وفاقی وزیربرائےامورکشمیروگلگت بلتستان علی امین گنڈا پورنےبھارتی دعوں کوبےنقاب کردیا

اسلام‌آباد (سٹیٹ ویوز) بھارت کےیوم جمہوریہ کوکشمیری یوم سیاہ کے طور پر منارہے ہیں، بھارتی مظالم کے خلاف مقبوضہ وادی میں مکمل ہڑتال ہے، بھارتی فوج کے غاصبانہ قبضے کے خلاف احتجاج اور ریلیاں نکالی جا رہی ہیں۔ وفاقی وزیر برائے امور کشمیروگلگت بلتستان علی امین خان گنڈا پور نے کہا ہے کہ بھارت جمہوریت کی آڑ میں مقبوضہ کشمیر میں کشمیری عوام کی نسل کشی کا مرتکب ہورہا ہے۔

بھارت کے یوم جمہوریہ کے موقع پر اپنے پیغام میں انہوں نے کہاکہ مقبوضہ وادی میں روزانہ کی بنیاد پر بے گناہ کشمیریوں کا ماورائے عدالت قتل کیاجارہا ہے ۔انہوں نے عالمی برادری پر زوردیاکہ وہ کشمیری عوام کے حق خودارادیت کے حصول کے مطالبے کو حقیقت میں بدلنے کیلئے اپنا کردار ادا کرے۔

قبل ازیں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بھی اپنے بیان میں کہا ہیکہ بھارت جمہوریت کا دعوی تو کرتا ہے لیکن انسانی آزادیوں کو سلب کر کے اپنے ہی دعوں کی نفی کر رہا ہے. انھوں نے بھارتی یوم جمہوریہ پر اپنے ایک بیان میں کہا ہیکہ قابض بھارتی فورسز مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں میں ملوث ہیں۔ وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ بھارتی شہریوں کی اکثریت کو یقین ہے کہ وہ جذباتی طور پرکشمیر کو کھوچکے ہیں۔ شاہ محمود قریشی کا مزید کہنا تھا کہ بھارتی سیاست دان انتخابات میں پاکستان مخالف کارڈ استعمال کرتے ہیں جو غیراخلاقی اور ناقابل قبول ہے۔

بھارت کے یوم جمہوریہ کے موقع پر لائن آف کنٹرول کے دونوں جانب اور دنیا بھر میں رہنے والے کشمیری عوام بھارت کے غاصبانہ قبضے اور بدترین ظلم کے خلاف یوم سیاہ منا رہے ہیں، مقبوضہ کشمیر میں گھر گھر سیاہ پرچم لہرا دیئے گئے۔

میر واعظ عمر فاروق، سید علی گیلانی اور یاسین ملک کی اپیل پر مقبوضہ وادی میں مکمل ہڑتال ہے۔ کاروباری مراکز، تعلیمی ادارے اور ٹرانسپورٹ معطل ہے۔ بھارتی حکومت نے کشمیریوں کے احتجاج کو دبانے کے لئے غیر اعلانیہ کرفیو نافذ کر کے وادی کو فوجی چھاو¿نی میں بدل دیا۔ انٹرنیٹ اور موبائل سروس بند ہے۔ کٹھ پتلی انتظامیہ کے تمام حربوں کے باوجود کشمیری آج بھارتی مظالم کے خلاف احتجاجی ریلیاں نکال رہے ہیں۔

یاد رہے برطانوی راج سے آزاد ی کے بعد بھارتی پارلیمنٹ نے 26 جنوری 1950 میں آئین ہند کو حتمی شکل دی۔ اس دن بھارت میں سرکاری سطح پر یوم جمہوریہ کے طور پر منایا جاتا ہے جبکہ مقبوضہ جموں و کشمیر اور پوری دنیا میں بسنے والے کشمیری اسے یوم سیاہ کے طور پر مناتے ہیں۔