جموں کشمیرنیشنل عوامی پارٹی کی رہنمانگہت عتیق نےپارٹی کےبیانیہ کوگھرگھرپہنچانےکیلیےمنفرداندازاپنالیا

اسلام‌آباد (سٹیٹ ویوز) جموں کشمیرنیشنل عوامی پارٹی کی رہنما نگہت عتیق نےپارٹی کےبیانیہ کوگھرگھرپہنچانےکیلیے منفرداندازاپنالیا. انھوں نےتحریک آزادی کشمیرمیں اپناحصہ ڈالنےکیلیےالفاظ کونظم کےاندازمیں بیان کردیا. ان کی لکھی گئی نظم میں مقبوضہ کشمیرمیں ہونیوالے بھارتی مظالم کوبھی بیان کرنے کے ساتھ ساتھ ان کو ہرسطح پراجاگر کرنے کے لیےمہم شروع کرنےکا اعلان بھی کیا گیا ہے.

میں نگہت عتیق
کشمیر کی بیٹی ہوں
مگر کتنے امن و سکون سے
اس دھرتی کا سکون برباد ہوتے دیکھ رہی ہوں
قسمت کے رنج و غم میں سناٹے گھومتے دیکھتی ہوں
سنگدلی کی کرچیاں جسم چھلنی کرتی ہیں
لیکن اب میں وفاؤں کے نشتر چلانے والے اس
سوگ نما مہینے میں
کالے کپڑے پہننے کا عہد کر چکی ہوں
میں اپنے کشمیر پر ہونے والے ظلم کی داستان لیے
اپنے ہم نشینوں کے پاس جاؤں گی
میں سوگ مناوں گی
غاصبوں سے اپنے خون کا بدلہ لوں گی
ہر کشمیری کا نظریہ بدلوں گی.
انہیں یہ شعور دوں گی
کہ جشن اگر فتح کا منانا ہے.
تو عمر بھر جاگنا ہے.
انہیں شب کے اندشیوں سے نکلنا سکھاؤں گی.
تختہ دار پر سر بریدہ کرنے والے
اپنے قائد کے بچھڑنے کا دکھ بھی مناؤں گی
گو کہ شہید زنده ہوتے ہیں
اور وه ہمیشہ کو امر ہوتے ہیں
لیکن ہمارے قائد کا ہمارے لیے
جان کا نذرانہ پیش کرنا کوئی کم نہ تھا
راہ حق پر ڈٹ جانا بے دم نہ تھا
کشمیریوں پر ہوتے ظلم پر
انہوں نے آواز جو بلند کی
آج لاکھوں کشمیریوں کی زبان پر
بلاشبہ وه بازگشت نعره بنکر گونجتی ہے
نشان وسعت صحراء میں
ہمیں ہمارا گھر دکھاتی ہے
ہمارے حوصلے بلند کرتی ہے
اداسیوں کی شاموں میں
بےچراغ ہوتے وجود پر
سحر کی روشنیاں رواں کرتی ہے
سچائی کی گواہیاں لب کناں ہیں کہ
کشمیر کی یہ بریدہ دھرتی
بس کشمیریوں کی ہے
ہمارے نقش قدم کی خوشبوئیں
اجلے بدن پر چسپاں ہیں
ہمارے خون کے سب بھنور
سمندر کی رگوں سے ذائقے اگلتے ہیں .
سرخ آسمان کے سب باغی ستارے
آمن کی آشا کی خاطر
اپنا وطن اپنی دھرتی
اپنا کشمیر لینے کو تیار کھڑے ہیں
ہاں ہم تیار کھڑے ہیں