گلگت بلتستان میں انتظامی امور میں بہتری لانے کیلئے چار نئے اضلاع بنانے کی منظوری دے دی گئی

اسلام آباد(سٹیٹ ویوز)گلگت بلتستان کی صوبائی کابینہ نے چار نئے اضلاع کے قیام کی منظوری دے دی۔ گلگت بلتستان میں واقع داریل، تانگیر، گوپس یاسین اور روندو کو نئے اضلاع بنانے کی منظوری دے دی گئی ہے۔ کابینہ اجلاس میں رمضان المبارک میں سستے بازاروں کے قیام، مستحق افراد کے لئے امدادی پیکیجز اور یوٹیلیٹی سٹورز میں اشیائے خورد و نوش سستے دام فراہم کرنے کے لئے اقدامات کی بھی منظوری دے دی گئی۔ کابینہ نے متعلقہ اداروں کو ہدایت کی ہے کہ گلگت بلتستان کے لئے گندم کی ترسیل میں نیٹکو کو ترجیح دی جائے اور اس حوالے سے تمام قانونی تقاضے پورے کئے جائیں۔ وزیراعلیٰ حفیظ الرحمن کی زیرصدارت صوبائی کابینہ کے اجلاس میں صوبائی وزراء، چیف سیکرٹری سمیت تمام سرکاری محکموں کے سیکرٹریز نے بھی شرکت کی۔

کابینہ نے اگلے مرحلے میں نئے اضلاع، سب ڈویژن، تحصیل اور نیابتوں کی تشکیل کے لیے باقاعدہ طور پر پالیسی بنانے کی بھی ہدایت دی تاکہ مستقبل میں مذکورہ انتظامی یونٹس میں اداروں کے قیام اور وسائل کی فراہمی کے لیئے قانونی روڈ میپ بنایا جا سکے اور انتظامی یونٹس کو نچلی سطح تک عوامی فلاح و بہبود کے لیے تشکیل دیا جا سکے۔ کابینہ نے پیشہ ور گداگروں کی گلگت بلتستان داخلے پر پابندی عائد کر دی ہے۔ ضلعی انتظامیہ کو ہدایت دی گئی ہے کہ تمام ٹرانسپورٹ کمپنیوں کو پابند کیا جائے کہ وہ پیشہ ور گداگروں کو گلگت بلتستان میں نہ لائیں۔ بصورت دیگر ٹرانسپورٹ کمپنی کا لائسنس منسوخ کر دیا جائے گا۔ کابینہ نے ہدایت کی ہے کہ پیشہ ور گداگروں کے سہولت کاروں کو تعزیری سزاوں کے تحت جیل بھیج دیا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں