابطوں کو مضبوط بنانے میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں

انہوں نے مزید کہا کہ کشمیر کونسل ای یو مسئلہ کشمیر کو زیادہ سے زیادہ اجاگر کرنے میں اپنی جدوجہد جاری رکھے گی بھارت کے ساتھ آزاد تجارت کے معاہدے کے بارے میں رکن ای یو پارلیمنٹ واجد خان نے کہا کہ یورپی یونین کو تجارت اور مالی مفاد کے بجائے انسانی حقوق کو ترجیح دینی چاہیے انہوں نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے تحت کشمیریوں کے ساتھ ان کو حق خودارادیت دینے کا وعدہ پورا کیا جائے واجد خان نے بھی کشمیر کونسل ای یو کی جدوجہد کو سراہا برسلز پارلیمنٹ کی سابق رکن ڈینیل کارون نے تجویز پیش کی کہ کشمیر سے یورپ کے لیے وفود کا سلسلہ جاری رہنا چاہیے تاکہ یورپین کو مسئلہ کشمیر کو بہتر طور پر سمجھنے میں مدد مل سکے ۔ایم ایل اے راجہ جاوید اقبال نے یورپی یونین سے مطالبہ کیا کہ وہ کشمیریوں کے حقوق پامال ہونے سے بچائے اور مسئلہ کشمیر کے حل میں کردار ادا کرے ۔