پولیس نےوزیر اعلیٰ کی ڈالفن فورس کو ناکام بنانے کے منصوبہ پر عمل درآمد شروع کردیا

رپورٹ:اسرارراجپوت
راولپنڈی:سٹیٹ ویوز

تھانہ آر اے بازار کی چوکی شاہ فیصل کے اہلکاروں نے گزشتہ روز پاکستان آرمی اور پولیس کی مشترکہ چیک پوسٹ تھری جھاورہ کے نزدیک نصب بجلی کے کھمبے کےساتھ شراب کے نشہ میں دھت تیز رفتار گاڑی ٹکرانے والے نوجوان کو مبینہ طور پر رشوت لے کر رہا کر دیا۔

نشے میں دھت نوجوان جس کا نام راجہ ارسلان مجید ولد راجہ مجید سکنہ چکری روڈ معلوم ہوا ہے کو ڈالفن فورس ٹیم نمبر ۱ تھانہ کینٹ نے شراب کی نشے میں دھت ڈرائیونگ کرنے، غل غپاڑہ کرنے کے جرم میں پکڑا تھا۔

ڈالفن فورس صدر بینک روڈ پر روٹین کی گشت کر رہی تھی کہ ان کی نظر روڈ کےدرمیان سفید رنگ کی مہران گاڑی پر پڑی جس میں سوار نوجوان شراب کے نشے میں لوگوں کو گالیاں دے رہا تھا۔ اس پر ڈالفن فورس نے اس نوجوان کو پکڑنے کی کوشش کی جس پر اس نے گاڑی چونگی نمبر 22 کی جانب بھگا دی اور ڈالفن فورس نے گاڑی کا پیچھا شروع کر دیا۔

نشے میں دھت نوجوان نے گاڑی انتہائی تیز رفتاری سے JCP-3 جھاورہ میں نصب بجلی کے کھمبے سے ٹکرا دی جس سے وہاں سکیورٹی ڈیوٹی پر موجود اہلکاروں میں خوف کی لہر دوڑ گئی۔ اس سے پہلے کہ مسلح سکیورٹی اہلکار کوئی کاروائی کرتے ڈالفن فورس گاڑی کے نزدیک پہنچ گئی اور زخمی حالت میں نوجوان کو پکڑ کر گاڑی سے باہر نکالا۔ یہ واقعہ اتوار کی رات کی رات پونے بارہ بجے پیش آیا۔

ڈالفن فورس نے گاڑی کی تلاشی کے دوران پیپسی کی 500 ML کی بوتل میں بھری شراب برآمد کر کے پولیس کنٹرول پر کال کی جس کے بعد تھانہ آر اے بازار کی پٹرولنگ وین موقع پر آگئی اور پولیس ٹیم نے ایس آئی اشرف کی قیادت میں راجہ ارسلان کو گرفتار کر لیا اور چوکی شاہ فیصل منتقل کر دیاتاہم بعد ازاں چوکی انچارج زیارت شاہ نے مبینہ طور پر راجہ ارسلان سے رشوت لے کر اسے آزاد کر دیا۔

اس ضمن میں جب ایس ایچ او تھانہ آر اے بازار سے رابطہ کیا گیا تو انھوں نے پہلے تو واقعہ کے رونما ہونے سے لاعلمی کا اظہار کیا اور بعد میں معاملہ کی نزاکت کا احساس ہونے پر سٹیٹ ویوز کو بتایا کہ پولیس نے سیکشن 3/4 کے مطابق ضابطہ کی کاروائی کی ہے جبکہ دوسری جانب چوکی شاہ فیصل انچارج ایس آئی زیارت شاہ سے جب رابطہ گیا تو پہلے انھوں نے کہا کہ انہیں وقوعہ کا علم نہ ہے۔کچھ دیر بعد ایس آئی نے سٹیٹ ویوز کو دوبارہ فون کیا اور کہا کہ نوجوان نے شراب نہیں پی تھی اور چونکہ اس نے تیز رفتار ڈرائیونگ کے دوران کسی شخص کو نقصان نہیں پہنچایا اس لیے اسے آزاد کر دیا گیا۔

دوسری جانب جرائم کے خاتمہ کے لیے تشکیل دی گئی ڈالفن فورس کے اہلکاروں نے پولیس اہلکاروں کے اس فعل کی سخت مزمت کی اور سی پی او اسرار احمد خان عباسی سے چوکی شاہ فیصل کے کرپٹ اہلکاروں و چوکی انچارج کے خلاف محکمانہ کارووائی کا مطالبہ کیا ہے۔