Masood Naseema wani

35

مسعود خان نے مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے کوششیں تیز کردیں

اسلام آباد (سٹیٹ ویوز) سردار مسعود خان صدر آزاد جموں وکشمیر نے کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر کے مستقل اور پر امن حل کے لیے اجتماعی طور پر کوششوں کی ضرورت ہے۔

صدر نے ان خیالات کا اظار نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی میں دھشت گردی پر عاملی جنگ اور امن کیلئے کوششوں کے عنوان سے منعقدہ سمینار سے خطاب کے دوران کیا ۔

انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر پر دو طرفہ مذاکرات ہمیشہ ناکام رہے اور یہ وقت ہے کہ اقاوم متحدہ اپنی قراردادوں پر عملدرآمد کرواتے ہوئے کشمیریوں کو حق خود ارادیت دلائے انہوں نے مزید کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں امن و امان کی صورتحال انتہائی خراب ہے اور مسلہ کشمیر حل کیئے بغیر جنوبی ایشیاء میں امن نا ممکن ہے ۔

صدر سردار مسعود خان نے کہا کہ پاکستان نے عسکریت پسندوں کے خلاف کسی قسم کی نرمی کے بغیر دہشت گردوں کے نیٹ ورک کو تباہ کر دیا ہے ۔ اور ان کی صلاحیتوں کو خم کر دیا گیا ہے ۔ صدر سردار مسعود خان نے کہا کہ پاکستان نے دہشت گردی کی جنگ جیت چکا ہے اور اس نے سب سے زیادہ جانی ومالی نقصان اٹھایا ہے اور اس سے زیادہ کوئی مطالبہ نہیں کیا جا سکتا ۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردوں کے خلاف جنگ میں پاکستان کی قربانیوں کو تسلیم کیا جانا چاہیے ۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی نئے اتحاد کے تحت پاکستان کے مفادات کو کوئی خطرہ لاحق نہ ہے اور دہشت گردی کے خلاف اس جنگ کی کامیابی کو یقینی بنایا جا ئے گا۔

صدر آزاد کشمیر نے کہا کہ پاکستان مغرب اور شمالی مغرب کی جانب سے اپنی علاقائی سالمیت کی حفاظت چاہتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بھارت پاکستان کی سالمیت کے لیے ایک مستقل خطرہ ہے ۔ کیونکہ بھارتی افواج اور انٹیلیجس ایجنسیاں پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کے لیے علی الا علان کارروائیوں میں مصروف ہیں ۔ اور اس کو مسئلہ کشمیر کی سزا کا نام دیا جارہا ہے ۔ صدر آزاد کشمیر نے زور دے کر کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں بنے ہوئے اتحاد کے خاتمے سے دہشت کردوں کو دوبارہ سنبھلنے میں مدد ملے گی اس لیے ہم ایسی کسی غلطی کے متحمل نہیں ہو سکتے ۔

انہوں نے کہا کہ امن مذاکرات کو کوشش شروع کرنے میں پہل کرنے والے کے لیے نہ تو کوئی انعام ہے اور نہ ہی کوئی شکست ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور آزاد کشمیر میں سرمایہ کاروں کے لیے تعاون اور سہولیات فراہم کریں گے ۔ صدر مسعود خان نے کہا ہے کہ سی پیک کے باعث پاکستان معاشی طور پر ترقی کی راہیں تیزی سے طے کر رہا ہے اور اسے خطے میں خوشحالی اور امن کو فروغ ملے گا ۔ سی پیک کسی علاقے یا ملک کے لیے کوئی خطرہ نہیں ہے ۔ اس سیمینار سے لیفٹیننٹ جنرل ماجد احسان صدر نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی ، سکالرز ، اکیڈمی ممبران اور طلباء نے بھی خطاب کیا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں