لیاقت علی خان ماگرےڈائریکٹ سیلنگ ایسوسی ایشن کےساتھ گورنرسندھ کےپاس پہنچ گئے

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر/سٹیٹ ویوز) پاکستان میں ڈائریکٹ سیلنگ کےحوالےسےقانون سازی میں اہم پیش رفت یہ ہوئی کہ نوجوان بزنس لیڈر۔ ڈائریکٹ سیلنگ ایسوسی ایشن پاکستان کےسینئرنائب صدر لیاقت علیخان ماگرےوفاق ہائے ایوان صنعت و تجارت کی اسٹینڈنگ کمیٹی برائے ڈائریکٹ سیلنگ سسٹم کےچیئرمین راشد عالم سمیت ڈائریکٹ سیلنگ ایسوسی ایشن کے صدر اسکوارڈن لیڈر (ر) عمر فاروق، عبد السمیع خان اور دیگرکےہمراہ گورنر سندھ محمد زبیرکےپاس پہنچ گئےاور انہیں ڈائریکٹ سیلنگ اورایسوسی ایشن بارے قانون سازی اور مشکلات بارےبریفننگ دی۔

گورنرسندھ نےاس موقع پرکہا ہے کہ معاشی خوشحالی کے لئے امن نا گزیر ہے ، امن و امان کے قیام اور توانائی بحران کے خاتمہ کے بعد حکومت معاشی سرگرمیوں میں اضافہ کے لئے بھرپور اقدامات اٹھا رہی ہے، اس ضمن میں کاروبارسے منسلک افراد اہم کردار ادا کرسکتے ہیں ، ڈائریکٹ سیلنگ سسٹم دنیا بھر میں نمایاں مقام حاصل کرچکا ہے جبکہ پاکستان میں بھی اس کی بہت گنجائش ہے ، حکومت براہ راست کاروباری سرگرمیوں کے لئے ہر ممکن تعاون فراہم کرے گی۔

ملاقات میں گورنر سندھ کو بتایا گیا کہ 2015 ءکے سروے کے مطابق دنیا بھر میں 10 کروڑ 30 لاکھ افراد ڈائریکٹ سیلنگ سسٹم کاروباری سرگرمی سے 183 ارب ڈالرز حاصل کرچکے ہیں، اس ضمن میں گزشتہ برس دنیا کے مختلف 44 ممالک میں سروے کیا گیا جس میں سے 75 فیصد کا کہنا تھا کہ براہ راست کاروباری سرگرمی ہونی چاہئے ۔

گورنر سندھ نے کہا کہ صوبہ سندھ بالخصوص کراچی میں ڈائریکٹ سیلنگ سسٹم کو وسعت دینے کی ضرورت ہے ، صارف کو براہ راست مصنوعات ملنے سے زبردست سہولت حاصل ہوتی ہے، ملک کی معاشی شہ رگ کراچی میں اس کام کی بہت گنجائش ہے جہاں بڑھتی ہوئی آبادی کاروبار کو مزید وسعت دے سکتی ہے ۔