8

دودھ فروش یا…

وہ دودھ فروخت کرنے کا کاروبار کرتا تھا.شہر میں داخلے کے مقام پر اسے روز فوڈ انسپکٹر اس کی گاڑی روک کر دودھ چیک کرتا اور ہرروز دودھ میں ملاوٹ کی وجہ سے اسے جرمانہ ادا کرنا پڑتا . ایک دن وہ ایک جنرل سٹور سے کچھ اشیا ء خرید رہا تھا کہ اس کی نظر شہد کی ایک بوتل پر پڑی جس پر لکھا تھا “اسلامی شہد”.
یہ پڑھ کر اس کی آنکھوں میں چمک آگئی اور اس کے منہ سے بے اختیار نکلا “مل گیا مل گیا”.
دودھ فروش فوری طور پر گھر واپس آیا اپنی دودھ والی گاڑی اور دودھ کے ڈبو پر “اسلامی دودھ” لکھوادیا.
اب اس دن کے بعد چیکنگ پوسٹ پر فوڈ انسپکٹر اس کی دودھ والی گاڑی کو نہیں روکتابلکہ اس گاڑی کو کھڑے ہوکر سلیوٹ کرتا ہے اور چیکنگ کےلیے وہاں کھڑی دوسری گاڑیوں کے مالکان سے بھی کہتا ہے. اس گاڑی کو راستہ دوبھائی راستہ دو…. اور ساتھ ہی اس کا کاروبار بھی چمک اٹھاہے.