mANGLA DAM

28

واپڈا منگلا متاثرین کے 2ارب روپے دباکر بیٹھ گیا

میرپور(عدنان جبار مغل/وقائع نگار) منگلا ڈیم کی توسیع مکمل ہونے کے باوجود واپڈا ہٹ دھرم ہو گیا متاثرین منگلا ڈیم کے 2 ارب روپے دبا کر بیٹھ گیا .

تفصیلات کے مطابق 2002 میں منگلا ڈیم کی تعمیر کے بعد لوگوں کے مکانات اور زمینوں کے معاوضہ جات کا تعین بہت کم کیا جس کے خلاف درجنوں متاثرین نے عدالتوں کا دروازہ کھٹکھٹایا.

رپورٹ کے مطابق تقریباً 200 سے زائد متاثرین کے حق میں ریفرنس کورٹ سے سپریم کورٹ تک فیصلہ جات ہو چکے ہیں معاوضہ کی یہ رقم تقریباً 2 ارب کے قریب ہے جسے واپڈا گذشتہ چھ برسوں سے دینے سے انکاری ہے امور منگلا ڈیم کے حکام عدالتی فیصلہ جات کی تعمیل اور معاوضہ جات کے لئے درجنوں یاددہانی مکتوب تحریر کر چکا ہے جنہیں واپڈا حکام نے خاطر میں نہیں لایا

اس سلسلے میں کچھ عرصے قبل عدالت نے سخت ترین نوٹس لیکر واپڈا کے دو آفیسران کے وارنٹ گرفتاری جاری کر کے انھیں گرفتار کرنے کا حکم دیا تھا جس پر انتظامیہ عملدرآمد نہیں ہو سکا تھا اب حکومت نے واپڈا کی ڈیم کی دست برد سے بچ جانے والی اراضی کو نیلام کرنے کا فیصلہ کیا ہے یہ اراضی نیلام کر کے متاثرین کو ادائیگی کی جاے گی واضح رہے کہ وفاق میں مسلم لیگ کی حکومت ہونے کے باوجود یہ مسلۂ حل نہیں کروایا جا سکے بطور اپوزیشن لیڈر فاروق حیدر واپڈا کے خلاف تند وتیز زبان استعمال کرتے رہے ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں