راولپنڈی،چالان پر جھگڑا،صوبائی وزیرراشد حفیظ بھی کود پڑے

راولپنڈی (سٹیٹ ویوز) چیئرمین آر ڈی اے عارف عباسی کے صاحبزادے جنید عباسی اور ٹریفک وارڈن میں چالان کرنے کے معاملے پر جھگڑا ہو گیا جبکہ پی ٹی آئی کے صوبائی وزیر راشد حفیظ،عارف عباسی اور ایم پی اے واثق قیوم عباسی موقع پر پہنچ گئے جبکہ معاملے کی تحقیقات کا حکم د یدیا گیا ہے ۔ذرائع کے مطابق ڈبل روڈ پر چیئرمین آر ڈی اے کی سرکاری گاڑی نمبر013کو انکا بیٹا جنید عباسی لیکر آ رہا تھا کو وارڈن سلمان کیانی نے روکا تواس نے تکرار شروع کر دی۔

بعدازاں موقع پر موجودڈی ایس پی کے ساتھ سخت لہجہ استعمال کیا جس پر ڈی ایس پی نے کہا کہ اس کو بھی تھانہ میں بند کر دو، جس پر گاڑی اور اس نوجوان کو وارڈنز تھانہ لے گئے ۔ وارڈن کا موقف تھا کہ جنید عباسی رانگ سائیڈ سے آ رہے تھے جبکہ جنید عباسی کا کہنا ہے کہ وہ سروس روڈ سے مین روڈ پر آئے تھے اور ٹرن لے رہے تھے ۔

راشد حفیظ نے تھانے کے باہر گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر گاڑی غلط پارک تھی تو وارڈن چالان کردیتا، وارڈن لڑکے پر تشدد کرتے ہوئے تھانے لے آیا اور اب ڈرامہ کررہا ہے ۔ادھر ٹریفک وارڈن کا کہنا ہے کہ وہ قانونی کارروائی کیلئے ملزم کو تھانہ نیو ٹاؤ ن لا یا تھا جبکہ راشد حفیظ دو درجن سے زائدافراد لے کر تھانے پہنچے ۔میں ایف آئی آر لکھ رہا تھا جو صوبائی وزیر راشد حفیظ نے پھاڑدی۔

دوسری طرف تھانہ نیوٹاؤن میں ٹریفک وارڈن سلمان کیانی نے تحریری درخواست دی کہ اس کے ساتھ مزاحمت کی گئی، کار سرکار میں مداخلت اور سنگین نتائج کی دھمکیاں دی گئیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ تھانے میںایم پی اے کے ساتھ آئے افراد نے وارڈن سے ہاتھا پائی کی جس دوران اس کی وردی بھی پھٹ گئی متعلقہ تھانے کے ایس ایچ او بھی خاموش تماشائی بنے رہے ۔واقع کی اطلاع ملتے ہی ایس پی راول عثمان بٹ بھی موقع پر پہنچ گئے ۔

رات گئے تک دونوں جانب سے موقع سننے کے بعد سی پی او کو رپورٹ دی گئی جس پر سی پی او نے ایس پی عثمان بٹ کو اپنی نگرانی میں اے ایس پی نیو ٹائون سے انکوائری کے احکامات جاری کر دیئے ، جس پر دونوں فریق تھانے سے چلے گئے ۔ قبل ازیں سی پی او کی جانب سے وارڈن کو معطل کرنے کی کال چلائی گئی لیکن بعدازاں اس کوروک دیا گیا ۔ترجمان ٹریفک پولیس کی جانب سے کو ئی بھی موقف نہیں دیا گیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں