آزاد کشمیرحکومت نےبجٹ کوعوام دوست بنانےکےلیےسرجوڑلیے

مظفر آباد (سٹاف رپورٹر/سٹیٹ ویوز) آزاد جموں وکشمیر کے وزیراعظم راجہ فاروق حیدر خان نے کہا ہے کہ بجٹ کو ترقیاتی اور عوامی مفاد کے مطابق بنانے کیلئے پہلی مرتبہ تمام محکموں سےالگ الگ تجاویزلی گئی ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ آمدہ بجٹ میں خاص طور پر کم ترقی یافتہ علاقوں کو اہمیت دی جائے گی۔ سیاحت، انڈسٹری ، ہا ئیڈل کے ساتھ ساتھ پورے آزادکشمیر کی بین الاضلاعی اور پاکستان سے ملانے والی تمام شاہرواں پر کام جاری ہے۔ معاشرتی اور سماجی بہبود کے منصوبوں کیلئے بھی خاطرخواہ فنڈز مختص کئےجائیں گے۔ پاکستان میں سیاسی استحکام تحریک آزادی کشمیر کے کامیاب تسلسل کیلئے ناگزیر ہے۔ کنٹرول لائن پر بھارتی فائرنگ سے سخت تشویش ہے سنائپر گنز کے ذریعے بھارتی فوجی نہتے شہریوں کو نشانہ بنا رہے ہیں، درہ شیر خان میں بھی شہری کو سر میں گولی ماری گئی۔اقوام متحدہ سے رجوع کرنے کیلئے پیشرفت کی جائے۔

وزیراعظم نے ان خیالات کا اظہار جموں کشمیرہاؤس اسلام آباد میں وزراء کرام ، ارکان اسمبلی، مہاجرین ارکان اسمبلی اور خواتین ارکان اسمبلی سے الگ الگ بجٹ سے متعلق سفارشات پر غور و خوض اور پارلیمانی پارٹی کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوے کیا۔ اس موقع پر سپیکر شاہ غلام قادر، سینئر وزیر چوہدری طارق فاروق،وزیر خزانہ نجیب نقی، وزیر اطلاعات راجہ مشتاق احمد منہاس، ڈپٹی سپیکر سردار فاروق احمد طاہر سمیت وزراء کرام سردار میر اکبر خان، بیرسٹر افتخار گیلانی، راجہ نصیر خان ، چوہدری یاسین گلشن، چوہدری مسعود خالد، راجہ عبدالقیوم خان ، کرنل ریٹائرڈ وقار احمد نور، محترمہ نورین عارف، سید شوکت شاہ، سردار فاروق سکندر،احمد رضا قادری،حاجی جاوید اختر،چوہدری محمد اسحاق اور ارکان اسمبلی عبدالرشید ترابی، چوہدری شہزاد محمود، ڈاکٹر مصطفی بشیر ، راجہ جاوید اقبال، نسیمہ وانی، سحرش قمر، رفعت عزیزودیگر بھی موجود تھے۔

اجلاس کے دوران درہ شیر خان میں بھارتی فوج کی فائرنگ سے شہید ہونے والے شہری کے درجات کی سربلندی کیلیے خصوصی دعا بھی کی گئی۔ اجلاس کے دوران بھارتی فوج کی جانب سے کنٹرول لائن پر سنائپر گنوں کے ذریعے شہریوں خاص طور پر خواتین کو نشانہ بنانے پر سخت تشویش کا اظہار بھی کیا گیا۔وزیر اعظم نے کہاکہ اسرائیلی فوج قابض اور ظالم فوج کے جس نے نہتے فلسطینیوں پر مظالم کی انتہا کر رکھی ہے ، ایک دن میں 60سے زائد فلسطینیوں کو شہید کیا گیاجس پر ہمیں سخت تشویش ہے ۔