جی بی آرڈر 2018کیخلاف سکردومیں احتجاجی مظاہرہ

سکردو (قاسم قاسمی)عوامی ایکشن کمیٹی کے زیر اہتمام یاد گار شہداء سکردو پر جی بی آرڈر 2018 کے خلاف سخت احتجاجی مظاہرہ کیا گیاہزاروں کی تعداد میں عوام نماز جمعہ کے بعد جامع مسجد سے ریلی کی شکل میں یاد گار شہداء تک آئی۔

مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڈ اور بینرز آٹھائے رکھے تھے جس پر حکومت مخالف نعرے درج تھے یاد گار شہداء پر پہنچتے ہی ریلی احتجاجی جلسے کی شکل اختیار کر گئی۔ جلسے سے عوامی ایکشن کمیٹی کے ممبران سمیت دیگر ارکان نےخطاب کیا۔

مقررین نے کہا کہ جی بی آرڈر 2018 گلگت بلتستان کے عوام کے حقوق چھیننے کے لئے بنایاگیاایک کالا قانون ہے جس میں گلگت بلتستان کے عوام کی ستر سالہ محرومیوں کا ازالہ کرنے کے بجائے ان کو مزید پابند کیا جا رہا ہے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ یہ قانون صرف اور صرف سی پیک سمیت دیگر معاملات میں پاکستان سے حقوق مانگنے پر بنایا گیا ہے تاکہ آئندہ سر زمین بے آئین گلگت بلتستان سے اٹھنے والے کسی بھی آواز کو باآسانی دبایاجاسکے۔

مقررین نے اس آرڈر کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ وزیر اعظم پاکستان کے گلگت بلتستان اسمبلی میں آنے کی اصل وجہ بھی یہی ہے کہ یہاں آکر اس نام نہاد آرڈر کا اطلاق کر کے جائیں ہم وزیر اعظم کے گلگت آمد کی بھی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں اور اس قانون کو مسترد کرتے ہیں انکا مزید کہنا تھا یہ قانون واپس لیا جائے بصورت دیگر پورے گلگت بلتستان کو جام کر کے احتجاجی مظاہرہ کریں گے۔