حقا نی کے انکشا فات کے بعد آصف زرداری کا مستقبل کیا ؟

حسین حقا نی نے پاکستان اور پاکستان پیپلز پا رٹی کی کمر میں وہ چھرا گھونپا ہے جس کا اثر الذولفقار جیسی دہشتگرد تنظیم سے بھی زیا دہ ہے !اگر دیکھا جا ئے تو حسین حقانی اور اسکی ٹیم خواہ وہ آصف علی زرداری ہوں ، یوسف رضا گیلانی ہوں یا کو ئی اور !وہ سب ڈیکلئیرڈمیر جعفراور میر صا دق ہیں !یہاں حیرانی اور پشیمانی کی با ت یہ ہے کہ اس قدر کھلے عام اعتراف جرم کے بعد بھی اگر کو ئی ادارہ ، حکومت حسین حقا نی پر ہا تھ نہیں ڈالتا تو ہم کو یہ تسلیم کرلینا چا ہئے کہ ہم ایجنٹوں کے نرغے میں ہیں ، اور اس کیلئے ہم کو اپنی ترجیحات بدل کر سب سے پہلے غداروں اور جاسوسوں کیخلاف ایکشن لینا چا ہئے !

کون نہیں جا نتا کہ حسین حقا نی کی بیگم فرح ناز اصفہانی کی اس وقت کے صدر ہا ؤ س میں کیا اہمیت تھی ؟اور وہ کس طرح نظام حکومت پر اثر اندازہو تی تھیں ، وہ کس کی منظور نظر تھیں ؟اور وہ آکر کونسی ڈیوٹی پر تھیں کہ انکا شوہر نامدار امریکہ میں سفیر تھا تو وہ پاکستان کے قصر صدارت میں موجود تھیں ؟

دومئی پاکستا ن کی تا ریخ کاایک سیاہ باب تھا !یہاں سوا ل یہ ہے کہ اگر پاکستا ن پیپلز پا رٹی نے اسامہ بن لا دن کیخلاف آپریشن میں امریکہ کی مدد کی تو اس بیما ری کو پاکستان میں لا یا کون؟میں سمجھتا ہوں کہ اسامہ کو پاکستان کی سرزمین پر لانے والا اس آپریشن میں مدد دینے والے جتنا غدار ہے !یہ با ت تو طے تھی کہ اسا مہ کی لڑائی امریکہ سے نہیں تھی بلکہ اس کی وجہ سے یمن ، افغانستان اور کسی حد تک پاکستان بھی متاثر ہوا !اس لڑائی میں اسامہ کی وجہ سے جو نقصان ، شرمندگی اور دہشتگردی کا لیبل اسلام اور مسلمانوں پر لگا کیا اسکی کو ئی تلافی کو ئی حل ہے !آج القا عدہ کا نام و نشان نہیں لیکن کلنک کا ٹیکہ پور ی امت پر ہے !

الیکشن آنے کو ہیں!مسلم لیگ ن کیلئے پانامہ اور پیپلز پا رٹی کیلئے میمو گیٹ پھندے کی شکل میں موجو د ہیں ۔ لیکن اگر غیر جانبدا ری سے جا ئزہ لیا جا ئے اور حالات کی سنگینی کا ادراک کیا جائے تو پتہ چلتا ہے کہ پاکستان مسلم لیگ ن کیخلاف الزامات غیر ملکی ہیں اور ان میں کو ئی شوا ہد بھی نہیں اور کو ئی فنا نشل ٹرانزیکشن کسی بھی شکل میں غداری کے زمرے میں نہیں آتی لیکن دوسری طرف حسین حقا نی کے اعتراف جرم کے ساتھ ساتھ اب تو اس وقت کے وز یر اعظم یوسف رضا گیلانی کے امریکیوں کو ویزے دینے کے احکاما ت کی کاپیاں بھی سوشل میڈیا پروائرل ہو چکی ہیں !

مجھے یا د ہے جب عدلیہ بحالی تحریک عروج پر تھی او ر اس وقت کے اپوزیشن لیڈر میا ں نواز شریف نے عدلیہ بحالی کیلئے لانگ مارچ کا اعلان کیا توا س وقت اسلام آبا د میں یہ با ز گشت تھی کہ اگر تو میاں صا حب رکاوٹیں توڑتے ہو ئے اسلام آباد میں دا خل ہو تے ہیں تو عین ممکن ہے بلیک واٹر کے ایجنٹ انکی ریلی میں گھس کر خون خرابہ کر یں !لیکن خدا کا شکر یہ ہو اکہ گو جرانوالہ پہنچنے سے قبل اس وقت کے آرمی چیف جنرل کیانی نے معاملے کی نزاکت کو سمجھتے ہو ئے ججز کو بحال کرنے کی یقین دھانی کرا دی !اس کامطلب یہ ہوا کہ آصف علی زرداری نے آتے ہی امریکیوں اور بلیک واٹر کو کام کرنیکی اجا زت دی ، اس وقت ایف ٹین او ر ایف سکس سمیت سا ڑھے تین سو سے زا ئد ایسے گھر مار ک ہو ئے تھے جہاں پر بلیک واٹرکے اہلکار رہتے تھے ۔

یہ ایک حقیقت ہے کہ ہمارا بطور قوم حافظہ بہت کمزور ہے ، ہم سیاسی وا بستگیوں کی خا طر اپنے لیڈرز کا بڑے سے بڑا بلنڈر بھی بھو ل جا تے ہیں ، لیکن کچھ با تیں اور واقعات ایسے ہو تے ہیں جن کو بھلا دینا یا نظر انداز کردینا قوموں کی تبا ہی اور زوال کا سبب بن جا تا ہے ۔ آجکل ایک با ر پھر جنا ب آصف علی زرداری تمام الزامات پرکان لپیٹ کر پاکستان کی سیاست پر حا وی ہو نے کا تا ثر دے رہے ہیں ، اس کیلئے انہوں نے ملک کے نا مور اینکر سے انجینئرڈ انٹرویو دلوا کر دبنگ انٹری کی بھی کو شش کی ہے ، لیکن یہا ں سوال یہ پیدا ہو تا ہے کہ کیا حسین حقا نی کے انکشا فات، ڈاکٹر عاصم، اور شرجیل میمن ،عزیز بلوچ کے سا تھ ساتھ ” اینٹ سے اینٹ بجا دینے “کی با تیں کر نے کے بعد بھی مفا ہمت کے چیمپئین کواس با ت کا یقین ہے کہ انکو ایسٹیبلشمنٹ قبول کر لے گی ؟مجھے نہیں لگتا ہے کہ ما ئنس ون فا رمولے کے بغیر مستقبل قریب کو پی پی پی کو کوئی چانس مل سکتا ہے !

یہ عین ممکن ہے کہ کراچی کے معاملا ت میں ایک با ر پھر گرمی آئے ، کو ئی نیا گینگ یا مطلوب شخص پکڑا جا ئے جو زرداری صا حب کا بینڈ ہی بجا دے !اس وقت تحریک انصا ف اور انکے سربراہ جنا ب عمران خان خاموش ہیں ، وہ شا ید پانامہ کیس کے فیصلے کے انتظار میں ہیں ، او ر سا تھ ہی ساتھ وہ پیپلز پا رٹی کے شریک چےئرمین آصف علی زرداری کی سیاسی چا لبا زیوں اور پنجا ب میں ان کے پنتیروں کو تول رہے ہوں ۔ کیونکہ پنجاب میں ان دونوں جما عتوں کو بہر حال مسلم لیگ ن کا سامنا کرنا پڑے گا