1

آرمی چیف کا بلوچستان سے گہری وابستگی کا اظہار

تحریر: عبدالباسط علوی
پاکستان کے جنوب مغرب میں واقع بلوچستان انتہائی تزویراتی اہمیت کا حامل صوبہ ہے اور ایک بھرپور ثقافتی ورثہ رکھتا ہے۔ زمینی رقبے کے لحاظ سے پاکستان کے سب سے بڑے صوبے کے طور پر بلوچستان ملک کے سماجی و اقتصادی منظرنامے کی تشکیل میں اہم کردار ادا کرتا ہے، اس کے ثقافتی تنوع میں نمایاں کردار ادا کرتا ہے اور علاقائی استحکام کے لیے ایک سنگ بنیاد کے طور پر کام کرتا ہے۔بلوچستان کی سٹریٹجک اہمیت سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔ مغرب میں ایران، شمال میں افغانستان اور جنوب میں بحیرہ عرب کے ساتھ سرحدوں کے اشتراک کی جغرافیائی حیثیت اسے ایک اہم تجارتی گیٹ وے بناتی ہے جو پاکستان کو وسطی ایشیا، مشرق وسطیٰ اور اس سے بھی آگے جوڑتا ہے۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ بلوچستان میں گوادر کی اسٹریٹجک گہرے پانی کی بندرگاہ بھی ہے جو چین پاکستان اقتصادی راہداری (CPEC) کے لیے اہم ہے جو پاکستان، چین اور پڑوسی خطوں کے درمیان تجارتی اور اقتصادی روابط کو بڑھا رہی ہے۔ مزید برآں معدنیات سے مالا مال یہ خطہ قدرتی گیس، کوئلہ، تانبا اور سونے جیسے قدرتی وسائل کے خاطر خواہ ذخائر کا حامل ہے جس سے پاکستان کی معیشت اور علاقے میں جغرافیائی سیاسی اثر و رسوخ کو تقویت ملتی ہے۔

انفراسٹرکچر میں اضافہ، روزگار کی تخلیق اور غربت کے خاتمے کے اقدامات کے ذریعے اس کے اقتصادی امکانات سے فائدہ اٹھانے کے لیے ٹھوس کوششیں جاری ہیں۔ گوادر پورٹ کی ترقی اور CPEC راہداری جیسے منصوبے بلوچستان کو ترقی پذیر اقتصادی مرکز میں تبدیل کرنے، سرمایہ کاری کو راغب کرنے، صنعتی ترقی کو فروغ دینے اور روزگار کے مواقع پیدا کرنے کا باعث بنتے ہیں۔ مزید برآں زراعت، سیاحت اور انسانی وسائل کی ترقی میں کوششوں کا مقصد بلوچستان کی اقتصادی لچک کو مضبوط بنانا اور پاکستان کی مجموعی خوشحالی میں حصہ ڈالنا ہے۔اپنی تزویراتی اور اقتصادی اہمیت سے ہٹ کر بلوچستان ایک متنوع ثقافتی منظر نامے پر فخر کرتا ہے جو مختلف نسلی گروہوں کا گھر ہے اور ہر طبقہ اپنی منفرد ثقافتی ورثے اور لسانی شناخت کے ساتھ موجود ہے۔ یہ ثقافتی تنوع پاکستان کے سماجی تانے بانے کو تقویت دیتا ہے اور رواداری، تکثیریت اور باہمی احترام کو فروغ دیتا ہے۔ بلوچستان کا ثقافتی ورثہ اس کی دلکش موسیقی، رقص، کھانوں اور دستکاریوں سے عیاں ہے، جو اس کے لوگوں کی لچک اور ذہانت کی عکاسی کرتے ہیں۔ اس ثقافتی ورثے کا تحفظ اور فروغ نہ صرف بلوچستان کی شناخت بلکہ پورے پاکستان میں قومی یکجہتی اور ہم آہنگی کو فروغ دینے کے لیے بھی ضروری ہے۔

تاہم بلوچستان طویل عرصے سے دہشت گردی اور شورش کا شکار ہے جو علاقائی استحکام اور سلامتی کے لیے ایک کثیر جہتی چیلنج ہے۔ سماجی و اقتصادی تفاوت اور جغرافیائی سیاسی حرکیات نے صوبے میں دہشت گرد گروہوں اور باغی تحریکوں کے ابھرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے جو صورت حال کی پیچیدگی کو اجاگر کرتے ہیں۔ بلوچ قوم پرست تحریک جس کا مرکز خودمختاری اور سماجی و اقتصادی ترقی کے مطالبات پر ہے، اپنے مقاصد کے حصول کے لیے اکثر پرتشدد ہتھکنڈوں کا سہارا لیتی رہی ہے۔ مزید برآں، بیرونی اداکاروں نے ان محرکات کو اپنے اسٹریٹجک مقاصد کو آگے بڑھانے کے لیے استعمال کیا ہے جس سے علاقے میں تشدد اور عدم استحکام کے معاملے کو مزید خراب کیا گیا ہے۔ بلوچستان میں دہشت گردی متعدد شکلیں اختیار کر لیتی ہے، جن میں سکیورٹی فورسز پر حملے، فرقہ وارانہ تشدد اور لوگوں کو جان بوجھ کر نشانہ بنانا شامل ہیں۔ اس خطے میں بلوچ علیحدگی پسندوں اور غیر ملکی اداروں کی حمایت یافتہ پراکسیز سمیت مختلف گروہوں کی طرف سے دہشت گردی کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے۔ یہ حملے نہ صرف بلوچستان کے باسیوں کی زندگیوں اور فلاح و بہبود کو خطرے میں ڈالتے ہیں بلکہ خطے کی سماجی و اقتصادی ترقی اور استحکام کو بھی نقصان پہنچاتے ہیں۔ بیرونی مداخلت اور جغرافیائی سیاسی رقابتوں نے خطے میں عدم استحکام اور تشدد کو جاری رکھتے ہوئے صورتحال میں پیچیدگی پیدا کر دی ہے۔

بلوچستان نے وقت کے ساتھ ساتھ متعدد تباہ کن واقعات کا مشاہدہ کیا ہے، جن میں سیکیورٹی اہلکاروں پر حملوں سے لے کر فرقہ وارانہ تشدد اور ٹارگٹ کلنگ تک کے واقعات میں اس کے باشندوں کو بہت زیادہ تکلیفیں پہنچائی گئی ہیں اور علاقائی استحکام اور سلامتی کے لیے بڑے چیلنجز پیش کیے گئے ہیں۔بلوچستان میں دہشت گردی کے مہلک ترین حملوں میں سے ایک 24 اکتوبر 2016 کو ہوا، جب عسکریت پسندوں نے کوئٹہ میں پولیس ٹریننگ کالج پر حملہ کیا۔ حملہ آوروں، جن کا تعلق پاکستانی طالبان سے تھا، نے کیڈٹس اور انسٹرکٹرز پر اندھا دھند فائرنگ کی، جس کے نتیجے میں کم از کم 61 افراد شہید اور سو سے زائد زخمی ہوئے۔اس بزدلانہ حملے نے بلوچستان میں سیکورٹی اداروں کے خلاف دہشت گردی کے خطرے کو اجاگر کیا اور حفاظتی اقدامات کو مزید سخت کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔جولائی 2018 میں بلوچستان کے ضلع مستونگ میں ایک سیاسی جلسے کو نشانہ بنایا گیا اور علاقہ ایک خوفناک خودکش بم دھماکے سے لرز اٹھا۔ اسلامک اسٹیٹ (ISIS) کی طرف سے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی گئی اور اس حملے کے نتیجے میں 150 سے زائد افراد شہید ہوئے جن میں ایک اہم سیاسی شخصیت سراج رئیسانی اور متعدد عام شہری بھی شامل تھے۔ مستونگ کے حملے نے خطے میں سرگرم انتہا پسند گروپوں کی طرف سے لاحق خطرے اور دہشت گردی کے شکار غیر مستحکم علاقوں میں عوامی اجتماعات کو محفوظ بنانے میں دشواریوں کی نشاندہی کی۔

ہزارہ برادری کو برسوں سے فرقہ وارانہ عسکریت پسندوں کی جانب سے مسلسل نشانہ بنایا جا رہا ہے، جن میں متعدد ہزارہ افراد ٹارگٹ کلنگ، بم دھماکوں اور اغوا کا شکار ہوئے، جس سے کمیونٹی کے اندر خوف اور عدم تحفظ کو فروغ ملا۔ یہ حملے، جن کی ذمہ داری اکثر انتہا پسند گروہ قبول کرتے ہیں، بلوچستان میں فرقہ وارانہ فالٹ لائنز کو اجاگر کرتے ہیں اور کمزور اقلیتی برادریوں کے تحفظ کے لیے اقدامات کی فوری ضرورت کو اجاگر کرتے ہیں۔ گوادر، بلوچستان کا ایک اہم اسٹریٹجک بندرگاہ والا شہر، دہشت گردی کے متعدد اور ہولناک واقعات کا سامنا کر چکا ہے جن کا بنیادی ٹارگٹ چین-پاکستان اقتصادی راہداری (CPEC) سے منسلک بنیادی ڈھانچوں کے منصوبے رہے ہیں۔ خطے میں ترقیاتی اقدامات کے مخالف عسکریت پسند دھڑوں نے پاکستان کے معاشی مفادات کو نقصان پہنچانے اور غیر ملکی سرمایہ کاری کی حوصلہ شکنی کی کوشش میں چینی مزدوروں، سکیورٹی اہلکاروں اور انفراسٹرکچر کو نشانہ بنایا ہے۔ یہ واقعات بلوچستان کے تنازعات کے شکار علاقوں میں بڑے پیمانے پر ترقیاتی منصوبوں سے منسلک سیکورٹی چیلنجوں پر زور دیتے ہیں۔

بلوچستان طویل عرصے سے ترقیاتی کوششوں کا ایک مرکزی نقطہ رہا ہے جن کا مقصد سماجی و اقتصادی تفاوت کو دور کرنا اور اس کی وسیع صلاحیتوں کو بروئے کار لانا ہے۔متعدد رکاوٹوں کا سامنا کرنے کے باوجود صوبے نے پائیدار ترقی کو فروغ دینے اور اپنی عوام کی فلاح و بہبود کو بڑھانے کے لیے ٹھوس کوششوں کے ساتھ مختلف شعبوں میں نمایاں ترقی کی ہے۔بنیادی ڈھانچے کی ترقی بلوچستان کی ترقی کی بنیاد کے طور پر کام کرتی ہے، جس میں سڑکوں کے نیٹ ورک، توانائی کے بنیادی ڈھانچے اور کنیکٹیویٹی کے اقدامات کی طرف کافی سرمایہ کاری کی گئی ہے۔ مکران کوسٹل ہائی وے اور چائنا پاکستان اکنامک کوریڈور (CPEC) کی ویسٹرن الائنمنٹ جیسی شاہراہوں کی تعمیر نے بین الصوبائی اور بین علاقائی رابطوں کو تقویت دی ہے جس سے تجارت اور سیاحت کو سہولت ملی ہے۔ مزید برآں گوادر پورٹ اور گوادر فری زون جیسے منصوبوں نے بلوچستان کو علاقائی تجارت اور رابطوں میں ایک اہم مرکز کے طور پر جگہ دی ہے جس سے اقتصادی توسیع اور سرمایہ کاری کی نئی راہیں کھلی ہیں۔

پاور پلانٹس اور ٹرانسمیشن لائنوں سمیت توانائی کے بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے ذریعے بجلی تک رسائی کو بہتر بنانے نے ایک اہم ضرورت کو پورا کیا ہے اور صنعتی ترقی اور اقتصادی تنوع کی بنیاد رکھی ہے۔ تعلیم اور صحت کی دیکھ بھال میں سرمایہ کاری بلوچستان میں انسانی سرمائے کی ترقی اور سماجی و اقتصادی طور پر بااختیار بنانے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔ نئے تعلیمی اداروں کا قیام اور موجودہ اداروں کو اپ گریڈ کرنے کا مقصد سیکھنے کے مواقع تک رسائی کو وسیع کرنا اور نوجوانوں کو آج کی معیشت میں ترقی کے لیے ضروری مہارتوں سے آراستہ کرنا ہے۔ اسی طرح ہسپتالوں، کلینکوں اور میڈیکل کالجوں کے قیام کے ذریعے صحت کی دیکھ بھال کے بنیادی ڈھانچے کو مضبوط بنانے سے طبی خدمات تک رسائی میں اضافہ ہو رہا ہے اور عوام کی صحت کی ضروریات کو پورا کیا جا رہا ہے۔ صحت سہولت پروگرام جیسے اقدامات جو معاشرے کے کمزور طبقوں کو ہیلتھ انشورنس کوریج فراہم کرتے ہیں، صحت کی دیکھ بھال تک رسائی اور استطاعت کو بڑھا رہے ہیں اور اس طرح بلوچستان میں صحت کے بہتر نتائج میں حصہ ڈال رہے ہیں۔

ذریعہ معاش کو سہارا دینا اور غربت کا خاتمہ بلوچستان کے ترقیاتی ایجنڈے کے مرکزی اصول ہیں۔ مائیکرو فنانس پروگرام، ہنر کی ترقی کی تربیت اور زرعی معاونت کی اسکیمیں سمیت مختلف اقدامات کمیونٹیز کو بااختیار بنا رہے ہیں اور معاشی لچک کو فروغ دے رہے ہیں۔ انٹرپرینیورشپ کو فروغ دینے کے منصوبے،خاص طور پر نوجوانوں اور خواتین کے لئے ، آمدنی پیدا کرنے اور معاشی طور پر بااختیار بنانے کے لیے نئی راہیں کھول رہے ہیں۔ مزید برآں، احساس پروگرام جیسے سماجی تحفظ کے پروگرام پسماندہ خاندانوں کو مالی امداد فراہم کرتے ہیں، انہیں معاشی مسائل سے نمٹنے اور ان کے معیار زندگی کو بڑھانے میں مدد فراہم کرتے ہیں۔ روزی روٹی سپورٹ اور غربت کے خاتمے کے اقدامات میں سرمایہ کاری کے ذریعے بلوچستان جامع اور پائیدار ترقی کا فریم ورک قائم کر رہا ہے اور اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ تمام افراد ترقی کی جانب اس کے سفر میں شامل ہوں۔

ملک کی مجموعی خوشحالی اور استحکام میں بلوچستان کی ترقی کے اہم کردار کو تسلیم کرتے ہوئے پاک فوج نے کئی فلاحی اقدامات شروع کیے ہیں جن کا مقصد صوبے کے چیلنجز سے نمٹنا اور اس کی صلاحیتوں کو کھولنا ہے۔انفراسٹرکچر ترقی میں ریڑھ کی ہڈی کے طور پر کام کرتا ہے اور کنیکٹیویٹی، تجارت اور اقتصادی ترقی کو تقویت دیتا ہے۔ پاک فوج بلوچستان بھر میں بنیادی ڈھانچے کی ترقی کی کوششوں میں سرگرم عمل ہے جن میں سڑکوں، پلوں اور ڈیموں کی تعمیر شامل ہیں۔ یہ منصوبے نہ صرف دور دراز علاقوں تک رسائی کو بڑھاتے ہیں بلکہ روزگار کے مواقع بھی پیدا کرتے ہیں اور معاشی سرگرمیوں کو تحریک دیتے ہیں۔ مکران کوسٹل ہائی وے کی تعمیر اور سڑکوں کے اہم نیٹ ورکس کی بحالی جیسے اقدامات نے خاص طور پر بین الصوبائی اور بین علاقائی رابطوں کو بہتر کیا ہے اور تجارت اور سرمایہ کاری کو فروغ دیا ہے۔معیاری صحت کی دیکھ بھال اور تعلیم تک رسائی انسانی اور سماجی و اقتصادی ترقی کے لیے ضروری ہے۔ بلوچستان میں، جہاں صحت کی دیکھ بھال اور تعلیمی بنیادی ڈھانچے کا اکثر فقدان ہوتا ہے، پاک فوج نے مثبت مداخلت کرکے اس خلا کو پر کیا ہے۔ طبی سہولیات جیسے ہسپتالوں اور کلینکوں کے نیٹ ورک کو چلاتے ہوئے، فوج دور دراز اور پسماندہ علاقوں کے رہائشیوں کو مفت صحت کی خدمات فراہم کرتی ہے۔ اسی طرح اس نے سکولز اور کالجز قائم کیے ہیں جو بلوچستان میں بے شمار بچوں اور نوجوانوں کو معیاری تعلیم فراہم کر رہے ہیں۔ یہ کوششیں نہ صرف صحت اور تعلیمی نتائج کو بڑھاتی ہیں بلکہ کمیونٹیز کو بااختیار بنانے اور انسانی سرمائے کی ترقی میں اپنا حصہ ڈالتی ہیں۔

معاشروں کی ترقی اور غربت میں کمی کے لیے معاشی طور پر بااختیار بنانا ضروری ہے۔ پاک فوج نے معاشی طور پر بلوچستان کے عوام کو بااختیار بنانے کے لیے مختلف لائیولی ہوڈ سپورٹ پروگرام شروع کیے ہیں۔ ان اقدامات میں پیشہ ورانہ تربیتی پروگرام، مائیکرو فنانس سکیمیں اور زرعی معاونت کے منصوبے شامل ہیں۔ ہنر کی تربیت دے کر۔ کریڈٹ تک رسائی فراہم کرکے اور تکنیکی مدد کی پیشکش کرکے فوج افراد کو کاروبار قائم کرنے، آمدنی پیدا کرنے اور ان کے معیار زندگی کو بڑھانے کے قابل بناتی ہے۔ مزید برآں، زراعت اور لائیو سٹاک کی ترقی کو فروغ دینے میں اس کی کوششیں بلوچستان میں غذائی تحفظ اور معاشی استحکام میں معاون ہیں۔پائیدار ترقی اور امن کی بحالی اور تسلسل کے لیے مقامی کمیونٹیز کے ساتھ اعتماد سازی اور بات چیت کو فروغ دینا بہت ضروری ہے۔ پاک فوج بلوچستان کی کمیونٹیز کے ساتھ متنوع آؤٹ ریچ پروگراموں کے ذریعے فعال طور پر منسلک ہے جن میں میڈیکل کیمپ، تعلیمی سیمینار اور کمیونٹی ڈویلپمنٹ پروجیکٹس شامل ہیں۔ فیصلہ سازی کے عمل میں مقامی اسٹیک ہولڈرز کو شامل کرکے اور ان کی ضروریات اور خدشات کو دور کرکے فوج اعتماد اور تعاون کو فروغ دیتی ہے جو بلوچستان میں پائیدار امن اور خوشحالی کی بنیاد رکھتی ہے۔

قومی خوشحالی اور سلامتی میں بلوچستان کے اہم کردار کو تسلیم کرتے ہوئے پاک فوج نے صوبے میں بنیادی ڈھانچے، صحت کی دیکھ بھال، تعلیم اور ذریعہ معاش کی مدد سمیت مختلف شعبوں میں کئی اہم منصوبوں کی سربراہی کی ہے، جن کا مقصد پائیدار ترقی اور سماجی و اقتصادی طور پر بااختیار بنانا ہے۔جیسا کہ پہلے ذکر کیا گیا ہے کہ پاکستان آرمی کی قیادت میں بلوچستان میں سب سے اہم بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں میں سے ایک مکران کوسٹل ہائی وے ہے۔ ساحلی پٹی کے ساتھ 650 کلومیٹر کے رقبے پر پھیلی اس شاہراہ نے خطے میں نقل و حمل اور رابطے میں انقلاب برپا کر دیا ہے اور دور دراز کے ساحلی علاقوں کو بڑے شہری مراکز اور بندرگاہوں کے ساتھ جوڑ دیا ہے۔ تجارت اور کاروبار کو آسان بنانے کے علاوہ ہائی وے سیاحت کو بھی تحریک دیتی ہے اور اس کے راستے میں آنے والی کمیونٹیز کے لیے اہم خدمات تک رسائی کو بہتر بناتی ہے۔پاکستان آرمی بلوچستان میں متعدد کمبائنڈ ملٹری ہسپتالوں (CMHs) کی نگرانی کرتی ہے جو فوجی اہلکاروں، ان کے خاندانوں اور عام شہریوں کو اعلیٰ معیار کی صحت کی دیکھ بھال کی خدمات فراہم کرتے ہیں۔ طبی سہولیات کی ایک جامع رینج بشمول خصوصی علاج، سرجری، اور تشخیص، فراہم کرتے ہوئے یہ ہسپتال صحت کی دیکھ بھال تک رسائی اور نتائج کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں، خاص طور پر دور دراز اور غیر محفوظ علاقوں میں جہاں صحت کی دیکھ بھال تک رسائی محدود ہے۔

تعلیم ترقی کی بنیاد کے طور پر کام کرتی ہے اور پاکستان آرمی نے بچوں اور نوجوانوں کو اعلیٰ ترین تعلیم فراہم کرنے کے لیے بلوچستان میں اسکولوں اور کالجوں کا ایک نیٹ ورک قائم کیا ہے۔ آرمی پبلک سکولز اور کالجز جدید سہولیات، قابل اساتذہ اور سیکھنے کے ایک بھرپور ماحول پر فخر کرتے ہیں جو کردار کی نشوونما اور ہنر کے حصول کو فروغ دیتے ہیں اور طلباء کو عصری دنیا میں کامیابی کے لیے تیار کرتے ہیں۔معاشی طور پر بااختیار بنانے کے لیے مہارت کی ترقی کی اہمیت کو تسلیم کرتے ہوئے پاک فوج نے بلوچستان بھر میں پیشہ ورانہ تربیت کے مراکز قائم کیے ہیں۔ یہ مراکز کارپینٹری، ویلڈنگ، پلمبنگ اور کمپیوٹر کی مہارتوں سمیت مختلف شعبوں میں تربیتی پروگرام پیش کرتے ہیں۔ افراد کو جدید مہارتوں سے آراستہ کر کے یہ مراکز انہیں روزگار کے فائدہ مند مواقع حاصل کرنے اور کاروباری کوششوں میں حصہ لینے کے لیے بااختیار بناتے ہیں اور اس طرح خطے میں بے روزگاری اور غربت میں کمی آتی ہے۔صاف پانی تک رسائی انسانی صحت اور بہبود کے لیے سب سے اہم ہے۔ پاک فوج نے پانی کی کمی سے نمٹنے کے لیے بلوچستان میں پانی کی فراہمی اور ڈیم کے متعدد منصوبے شروع کیے ہیں۔ ان منصوبوں میں ڈیموں، آبی ذخائر اور پانی کی فراہمی کی اسکیموں کی تعمیر شامل ہے جو پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت کو بڑھانے، آبپاشی کے بنیادی ڈھانچے کو بڑھانے اور صوبے بھر کی کمیونٹیوں کو پینے کا صاف پانی فراہم کرنے کے لیے بنائے گئے ہیں۔ قابل اعتماد آبی ذرائع تک رسائی کو یقینی بنا کر یہ اقدامات بلوچستان میں زرعی پیداوار، ماحولیاتی استحکام اور سماجی و اقتصادی ترقی کو تقویت دیتے ہیں۔

پاک فوج بلوچستان کی ترقی اور سلامتی کے لیے اپنے عزم پر ثابت قدم ہے، آرمی چیف صوبے کے معاملات میں گہری دلچسپی لے رہے ہیں۔ چیف آف آرمی سٹاف (COAS) جنرل عاصم منیر نے حال ہی میں بلوچستان کے ضلع آواران کا دورہ کیا، جہاں انہیں سیکیورٹی کی صورتحال اور پاک فوج کی جانب سے سماجی و اقتصادی ترقی کو فروغ دینے اور زرعی صلاحیت کو بروئے کار لانے کے لیے جاری کوششوں کے بارے میں بریفنگ دی گئی۔ مقامی عمائدین، کسانوں اور شہید ہونے والے فوجیوں کے اہل خانہ سے بات چیت کرتے ہوئے آرمی چیف نے شہیدوں کی قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے لوگوں کی سلامتی اور بہبود کے لیے فوج کی غیر متزلزل حمایت کا یقین دلایا۔ آواران میں کمیونٹی رہنماؤں اور کسانوں کے ساتھ بات چیت کے دوران آرمی چیف نے زراعت کی اہمیت کو اجاگر کیا اور گرین پاکستان انیشیٹو (GPI) کے لیے فوج کے عزم کا اعادہ کیا۔ آرمی چیف نے کسانوں کو جامع زرعی امداد فراہم کرنے کے منصوبوں کا خاکہ پیش کیا، جن میں زرعی قرضوں، بیجوں، کھادوں، شمسی ٹیوب ویلوں تک آسان رسائی اور ماہرین زراعت کی رہنمائی شامل ہے۔ ان اقدامات کا مقصد کسانوں کو اپنی زمینوں پر کاشت کرنے کے قابل اور پاکستان کی ترقی میں اپنا حصہ ڈالنے کے لیے بااختیار بنانا ہے۔ اس کے بعد آرمی چیف نے کیڈٹ کالج آواران کا دورہ کیا اور فیکلٹی ممبران اور طلباء سے ملاقات کی۔ انہوں نے مقامی کمیونٹی کے لیے اسکی اہمیت پر زور دیتے ہوئے بلوچستان میں ایک اور کیڈٹ کالج کے قیام کو سراہا۔ سی او اے ایس نے متعلقہ سول محکموں کے ساتھ مل کر بلوچستان میں جاری ترقیاتی اور امدادی کوششوں کے لیے پاک فوج کے عزم کا اعادہ کیا اور اس بات پر زور دیا کہ بلوچستان کی کامیابی پاکستان کی کامیابی سے جڑی ہوئی ہے۔ انہوں نے بلوچستان کے عوام کی لچک پر فخر کا اظہار کیا اور خطے میں امن اور خوشحالی کے لیے مسلح افواج اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کی جانب سے تعاون جاری رکھنے کا وعدہ کیا۔

آرمی چیف کا دورہ اور بات چیت ان کی بلوچستان سے گہری وابستگی کو واضح طور پر ظاہر کرتے ہیں۔ پاکستان، اپنے تنوع کے لیے مشہور ملک، چار صوبوں پر مشتمل ہے اور ہر صوبہ منفرد ثقافتی ورثے، زبانوں اور روایات کا حامل ہے۔ چاروں صوبے پاکستانی قوم کا حصہ ہونے کی مشترکہ شناخت سے جڑے ہوئے ہیں۔ پاکستان کے قیام کے بعد سے صوبائی مساوات کے اصول کو آئین سمیت اس کی بنیادی دستاویزات میں شامل کیا گیا ہے۔ یہ اصول ملک کے بانیوں کے وژن کی عکاسی کرتا ہے، جن کا مقصد ایک ایسی قوم کا قیام ہے جہاں تمام شہریوں کے ساتھ عزت اور احترام کے ساتھ برتاؤ کیا جائے، خواہ ان کا علاقائی پس منظر کچھ بھی ہو۔ یہ پاکستان کے وفاقی ڈھانچے کی بنیاد بناتا ہے اور قومی معاملات میں ہر صوبے کی نمائندگی اور آواز کو یقینی بناتا ہے۔پاکستان کے صوبے متنوع ثقافتوں، زبانوں اور روایات پر فخر کرتے ہیں جو ملک کی متحرک شناخت میں اپنا حصہ ڈالتے ہیں۔ اس تنوع کو اپنانے سے شمولیت کو فروغ ملتا ہے اور قومی اتحاد کو تقویت ملتی ہے کیونکہ پاکستانی اپنی مشترکہ شناخت کو برقرار رکھنے کا جشن مناتے ہیں۔ پاکستان کے سیاسی نظام میں صوبائی مساوات کا اصول واضح ہے، جہاں ہر صوبے کو وفاقی حکومت اور صوبائی اسمبلیوں میں نمائندگی حاصل ہے۔ متناسب نمائندگی کے ذریعے تمام صوبے قومی فیصلہ سازی میں حصہ لیتے ہیں، اس بات کو یقینی بناتے ہوئے کہ پالیسیاں تمام صوبوں کی ضروریات کے لیے جامع اور جوابدہ ہوں اور متوازن ترقی اور وسائل کی منصفانہ تقسیم کو فروغ دیں۔ متوازن اقتصادی ترقی کو فروغ دینے اور پاکستان کے اندر علاقائی تفاوت کو کم کرنے کے لیے صوبائی مساوات کو یقینی بنانا بہت ضروری ہے۔

تمام صوبوں میں انفراسٹرکچر، تعلیم، صحت کی دیکھ بھال اور دیگر اہم خدمات میں سرمایہ کاری کے ذریعے حکومت معاشی ترقی اور خوشحالی کے لیے سازگار ماحول قائم کرتی ہے۔ نیشنل فنانس کمیشن ایوارڈ اور خصوصی اقتصادی زونز کے قیام جیسے پروگراموں کا مقصد جامع ترقی کو فروغ دینا اور تمام صوبوں کو پھلنے پھولنے کے مواقع فراہم کرنا ہے۔ صوبائی مساوات سماجی ہم آہنگی اور قومی یکجہتی کو بھی فروغ دیتی ہے، کیونکہ پاکستان کے مختلف علاقوں کے شہری اپنے مشترکہ ورثے اور امنگوں کو منانے کے لیے اکٹھے ہوتے ہیں۔ بین الصوبائی مکالمے، ثقافتی تبادلے اور باہمی احترام کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے، پاکستان افہام و تفہیم اور یکجہتی کے ایسے پُل تعمیر کرتا ہے جو جغرافیائی حدود سے بالاتر ہوتے ہیں۔ تنوع کے درمیان یہ اتحاد سماجی تانے بانے کو مضبوط بناتا ہے اور پاکستانی قوم کا حصہ ہونے پر ملکیت اور فخر کا احساس پیدا کرتا ہے۔

پاکستان کے سیاسی اور عسکری منظر نامے کی تشکیل میں بلوچستان نے اہم کردار ادا کیا ہے۔ آبادی کی نسبتاً کم کثافت کے باوجود، بلوچستان نے کئی قابل ذکر شخصیات پیدا کی ہیں جو ملک میں اقتدار کی اعلیٰ ترین سطحوں پر پہنچی ہیں۔ چند ایک نمایاں مثالوں میں کوئٹہ، بلوچستان کے رہنے والے جنرل مرزا اسلم بیگ شامل ہیں، جنہوں نے 1988 سے 1991 تک چیف آف آرمی سٹاف (COAS) کے طور پر خدمات انجام دیں۔ اپنے دور میں جنرل بیگ نے پاکستان کے فوجی اور تزویراتی امور میں اہم پیش رفت کی نگرانی کی، جس نے ملک کی دفاعی صلاحیتوں اور علاقائی استحکام کو مضبوط بنانے میں اپنا کردار ادا کیا۔ایک اور قابل ذکر شخصیت جنرل محمد موسیٰ خان ہیں، جن کا تعلق کوئٹہ، بلوچستان سے تھا، انہوں نے 1958 سے 1966 تک پاکستان آرمی کے کمانڈر انچیف کے طور پر خدمات انجام دیں اور 1965 کی پاک بھارت جنگ بھی انکے دور میں لڑی گئی۔

ممتاز بلوچ قوم پرست رہنما سردار عطاء اللہ مینگل بلوچستان کے وزیر اعلیٰ کے عہدے پر فائز رہے اور 1972 میں مختصر عرصے کے لیے پاکستان کے وزیر اعظم کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔ وزیر اعظم کی حیثیت سے اپنے دور میں انہوں نے بلوچ عوام کی شکایات کو دور کرنے اور ان کی وکالت کرنے پر توجہ دی۔ میر ظفر اللہ خان جمالی، جو بلوچستان کے ضلع ڈیرہ مراد جمالی میں پیدا ہوئے، 2002 سے 2004 تک پاکستان کے وزیر اعظم رہے۔ انکے دور میں اقتصادی ترقی دیکھنے میں آئی۔یہ مثالیں واضح کرتی ہیں کہ بلوچ عوام کو پاکستان کے دوسرے صوبوں کے شہریوں کے برابر حقوق اور مواقع حاصل ہیں۔قارئین، پاکستان، اس کے عوام اور پاک فوج بلوچستان سے گہری محبت اور وابستگی رکھتے ہیں اور قوم کے لیے اس کی اہمیت کو تسلیم کرتے ہیں۔ آرمی چیف جنرل عاصم منیر کا حالیہ دورہ پاکستان کے اس اہم صوبے کے لیے محبت اور قدردانی کے جذبات کو واضح کرتا ہے۔ بلوچستان میں سیکیورٹی کو بڑھانے اور ترقی کو فروغ دینے کے لیے کیے گئے اقدامات کو پاکستانی عوام کی جانب سے سراہا جا رہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں