19

میدان جنگ میں ابوجہل اور دو کمسن بچوں کا سامنا

اسلام آباد( سٹیٹ ویوز)حضرت عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ مجاہدین کی صف میں کھڑے ہونے کے بعد جب میں نے دائیں بائیں جانب نظر کی تو کسی قدر مایوس ہوا کہ میری دونوں جانب انصار کے دو کم عمر بچے کھڑے تھے میں سوچنے لگا کہ ان بچوں سے کیا بنے گا؟

تگڑے جوان ہوتے تو وہ اس معرکے میں میرے کام آتے یہ بچے میرے کس کام کے۔ حضرت عبدالرحمٰن بن عوفؓ فرماتے ہیںکہ ابھی میں انہی خیالات میں کھویا ہوا تھا کہ جنگ شروع ہو گئی۔پہلی اور آخری فیصلہ کن جنگ۔ جسے تاریخ میں غزوہ بدر کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔

ایسی جنگ جس میں نہتے لوگوں کا قریش کے سور ماؤں سے مقابلہ تھا۔ ایک طرف بے سرو سامانی دوسری طرف تمام مادی ذرائع و سائل۔ ایک طرف تین سو تیرہ فاقہ تیرہ فاقہ کش و گلیم پوش لوگ اور دوسری طرف ایسے ایسےصاحب ثروت کہ ان کا ایک ایک آدمی ایک ہزار کے لشکر کا تنہا میزبان بن سکتا تھا۔

ایک جماعت کو اپنی تعداد و سامان رسد اسلحہ اور آزمودہ کاری پر ناز تھا۔ ہر فرد طاقت کے نشے میں چور اکڑ اکڑ کر چل رہا تھا اور دوسری جماعت کا سارا سرمایہ اور سارا اثاثہ صرف ایمان و یقین تھا۔ سیدنا علی مرتضیٰ شیر خدا کرم اللہ وجہہ کے پاؤں دہکتے ہوئے ریگستان میں چلتے وقت جلنے لگے

کہ پاؤں میں جوتے نہیں تھے۔ نبی ﷺ سے شکایت کی تو جواب ملا علی! جوتے نہیں تو کیا ہوا؟ پاؤں میں چیتھڑے لپیٹ لو۔ اور شیر خدا نے تعمیل ارشاد کی۔جنگ زور و شور سے جاری تھی کہ جناب عبدالرحمٰن بن عوفؓ سے ان دو نو عمر انصاری بچوں نے سوال کیا چچا جان!

آپ ابوجہل کو پہچانتے ہیں؟ میں نے کہا ہاں مگر تم کیوں پوچھتے ہو؟ بچوں کی آنکھوں سے شعلے نکلنے لگے۔کہا! ہم نے سنا کہ وہ ہمارے سرکار ﷺ کی شان میں گستاخیاں کرتا ہے خدائے واحد ولا یزال کی قسم اگر آج وہ ہمیں مل گیا تو یا وہ نہیں یا ہم نہیں۔

اتفاقاً گھوڑے پر سوار اور لوہے میں غرق ابوجہل لشکر کفار میں دوڑ بھاگ کرتا ہوا نظر آ گیا میں نے بچوں سے کہا۔ وہ ہے ابوجہل۔ اتنا سننا تھا کہ دونوں بچے باز کی طرح اس پر جھپٹ پڑے ایک نے گھوڑے پر حملہ کیا اور ابوجہل گھوڑے سے گر پڑا اور دوسرے نے تلوار کا ایسا وار اس کی ٹانگ پر کیا کہ پھر ابوجہل اٹھ نہ سکا۔

آخر حضرت عبداللہ بن مسعودؓ نے جا کر اس کا سر تن سے جدا کیا۔ ابوجہل کے بیٹے عکرمہ نے یہ حال دیکھا تو پلٹ کر آیا اور ایک لڑکے کا ہاتھ کاٹ دیا۔ ہاتھ کٹ گیا مگر دونوں شہ باز معاذ بن عمر اور معوذ بن عفرا رضی اللہ عنہما خوشی سے سرشار تھے کہ انہوں نے ایک سخت گستاخ زبان کو ہمیشہ کے لئے خاموش کر دیا ہے اسلامی تاریخ آج ایسے ہی ستاروں پر کمند ڈالنے والے جوانوں کی منتظر ہے۔

میدان جنگ میں ابوجہل اور دو کمسن بچوں کا سامنا ،پڑھیے نبی پاک ﷺ کےدو ننھے جانثاروں کی شجاعت کا ایسا واقعہ جو آپ کے ایمان کو ترو تازہ کر دے گا

حضرت عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ مجاہدین کی صف میں کھڑے ہونے کے بعد جب میں نے دائیں بائیں جانب نظر کی تو کسی قدر مایوس ہوا کہ میری دونوں جانب انصار کے دو کم عمر بچے کھڑے تھے میں سوچنے لگا کہ ان بچوں سے کیا بنے گا؟ تگڑے جوان ہوتے تو وہ اس معرکے میں میرے کام آتے یہ بچے میرے کس کام کے۔ حضرت عبدالرحمٰن بن عوفؓ فرماتے ہیں

کہ ابھی میں انہی خیالات میں کھویا ہوا تھا کہ جنگ شروع ہو گئی۔

پہلی اور آخری فیصلہ کن جنگ۔ جسے تاریخ میں غزوہ بدر کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ ایسی جنگ جس میں نہتے لوگوں کا قریش کے سور ماؤں سے مقابلہ تھا۔ ایک طرف بے سرو سامانی دوسری طرف تمام مادی ذرائع و سائل۔ ایک طرف تین سو تیرہ فاقہ تیرہ فاقہ کش و گلیم پوش لوگ اور دوسری طرف ایسے ایسےصاحب ثروت کہ ان کا ایک ایک آدمی ایک ہزار کے لشکر کا تنہا میزبان بن سکتا تھا۔ ایک جماعت کو اپنی تعداد و سامان رسد اسلحہ اور آزمودہ کاری پر ناز تھا۔

ہر فرد طاقت کے نشے میں چور اکڑ اکڑ کر چل رہا تھا اور دوسری جماعت کا سارا سرمایہ اور سارا اثاثہ صرف ایمان و یقین تھا۔ سیدنا علی مرتضیٰ شیر خدا کرم اللہ وجہہ کے پاؤں دہکتے ہوئے ریگستان میں چلتے وقت جلنے لگے کہ پاؤں میں جوتے نہیں تھے۔

نبی ﷺ سے شکایت کی تو جواب ملا علی! جوتے نہیں تو کیا ہوا؟ پاؤں میں چیتھڑے لپیٹ لو۔ اور شیر خدا نے تعمیل ارشاد کی۔جنگ زور و شور سے جاری تھی کہ جناب عبدالرحمٰن بن عوفؓ سے ان دو نو عمر انصاری بچوں نے سوال کیا چچا جان!

آپ ابوجہل کو پہچانتے ہیں؟ میں نے کہا ہاں مگر تم کیوں پوچھتے ہو؟ بچوں کی آنکھوں سے شعلے نکلنے لگے۔کہا! ہم نے سنا کہ وہ ہمارے سرکار ﷺ کی شان میں گستاخیاں کرتا ہے خدائے واحد ولا یزال کی قسم اگر آج وہ ہمیں مل گیا تو یا وہ نہیں یا ہم نہیں۔

اتفاقاً گھوڑے پر سوار اور لوہے میں غرق ابوجہل لشکر کفار میں دوڑ بھاگ کرتا ہوا نظر آ گیا میں نے بچوں سے کہا۔ وہ ہے ابوجہل۔ اتنا سننا تھا کہ دونوں بچے باز کی طرح اس پر جھپٹ پڑے ایک نے گھوڑے پر حملہ کیا اور ابوجہل گھوڑے سے گر پڑا اور دوسرے نے تلوار کا ایسا وار اس کی ٹانگ پر کیا کہ پھر ابوجہل اٹھ نہ سکا۔

آخر حضرت عبداللہ بن مسعودؓ نے جا کر اس کا سر تن سے جدا کیا۔ ابوجہل کے بیٹے عکرمہ نے یہ حال دیکھا تو پلٹ کر آیا اور ایک لڑکے کا ہاتھ کاٹ دیا۔ ہاتھ کٹ گیا مگر دونوں شہ باز معاذ بن عمر اور معوذ بن عفرا رضی اللہ عنہما خوشی سے سرشار تھے کہ انہوں نے ایک سخت گستاخ زبان کو ہمیشہ کے لئے خاموش کر دیا ہے اسلامی تاریخ آج ایسے ہی ستاروں پر کمند ڈالنے والے جوانوں کی منتظر ہے۔