نقطہ نظر/جان محمد رمضان

12

پاکستان اور چین کی بیک اَپ کال پر انڈین آرمی نے بوکھلاہٹ کا شکار

چیف آف آرمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ کے حالیہ بیان اور بھارت کو بیک اپ کال دینے پر انڈین آرمی نے اپنے ناقص ہتھیاروں اور گولہ بارود کی کمی کے ہی پول کھول دیئے پچھلے کئی دنوں سے پاک فوج کی لائن آف کنٹرول پر جوابی کاروائیوں سے انڈین آرمی نے بھارتی سرکار کو خط لکھ دیا کہ پاکستان اور چین کی بیک اپ کال پر جنگ کی صورت میں انڈین آرمی کے پاس صرف 10 دن کے گولہ بارود کا اسٹاک موجود ھے اور بعض ہتھیار و گولہ بارود کا اسٹاک تو صرف 5 دن کا ھے .

چین نے تبت پر 160کے قریب بھارتی فوجی ماردیئے جس پر بھی انڈین آرمی نے مودی سرکار کو خدشات کا اظہار کرتے ھوئے لکھاھے کہ پاکستان اور چین سے جنگ(یدھ) لڑنے کی طاقت ہم میں نہیں ھے Comptroller And Auditor General Of India کی رپورٹ کے مطابق جو جہازوں کے ذریعے گولہ بارود استعمال ھوتا ھے وہ 10 دن سے زیادہ کا نہیں اور ٹینکوں میں جو بارود استعمال ھوتا ھے وہ تقریبا 8 دن سے زائد تک کا نہیں ھے 40%گولہ بارود تو اعتماد کے لائق نہیں ھے.

توپ میں چلانے والے بارود کی 83%تک کی کمی ھے سابق آرمی آفیسر جنرل pkنے بھی اپنے خط میں سرکار کو لکھا تھا کہ ہمارے پاس جنگ لڑنے کے لئے 10دن کا ایمولیشن نہیں ھے اور کئی ہتھیار تو صرف 5 دن تک جنگ کے لئے ھے انڈین سرکار نے 2009تا2013تک جتنے اسلحہ بارود کی خریداری کے معاہدے کیئے تھے اس میں بھارتی سرکار نے اربوں کی کرپشن کرکے ناقص ہتھیار انڈین آرمی کو دیئے.

بھارتی سرکار نے اپنے بھارتی فوجیوں کو پاکستان آرمی کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا ھے ادھر آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کے روزانہ کی بنیاد پر بیانات سے بھارتی فوجیوں کی پتلونیں گیلی ھورہی ہیں اسی اثناء میں پاکستان آرمی نے ہندوستان کو 10ٹکڑوں میں بانٹنے کا عہد کررکھا ھے بمبئی دہلی یو پی اترپردیش خالصتان الگ الگ ریاستیں ھونگی پاکستان آرمی سکھوں کو خالصتان دے کر رھے گی.