نیشنل پیس کونسل نےملک کی نمایاں شخصیات کو”امن ایوارڈز”سےنوازا دیا

اسلام آباد (حفیظ عثمانی/سٹیٹ ویوز) نیشنل پیس کونسل کے زیراہتمام ملک بھر میں مختلف شعبوں کے اندر نمایاں خدمات سرانجام دینے والی شخصیات کو “امن ایوارڈز” سے نوازا گیا۔

ایوارڈ کے لئے نامزدگی با قاعدہ طور پر ماہرین پر مشتمل کمیٹی نے کی، ایڈورٹائزنگ کی فیلڈ میں قابل قدر خدمات سرانجام دینے پر ایوارڈ میڈاس گروپ کے انعام اکبر اور اخباری دنیا کا ایوارڈ مدثر اقبال بٹ کے نام رہا۔ تقریب کی صدارت نیشنل پیس کونسل کے چیئرمین غلام مصطفی انصاری نے کی اس موقع پر خصوصی طورپر ممبر قومی اسمبلی و پارلیمانی سیکرٹری راجہ محمد جاوید اخلاص ، ممبر قومی اسمبلی و پارلیمانی سیکرٹری شازیہ سہیل میر ، ایڈیشنل سیکرٹری قومی سلامتی کمیٹی خوشدل خان ملک ، برگیڈیئر (ر) اسلم خان ، کرنل (ر) ممتاز خان نیازی ، لالہ جان اچکزئی ایڈوائزر ٹو سی ایم بلوچستان ، ملک مظہر جاوید ایڈوکیٹ ،ملک محمد زبیر چیئرمین سارک ممالک چیمبر آف کامرس ، سینیئر کالم نگار و صحافی جاوید ملک ، حفیظ عثمانی منصور ریحان حسن (یورپ) راجہ مقصود اختر( یو اے ای ) تاجر رہنما اجمل بلوچ ، چوہدری محمد عرفان ، این پی سی کے مرکزی راہنما ناصر شفیع ، رانا محمد طارق ،مقصود احمد کیانی ، حیدر حسین ، ایاز احمد پراچہ ، سردار صلاح الدین ایم حسنی ، مقصود احمد ساون ، حبیب اللہ ، چوہدری محمد انور ، چوہدری تنویر للہ ، سکندر وسیم ،رحیم اللہ بنگش ، مظفر شاہ (ملائیشیا ) اظہار شعر ڈی ایس پی صوابی اور دیگر نے خصوصی طور پر جبکہ آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان سمیت ملک بھر سے کثیر تعدادمیں خواتین و حضرات نے شرکت کی.

اس موقع پر غلام مصطفی انصاری نے اپنے کلیدی خطاب میں کہا کہ اسلام سلامتی کا دین ہے اور دین ہمیں امن کا راستہ دکھاتا ہے اسلام مکمل ضابطہ حیات ہے جہاں مسلمانوں اور کافروں سب کے لئے یہاں تک کہ جانوروں کے لئے بھی حقوق ہیں آج امن کا پیغام پوری دنیا کی سب سے اہم ترین ضرورت ہے ہم امن کا علم لے کر اٹھے اور دنیا تک یہ پیغام پہنچایا ہے کہ دنیا میں تعمیر و ترقی صرف امن کے ذریعے ہی ممکن ہے مغرب ہو یا مشرق دونوں کی ضرورت امن ہے آج انسانیت طرح طرح کی سوچوں میں تقسیم ہے لیکن پرامن معاشرہ اورزندگی سب کی یکساں ضرورت ہے انہوں نے کہا کہ نیشنل پیس کونسل امن کا علم لے کر پوری دنیا میں اپنا پیغام عوام الناس تک پہنچا رہی ہے اور اس پیغام کو عوامی مقبولیت حاصل ہو رہی ہے.

اس موقع پر دیگر مقررین نے کہا کہ خنجراب سے گوادر تک اور پشاور سے کراچی تک آج عوام میں امن کا شعور اجاگر کرنا ناگزیر ہے یہ کام صرف اور صرف حکومتوں کا نہیں بلکہ ترقی یافتہ معاشرے اپنے حصے کا دیا خود ہی جلاتے ہیں اور ہم سب کو اس پیغام کو عام کرنے کیلئے عملی کاوشیں کرنی چاہیے۔تقریب میں سکولوں کے بچوں نے ملی نغمات اور مختلف خاکے بھی پیش کیے جبکہ مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی شخصیات نے امن عالم کی اہمیت پر خطابات کئے۔تقریب کا اختتام ملکی استحکام و سالمیت کیلئے خصوصی دعا سے ہوا۔