الطاف حسین کی گرفتاری ایم کیوایم،پیپلزپارٹی ،پی ٹی ایم اوربھارتی گٹھ جوڑ کا شاخسانہ،مزید گرفتاریاں متوقع،فیصل محمد

اسلام آباد(سید مظفرحسین بخاری+سٹیٹ ویوز)عالمی مصالحت کار فیصل محمد نے سٹیٹ ویوز سے گفتگو کرتے ہوئے انکشاف کیا کہ لندن میں بانی ایم کیوایم الطاف حسین کی گرفتاری نہ صرف عمران فاروق قتل کیس ہے بلکہ نفرت انگیز تقریر یں اورپاک فوج کےخلاف عوام کو بغاوت پر اُکسانے پر لندن پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے گرفتار کیا۔

فیصل محمد کا کہنا تھا کہ لندن اتھارٹی نے بانی ایم کیوایم کو اس بات کا پابند کیا تھا کہ وہ برطانیہ میں رہتے ہوئے کسی قسم کی سیاسی سرگرمیوں میں حصہ نہیں لیں گے لیکن موصوف نے اس پابندی کو روندتے ہوئے برطانوی قوانین کی خلاف ورزی کی اوراپنی سیاسی سرگرمیوں سے باز نہ آئے ۔ جبکہ پاکستان کی جانب سے برطانوی حکومت کو بتایا گیا تھا کہ برطانیہ کی سرزمین پاکستان کےخلاف استعمال ہورہی ہے اسے روکا جائے ۔

فیصل محمد نے مزید انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ بانی ایم کیوایم سے بھارتی خفیہ ایجنسی را کے اعلیٰ حکام نے ملاقاتیں کیں جس میں پاکستان میں دہشتگردی کےلئے تعاون مانگا۔ تاہم بعض ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ اسی دوران الطاف حسین نے پی ٹی ایم اوربلوچستان میں دہشتگرد تنظیم بی ایل اے سے بھی ٹیلفونک رابطہ کیا جو کہ برطانیہ خفیہ ایجنسیوں نے خفیہ کالیں ٹریس کرلیں ۔

فیصل محمد کا کہنا ہے کہ ایم کیوایم لندن، پیپلزپارٹی ، بھارتی خفیہ ایجنسی را، بی ایل اے اور پی ٹی ایم بلوچستان ، خیبرپختونخوا اورکراچی میں دہشتگردی کےلئے بڑا پلان تشکیل دے رہے تھے ۔ اس حوالے سے پاکستان کے اہم اداروں کو بھی علم ہوچکا تھا جس کے بعد پاکستان نے برطانوی حکومت سے اس معاملے کی بابت رابطہ کرکے فوری ایکشن لینے کی اپیل کی ۔ ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ حکومت پاکستان نے بانی ایم کیوایم کوگرفتار کرکے پاکستان کے حوالے کرنے درخواست کی گئی ہے ۔۔۔

فیصل محمد کا کہنا ہے کہ رمضان المبارک کی وجہ سے گرفتاریوں کا معاملہ ہلکا رکھا گیا تھا چند حکومتی ارکان کو بھی وقت بھی دیا گیا تھا کہ وہ ریاست کے ساتھ تعاون کریں مگر یہ سب معاملات کو درست کرنے کے بجائے اپنی کرپشن بچانے کیلئے پس پردہ ریاست کے خلاف سازشوں میں مصروف رہے اب بدعنوان حکومتی ارکان بھی گرفتار ہوں گے ۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں