شادی کے9سال بعد چھکا

اسلام آباد (سٹیٹ ویوز) بہاولپور کے علاقے جلال پور پیر والا کی رہائشی خاتون کے ہاں بیک وقت چھ بچوں کی پیدائش ہوئی ہے۔ بہاولپور میں اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ سامنے آیا ہے۔

ہسپتال ذرائع کے مطابق تمام چھ بچوں کی ماں اور بچے خیریت سے ہیں سول ہسپتال بہاولپور میں خاتون نے 6 بچوں کو جنم دینے کا یہ پہلا واقعہ ہے اس سے قبل بہاول وکٹوریہ ہسپتال میں بہاول پور کی ہی رہائشی خاتون کے ہاں چار بچوں کی بیک وقت پیدائش ہوئی تھی۔ ہسپتال انتظامیہ اور ماہر ڈاکٹرز میں پروفیسر ڈاکٹر سہیل چوہدری کی قیادت میں کامیاب آپریشن سے سب بچے صحیح سلامت پیدا ہوئے ہیں اور سب بچوں کو انتہائ نگہداشت یونٹ میں رکھا گیا ہے جہاں ان پر خصوصی توجہ دی جا رہی ہے۔

یاد رہے کہ گزشتہ برس کےنومبر میں لاہور میں بھی خاتون کے ہاں بیک وقت چھ بچوں کی پیدائش ہوئی ہے۔جن میں دو بیٹے اور چار بیٹیاں شامل تھیں۔ جرمنی میں بھی خاتون کے ہاں ایک ساتھ کی پیدائش ہو چکی ہے ان چھ بچوں میں سے چار لڑکیاں اوردو لڑکے تھے اور ہر بچے کا وزن دو پاؤنڈ کے قریب بتایا گیا تھا۔ اس قبل ایک عراقی خاتون نے چھ بچوں کو جنم دیا تھا اور کینیڈا میں بھی اسی طرح ایک ساتھ چھ بچوں کی پیدائش ہوئی تھی۔

میڈییکل ریسرچ میں سامنے آیا ہیکہ چھ بچوں کی ایک ساتھ پیدائش کا واقع شاذو نادر ہی پیش آتا ہے اور اس کے امکانات تقریبا چالیس لاکھ میں سے صرف ایک کے ہوتے ہیں۔ دنیا میں سب سے زیادہ جڑواں بچے نائیجیریا میں پیدا ہوتے ہیں۔ نائیجیریا چھوٹے سے قصبے ’’ایگبواورا‘‘ میں جڑواں بچوں کی شرح پیدائش دنیا میں سب سے زیادہ ہونے کی وجہ سے اسے “لینڈ آف ٹوئینز” کے نام سے جانا جاتا ہے۔ یہاں کوئی خاندان ایسا نہیں جہاں جڑواں بچے نہ ہوں۔ اکثر کے 8 یا 10 بچے جڑواں ہیں۔اسی وجہ سے یہ دور افتادہ اور پسماندہ گاوں دنیا کےطبی ماہرین کی توجہ کا مرکز بن گیا ہے۔

ماہرین صحت کے مطابق 1980 کے بعد دنیا بھر میں جڑواں بچوں کی پیدائش میں تیزی آگئی ہے، صرف امریکا میں ہی 2014 میں ایک لاکھ 35 ہزار 336 جڑواں بچے پیدا ہوئے، جب کہ ہر سال ان میں اضافہ ہوا۔ 2016 میں کی جانے والی ایک تحقیق سے پتہ چلا کہ جڑواں بچے عام بچوں کے مقابلے زیادہ لمبی عمر پاتے ہیں۔ جڑواں پیدا ہونے والے مرد 45 برس کی عمر تک اکیلے پیدا ہونے والے مردوں کے مقابلے 6 فیصد، جب کہ جڑواں پیدا ہونے والی خواتین 60 برس کی عمر تک اکیلے پیدا ہونے والی خواتین کے مقابلے 10 فیصد زیادہ صحت مند ہوتی ہیں۔ایک اور امریکی تحقیق کے مطابق جڑواں بچوں کو جنم دینے والی خواتین بھی عام خواتین کے مقابلے لمبی عمر پانے سمیت صحت مند زندگی گزارتی ہیں۔