نقطہ نظر/سید عون شیرای

15

سیاست اور وویمن کارڈ

بطور صحافی میری اول دن سے کوشش رہی ہے کہ وہ بات کروں جو درست سمجھوں اس کیلئے اپنی معلومات پر انحصار کرتا ہوں کسی پروپیگنڈے یا کسی میڈیا گروپ کی خبر پر انحصار نہیں کرتا ، اسی وجہ سے حکومتی پارٹی اور اپوزیشن بالخصوص تحریک انصاف کی جانب سے اکثر گالیاں سننے کو ملتی ہیں.

تفصیل بعد میں لکھوں گا ، لیکن اتنا بتانا چاہتا ہوں کہ کل تک عائشہ گلالئی کے معاملات عمران خان اور تحریک انصاف سے بالکل ٹھیک تھے ، گزشتہ شب ہونے والی ملاقات میں گلالئی کے بعض مطالبات کو نہیں مانا گیا ، اور عمران خان نے کہا بعد میں دیکھیں گے.

کے پی کے میں چونکہ تحریک انصاف کے کئی دھڑے بن چکے ہیں محترمہ عائشہ گلالئی بھی ایک ایسے ہی دھڑے کا حصہ ہے محترمہ کے سابقہ سیاسی کردار کی بات کریں تو یہ پہلے پاکستان پیپلزپارٹی کا حصہ تھیں ، پھر اے پی ایم ایل سے جڑیں ، اور بعدازاں تحریک انصاف کا حصہ بن گئیں ، اب ان کی ن لیگ کی طرف جھکاؤ کی اطلاعات ہیں. کے پی کے میں کیا ہونے جا رہا ہے اور اس میں کون کون سے کردار ملوث ہیں یہ خبر جلد ہی آپ کے سامنے بریک کروں گا

سوشل میڈیا پر تصاویر گزشتہ شام کی ہیں جب عائشہ گلالئی عمران خان سے ملی تھیں جب تک وہ بدکار نہ تھے. آنے والے دنوں میں مزید وویمن کارڈ کھیلے جائیں گے.