انسانی حقوق کا ڈھنڈورا پیٹنے والے امریکہ کا بدنما چہرہ بے نقاب

سڈنی (سٹیٹ ویوز)غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق دنیا میں سب سے زیادہ قیدی امریکی جیلوں میں ہیں اور اس لحاظ سے امریکہ دنیا میں سرفہرست ہے جبکہ امریکی جیلوں میں بائیس لاکھ قیدی موجود ہیں جو پوری دنیا کی جیلوں میں بند کل قیدیوں کی تعداد کا 20 فیصد ہے۔امریکی جیلوں میں جتنے لوگ قید ہیں ان کی تعداد امریکہ کی پندرہ ریاستوں کی کل آبادی سے بھی زیادہ ہے۔

امریکہ میں 102 سینٹرل جیل، ایک ہزار 719 ریاستی جیل، دو ہزار 259 جیلیں نوجوانوں کے لئے مخصوص ہیں اور تین ہزار 228 مقامی اور تارکین وطن کے لئے مختص ہیں۔دیئے گئے اعدادو شمار کے مطابق سالانہ 12 ملین افراد جیلوں میں جاتے اور رہا ہوتے ہیں ۔ امریکہ کی اکتیس ریاستوں میں تاحال پھانسی کی سزا دی جاتی ہے۔

دوسری جانب امریکہ کے عدالتی نظام میں قومی ، نسلی تفریق اور عدم مساوات کے بارے میں انسانی حقوق کے اداروں کی رپورٹ سے معلوم ہوتا ہے کہ سفید فام امریکی شہریوں کے مقابلے میں سیاہ فام امریکی شہری کہیں زیادہ جیلوں میں قید ہوتے ہیں۔امریکی حکومت دنیا میں انسانی حقوق کی پامالی کا سب سے زیادہ ارتکاب کرنے والی حکومت ہونے کے باوجود دنیا بھر میں انسانی حقوق کا سب سے زیادہ ڈھنڈورا پیٹتی ہے۔انسانی حقوق کی پامالی کی ایک بڑی مثال ملک میں بڑھتی ہوئی غربت، سماجی عدم مساوات اور نسلی امتیاز اور تفریق ہے۔