چھپڑیاں گھوڑی کیرروڈ اک معمہ


یوں تو آزاد ریاست لامتناہی مصائب اور مسائل کا شکار ہے لیکن چھپڑیاں گھوڑی کیرروڈ حلقہ غربی کا ترس طلب معمہ ہے۔ روائتی طرزِ سیاست ہو یا سوشل میڈیا کے شعور کا سمندر –لیکن اب کی بار چھپڑیاں گھوڑی کیر روڈ بنے ہی بنے۔

میرا تعلق حلقہ ایل اے ۲۰ پونچھ چار سے ہے لیکن رشتہ داریاں ذیادہ ہونے کی وجہ سےغربی باغ میں آئے روز آمد و رفت معمول رہتا ہے۔اس روڈ کا اک سرا جھالہ سے ملتاا ہے اور دوسرا سرا دھیر کوٹ سے – اس روڈ کے مستفید ین کا تعلق سردار عتیق احمد کے حلقہ انتخاب سے ہے اور دوسری طرف یہ مستفد ین فاروق حیدر صاحب کی قبیل سے ہیں-

لیکن بندہ نا چیز اس بات کو سمجھنے سے قاصر ہے کہ وہ کیا وجوع ہیں کے روڈ تکمیل کے مراحل کو نہ چھو سکی۔کچھ لوگوں کی آرا ہے کے یہ دھیرکوٹ اور ارجہ کی قوتوں کے درمیان ایک سرد جنگ ہے کچھ لوگوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس روڈ کے ٹھیکے من چاہوں کو دے کہ پیسے ہڑپ کیے گئے ہیں –

جس کی وجہ سے روڈ کے اوپر پیسہ کم اور کارکنوں کے جیبوں میں ذیادہ گیا ہے۔ جو کہ ماضی کے صاحب اقتدار اور اپوزیشن کے کارندوں کے منہ پہ کالک مل رہا ہے-میں احتساب کے ذمہ داران سے ملتمس ہوں کے سب سے پہلے وہ اپنا ہاتھ چھپڑیاں گھوڑی کیر روڈ کے ذ مہ داران پہ رکھیں –

کیونکہ وہاں عام آدمی کی زندگی کو دیکھیں تو دل خون کے آنسو روتا ہے کہ اکیسویں صدی میں بھی یہ لوگ پتھر کے دور میں جی رہے ہیں۔زلزلہ کے دوران ان سڑکوں کے لئے بیشمار پیسہ ملا اور ہڑپ ہو گیا اور ایسے حلقہ سے غائب ہوا جہاں سے بعض اوقات کہا جاتا UN کی پالیسیاں مرتب کی جاتی ہیں۔

میرا UN سے بھی مطالبہ ہے کہ جو وہ پیسہ ہمیں دیتے ہیں اسکا خود مختیار آڈٹ بھی کروایا کریں تاکہ ریاست کی حقیقی جمہوری قیادتیں سامنے آیا کریں کیونکہ آزاد کشمیر کے لوگوں کو چند اشخاص ، کورٹ کچہریوں اور پٹوار خانہ جات کے ذریعے چالایا جا رہا ہے۔

دوسری طرف چھپڑیاں گھوڑی کیر روڈ اب کی بار بنے ہی بنے کیونکہ وہاں کے باسیوں نے تہیہ کر لیا ہے کے آمدہ الیکشن میں ووٹ کی طلب پر سیاست دانوں کا بھر پور چھترول کرینگے۔موجودہ صورتحال کے دو ہی ذمہ داران ہیں اک راجا فاروق حیدر اور دوسرا سردارعتیق کیونکہ اک کے پاس خصوصی فنڈز ہیں اور دوسرے کا حلقہ انتخاب۔

میری دونوں سے استدعا ہے کے خدا راہ کچھ تو ایسا کیجیے جو آپ کے لئے صدقہ جاریہ ہو ورنہ اب کی بار غربی باغ کی سیٹ انشاء اللہ آپ دونوں میں سے کسی کو نہیں ملے گی۔۔۔۔