سلامتی کونسل میں مسعود اظہر کو دہشتگرد قرار دینے کی قرارداد چوتھی بار ویٹو

نیویارک(سٹیٹ ویوز) چین نے سلامتی کونسل میں مختلف ممالک کی جانب سے مولانا مسعود اظہر کوعالمی دہشت گرد قرار دینے کی قرارداد روک دی ہے۔غیر ملکی خبررساں ادارے کے مطابق سلامتی کونسل میں کالعدم جیش محمد کے سربراہ مولانا مسعود اظہرکے خلاف قرارداد پراعتراض کی ڈیڈلائن ختم ہونے کا آج آخری دن تھا۔۔

بھارت کی درخواست پر فرانس، امریکا اور برطانیہ نے مسعود اظہر کو عالمی دہشت گرد قرار دینے کی قرارداد پیش کی تھی تاہم چین نے سلامتی کونسل میں مسعود اظہر کے خلاف قرارداد کو روک دیا ہے۔

چینی وزارت خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم نے ہمیشہ ذمے دارانہ رویے کا مظاہرہ کیا ہے اور ہمیشہ مناسب مؤقف اپنایا، مسعود اظہر کے خلاف قرارداد پرفریقین سے رابطےمیں رہے ہیں، تاہم ہمارا مؤقف ہے کہ اس مسئلے پرمتعلقہ اداروں کو قوانین اورطریقہ کارکی پیروی کرنی ہوگی، اور تمام فریقین کے لیے قابل قبول حل مسئلے کامناسب حل ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق اے ایف پی کے مطابق چین نے اس قرارداد کو ویٹو کر دیا جس میں مسعود اظہر پر پابندی کا مطالبہ کیا گیا تھا، فرانس،امریکا،برطانیہ نے مسعود اظہر کو دہشتگرد قرار دینے کی قرارداد پیش کی تھی۔

چینی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ چین نے ہمیشہ ذمہ دارانہ رویے کا مظاہرہ کیا ہے، انہوں نے کہا کہ اس مسئلے کو متعلقہ اداروں کو قوانین کی پاسداری کرنا ہوگی۔

ترجمان چینی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ قرارداد پر فریقین سے رابطے میں رہے اور ہمیشہ مناسب موقف اپنایا، تمام فریقین کے لیے قابل قبول حل مسئلے کا مناسب حل ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں