Load shedding

5

آزادکشمیر کےدارالحکومت میں اندھیرے کا راج

مظفرآباد(سٹیٹ ویوز) مظفرآباد میں بجلی کی طویل ترین لوڈ شیڈنگ ¾ رات بھر دارالحکومت اندھیرے میں ڈوبار ہا ،عوام کا مختلف علاقوں میں شدید احتجاج، محکمہ برقیات کو ختم کیا جائے ، عوام کو لوڈشیڈنگ سے نجات دلانے کے بجائے پریشان کرنے پر تُلے ہوئے ہیں ، سیکرٹری برقیات،چیف انجینئر برقیات کی کارگردگی مایو س کن ہے ، لوڈ شیڈنگ ختم نہ ہوئی تو وزیر برقیات کے آفس کا گھیراﺅ کریں گے ۔

تفصیلات کے مطابق محکمہ برقیات کی نااہلی دارلحکومت مظفرآباد میں بجلی کی طویل ترین لوڈ شیدنگ کا سلسلہ جاری ، بجلی کی آنکھ مچولی کے باعث عوام کا لاکھوں روپے کا الیکٹرانک سامان جل گیا،جبکہ رات کو بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کے خلاف مختلف علاقوں میں شدید احتجاج کرتے ہوئے عوام نے کہا کہ وزیر برقیات جن کو اپنے محکمہ کا علم تک نہیں پتریڈ پراجیکٹ سے دی جانے والی بجلی مین تاروں کی وجہ سے عوام کو نہ مل سکی ، محکمہ برقیا ت اگر مین تاریں لگائے تو دارلحکومت کی عوام کو لوڈ شیڈنگ سے نجات مل سکتی ہے مگر محکمہ برقیات کی نااہلی اور غفلت کے باعث ایک ماہ گزر گیا پتریڈ پراجیکٹ سے گریڈ اسٹیشن کی بجلی کی تاریں نہ بچھ سکی ،جو وزیر برقیات کی نااہلی کا منہ بولتا ثبوت ہے ،

عوام نے کہا کہ اگر لوڈ شیڈنگ ختم نہ کی گئی تو وزیر برقیات کے دفتر کا گھیراﺅ کریں گے ،جبکہ سیکرٹری برقیات ، چیف انجینئر برقیات کو فوری تبدیل کریں نہیں تو دما دم مست قلندر ہوگا،جسکی ذمہ داری محکمہ برقیات پر عائد ہوگی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں