5

ایتھوپیا اور اریٹیریا کی سرحد پر ایسا منظر رونما ہو گیا کہ ہر طرف خوف و ہراس کا سما‌ں

واشنگٹن( ویب ڈیسک )افریقی ممالک ایتھوپیا اور اریٹیریا کی سرحد پر ایک ایسا طاقتور آتش فشاں سرگرم ہے کہ جسے سائنسدان ”جہنم کا دروازہ“ کہتے ہیں،اور سب سے خوفناک بات یہ ہے کہ اب اس دروازے کا کھلنے کا شور بلند ہو چکا ہے، جس پر دنیا بھر میں خوف و ہراس کی فضاءپائی جاتی ہے۔

تفصیلات کے مطابق ایک معروف نجومی نے آتش فشاں کے پھٹنے کی صورت میں خوفناک
دھماکے اور بے پناہ تباہی کی پیشن گوئی کی ہے۔اخباری رپورٹ کے مطابق ایرٹا ایل (Erta Ale) آتش فشاں کی کچھ تصاویر حال ہی میں ناسا نے جاری کی ہیں، جن میں دہکتے ہوئے لاوے کی جھیل کی سطح پر پیدا ہونے والی آتشی دراڑوں کو دیکھا جاسکتا ہے۔

سائنس دان یہ دیکھ کر سخت تشویش میں مبتلا ہیں کہ لاوا جھیل سے باہر چھلکنا شروع ہو گیا ہے کسی بھی وقت آگ کے سیلاب کی صورت اختیار کر سکتا ہے۔اس سلسلے میں ادیس ابابا یونیورسٹی کے سائنسدان آتشی دراڑوں اور آتش فشاں میں ہونے والی سرگرمیوں پر مسلسل نظریں جمائے بیٹھے ہیں۔ خلاءسے بنائی گئی تصاویرجن میں لاوے کی جھیل کی سطح سے اٹھتے ہوئے شعلوں اور دھویں کے مرغولوں کو آسانی سے دیکھا جا سکتا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں