تاجکستان کی جیل میں ہنگامے، 3 اہلکاروں سمیت 32 افراد ہلاک

دو شنبے (مانیٹرنگ ڈیسک) تاجکستان کی ایک جیل میں ہنگامے کے دوران3 اہلکاروں سمیت 32 افراد ہلاک ہو گئے، حکومت کا کہنا ہے کہ ہنگامہ داعش کے قیدیوں نے شروع کیا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق ہنگامہ آرائی کے دوران مشتعل قیدیوں نے جیل کے ہسپتال کو آگ بھی لگا دی۔ اس دوران انہوں نے متعدد قیدیوں کو یرغمال بھی بنایا۔ ان یرغمالیوں کی آڑ میں جیل سے فرار ہونے کی کوشش میں تھے۔

تاجکستان کی وزارت انصاف کا کہنا ہے کہ مرنے والے 3 اہلکار اور 29 قیدی شامل ہیں۔ یہ ہنگامہ آرائی دو شنبے کے نواحی شہر وحدت کی ہائی سکیورٹی جیل میں ہوئی۔حکومت کا کہنا ہے کہ داعش سے تعلق رکھنے والے قیدیوں نے ہنگامے کی شروعات چاقو کے وار کر کے جیل کے کم از کم تین محافظوں اور پانچ قیدیوں کو ہلاک کرنے سے کی۔

خبر رساں ادارے کے مطابق ہلاکتوں کے بعد صورت حال پر قابو پانے کے لیے فورسز کی کارروائی میں 24 انتہا پسند قیدی مارے گئے۔ یہ نہیں بتایا گیا کہ آیا ہلاک ہونے والوں میں ہنگامہ کرنے والے انتہا پسند قیدیوں کا لیڈر بہروز گل مراد بھی شامل ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں