zaffar

ایم کیوایم لندن کے رہنما وپروفیسر ڈاکٹر حسن ظفرعارف کراچی میں قتل

کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک) ساحلی پٹی پر واقع علاقے ابراہیم حیدری میں کھڑی ایک کار کی پچھلی نشت سے ایم کیو ایم لندن رابطہ کمیٹی کے ڈپٹی کنوینر ڈاکٹر حسن ظفر عارف کی لاش ملی ہے۔ڈاکٹر حسن عارف گزشتہ روز لاپتہ ہوئے تھے۔

ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ ان کے جسم پر تشدد کے نشانات نہیں ہیں، موت کی وجہ جاننے کے لئے پوسٹمارٹم کیا گیا ہے۔ لاش ملنے کی اطلاع ملتے ہی لواحقین اور پولیس افسران جناح ہسپتال پہنچے۔ ایم کیو ایم لندن لیگل ایڈ کے رہنماء عبد المجید کاروانی کا کہنا ہے کہ وہ گزشتہ شب سے لاپتہ تھے۔73 سالہ پروفیسر ڈاکٹر حسن ظفر عارف کراچی یونیورسٹی کے شعبہ فلاسفی میں پروفیسر رہے اور سرکاری ملازمت سے ریٹائرمنٹ کے بعد 2016ء میں ایم کیو ایم میں شامل ہوئے اور ایم کیو ایم رابطہ کمیٹی کے رکن بنے۔

22 اگست 2016ء کی اشتعال انگیز تقریر کے بعد پروفیسر حسن ظفر ایم کیو ایم لندن کے نمائندے کے طور پر منظر عام پر آئے۔ اکتوبر 2016ء میں انہیں 22 اگست کے مقدمے میں کراچی پریس کلب سے گرفتار کر کے جیل منتقل کر دیا گیا۔ تاہم 9 ماہ بعد اپریل 2017ء میں عدالت سے ضمانت ملنے پر جیل سے رہا کیا گیا تھا۔