ٹیکسلا میں‌صحافی پر تشدد کیخلاف صحافتی تنظیمیں‌سڑکوں‌پر نکل آئیں

ٹیکسلا/واہ(محمّد کلیم اللہ خان/سٹیٹ ویوز)ٹیکسلا سابق آئی جی اسلام آباد بنیامین کے پٹرول پمپ پر صحافی پر بیہمانہ تشدد کے خلاف صحافتی تنظیموں کا زبردست احتجاجی مظاہرہ،بنیامین کے بیٹے نے مسلح افراد کے ہمراہ صحافی پر حملہ کیا،غنڈہ گردی کی مذمت کرتے ہیں،جھوٹی اور من گھڑت ایف آئی آر خارج کی جائے،حملے ملوث افراد کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہ،چیف جسٹس ازخود نوٹس لیں،مظاہرے سے مقررین کا خطاب.

راہنما جماعت اسلامی خواجہ وقار نے سابق آئی جی اسلام آباد بنیامین کو کرپٹ ترین قرار دے کر ان کے اثاثوں کی چھان بین کا مطالبہ کردیا،تفصیلات کے مطابق سابق آئی جی اسلام آباد بنیا مین کے پٹرول پمپ پر ترنول کے قریب ٹیکسلا کے مقامی سینئر صحافی،فوٹو گرافر حافظ وسیم پر سابق آئی جی کے بیٹے علی نے اپنے مسلح ساتھیوں سمیت حملہ کردیا پٹرول ڈلوانے پر تکرار ہوئی جس پر صحافی نے پمپ کے منیجر کو کال کی جس نے پمپ پر رکنے کا کہا تھوڑی دیر بعد سابق آئی جی اسلام آباد کے بیٹے نے درجن بھر مسلح افراد کے ساتھوں لوہے کے راڈاور ڈنڈوں سے حملہ کردیا جس سے مقامی صحافی کی ٹانگ ٹوٹ گئی اور اسے شدید چوٹیں آئیں تحصیل یونین آف جرنلسٹس ٹیکسلا واہ کینٹ کی کال پر زبردست احتجاجی مظاہرہ کیا گیا مظاہرین ٹی یوجے کے آفس سے ریلی کی صورت میں ختم نبوت ﷺ چوک پہنچے جہاں انہوں نے واقعے کے خلاف پرامن احتجاجی مظاہرہ کیا.

مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے راہنما جماعت اسلامی خواجہ وقار ایڈوکیٹ نے سابق آئی جی اسلام آباد بنیامین کو کرپٹ ترین شخص قرار دیتے ہوئے ان کے اثاثوں کی چھان چھین کا مطالبہ کیا انہوں نے صحافی حافظ وسیم پر حملے کی مذمت کی ربجا کے مرکزی سینئر نائب صدر اورسینئر صحافی راہنما سید طاہر شاہ، پریس کلب ٹیکسلا واہ کے صدر سید مشاق حسین نقوی،ڈاکٹر سید صابر علی رشید مغل،محمّد کلیم اللہ خان،حاجی سلیم ،میر عاصم محمود سمیت دیگر مقررین نے چیف جسٹس آف پاکستان سے واقعے کا ازخود نوٹس لینے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ سابق آئی جی کی غنڈہ کردی قابل مذمت ہے ہم اس واقعے پر ہر سطح پر احتجاج کریں گے مقررین نے صحافی کے خلاف جھوٹی اور من گھڑت ایف آئی آر کو خارج کرنے کا مطالبہ کیا