27

امریکی اعلان کیخلاف شدید مظاہرے، فائرنگ، درجنوں گرفتار

بیت المقدس (مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سےبیت المقدس کواسرائیل کادارالخلافہ تسلیم کرنےکے اعلان کےبعد مغربی کنارے پرشدید مظاہرے شروع ہوگئےہیں، اسرائیلی فورسزکی جانب سےمظاہرین پرفائرنگ کےبعد کئی شہری شدید زخمی ہوگئےہیں جبکہ فورسزنےدرجنوں مظاہرین کوگرفتارکرلیا ہے۔

عرب میڈیا کے مطابق مغربی کنارے پر حالات کشید ہ ہوگئے ہیں،امریکی صدر کی جانب سے سفارتخانہ تل ابیب سے بیت المقدس منتقلی کے اعلان کے بعد ہزاروں کی تعداد میں لوگ سڑکوں پر نکل آئے ہیں جو کہ امریکی صدر کی پالیسیوں کے خلاف سراپا احتجاج ہیں، پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لئے آنسو گیس اور لاٹھی چارج کا استعمال کیا جبکہ اسرائیلی فورسز نے طاقت کا بے دریغ استعمال کرتے ہوئے کئی فلسطینی شہریوں کو زخمی کردیا گیا ہے ۔

عینی شاہدین کے مطابق مغربی کنارے کی سڑکوں اور عمارتوں سے دھویں کے بادل اٹھے رہے ہیں جبکہ اسرائیلی فورسز کی جانب سے فلسطینی شہریوں کی کئی بستیوں کو بھی جلا دیا گیا ہے۔ اسرائیلی حکام نے چھاپے مار کارروائیاں کرتے ہوئے متعدد شہریوں کو گرفتار کرکے عقوبت خانوں میں منتقل کردیا ہے۔ایک عینی شاہد نے فوکس نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مغربی کنارے کی بستیوں اور سڑکوں پر فائرنگ اور ایمبولینسز کے آوازیں سنائی دے رہے ہیں اور یوں محسوس ہو رہا ہے کہ علاقہ شدید جنگ کا شکار ہوگیا ہے