گوجرخان:دن دیہاڑے منشیات فروشی پرپولیس کی خاموشی سوالیہ نشان بن گئی

گوجرخان (راجہ ارشدمحمود/سٹیٹ ویوز) سفارشی افسران کی تعیناتی شہر اور گردونواح میں منشیات فروشی ایک بار پھر عروج پر پہنچ گئی منشیات کی بین الاضلاعی خرید وفروخت کا دھندہ بھی شروع کر دیا گیا پولیس روایتی کارروائیوں میں مصروف منشیات فروشوں کو کھلی چھٹی دے دی گئی اندرون شہر اور دیگر علاقے بری طرح متاثر شرفاء کا گلی محلوں سے گزرنا محال اعلیٰ حکام کو سب اچھا کی رپورٹ دی جاتی ہے.

تفصیلات کے مطابق گوجر خان شہر اور گردونواح میں منشیات فروشی عروج پر پہنچ گئی ہے اندرون شہر اور بالخصوص سکھو روڈ پر دن دیہاڑے سرعام منشیات فروشی جاری ہے جب کہ دوسر ے شہروں سے بھی منشیات کے عادی افراد بڑی تعداد میں گوجر خان کا رخ کر رہے ہیں مقامی پولیس تمام حالات سے با خبر ہونے کے باوجود با اثر منشیات فروشوں کے خلاف کارروائی سے گریزاں ہے.

اس ضمن میں تھانہ گوجر خان میں تعیّنات ایک پولیس افسر نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پرسٹیٹ ویوز کو بتایا کہ اگر تھانے کا ٹریک ریکارڈ چیک کیا جائے تو کم از کم گزشتہ دس برس میں جب بھی کسی بھی بڑے منشیات فروش پر ہاتھ ڈالا گیا بظاہر تو اس خبر کو اچھالا گیا اچھی کارکردگی کی رپورٹ دی گئی لیکن بالآخر ضمنی میں اس منشیات فروش کو اتنی چھوٹ دے دی جاتی ہے کہ وہ بآسانی رہا ہوجاتے ہیں اور پہلےسےبڑھ کراس مکروہ دھندے میں مشغول ہو جاتےہیں اس افسر کا کہنا تھا کہ بلا شبہ تھانہ گوجرخان کا علاقہ منشیات فروشوں کی جنت بن چکا ہے.پولیس ملازمین کی اکثریت منشیات فروشوں کے خلاف بھر پور کارروائی کر نا چاہتی ہے لیکن انھیں اپنا کام نہیں کرنے دیاجاتا.

وارڈ نمبر نو اور دس میں رہائش پذیر حاجی فضل الرحمان عبد الخطیب چوہدری اور دیگر افراد نے بتایا کہ اب تو منشیات فروش صبح سویرے ہی گلیوں میں دستیاب ہوتے ہیں جن کی وجہ سے سکول مدرسوں کو جانے والی طالبات کے علاوہ باپردہ خواتین کا اندرون شہر کی گلیوں سے گزرنا تک محال ہو چکا ہے ان افراد کا کہنا تھا کہ جب تک سفارشی تھانیدار تعینات ہوتے رہیں گے منشیات فروشی اور دیگر جرائم اسی طرح پنپتے رہیں گے.