حامد میر

حامد میر کا اپوزیشن کے حوالے سے انکشاف

کراچی (ویب ڈیسک)نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے ن لیگ کے رہنما احسن اقبال نے کہا ہےکہ ملک کو خانہ جنگی کی طرف دھکیل رہے ہیں گرفتار کرنا چاہتے ہیں تو کرلیں ،ہمیں اپنے موقف سے نہیں ہٹا سکتے،سنیئرتجزیہ کار حامدمیر نے کہا کہ اپوزیشن تو خود چاہتی ہےکہ اس کے زیادہ سے زیادہ لوگوں کو گرفتار کیا جائے-

میزبان شاہزیب خانزادہ نے تجزیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ ٹاپ کی اپوزیشن قیادت گرفتار جو آزاد ہیں ان پر مقدمات ہیں،ایک اور اپوزیشن کے اہم رہنما اورایک اور سابق وزیراعظم کو گرفتار کرلیا گیا جبکہ نیب اپوزیشن کے ایک اور رہنما کی گرفتاری کیلئے چھاپے مار رہا ہے۔جس رفتار سے گرفتاریاں ہورہی ہیں ایسا لگ رہا ہے کہ جلد ہی پوری اپوزیشن کی مین اسٹریم قیادت جیل میں ہوگی۔شاہد خاقان عباسی کی گرفتاری کے حوالے سے دلچسپ بات یہ ہے کہ نیب نے انہیں پندرہ جولائی کو نوٹس جاری کیا، اٹھارہ جولائی کو پیش ہونے کو کہا مگر ان کا وارنٹ گرفتاری سولہ جولائی کو ہی سائن کرلیا گیا تھا –

یعنی اگر شاہد خاقان عباسی جمعرات کو پیش ہوتے تو انہیں پیشی کے بعد گرفتار کرلیا جاتا مگر وہ پیش نہیں ہوئے تو پھر انہیں اسلام آباد سے لاہور جاتے ہوئے جو وہ شہباز شریف کے ساتھ چار بجے پریس کانفرنس کرنے کیلئے جارہے تھے گرفتار کرلیا گیا۔ بقول ن لیگ اور شاہد خاقان عباسی پہلے ہی یہ کہہ چکے تھے کہ نیب نے انہیں گرفتار کرنا ہے تو کرلے وہ تیار ہیں-

وہ ضمانت بھی نہیں کرائیں گے۔ یہ بات شاہد خاقان عباسی نے بار بار کی اورجمعرات کو انہیں گرفتار کرلیا گیا۔ ن لیگ کے رہنما احسن اقبال نے کہا کہ ہم راستے میں ویسے ہی ڈسکس کرتے آرہے تھے کیونکہ میرے لئے بھی طلبی ہوچکی ، وہ بھی پیشیاں بھگت رہے ہیں تو میں نے بھی ان سے یہ پوچھا تھا کہ کیا آپ کوکوئی باقاعدہ complaint دی گئی ہے کہ آپ کے خلاف یہ چارجز ہیں تو انہوں نے کہا کہ نہیں دیئے گئے، انہوں نے کہا کہ مجھے جو سوالات دیئے گئے ہیں میں نے نیب کو خط لکھ کر کہا ہے کہ آپ مجھے specific charge بتائیں کہ میرے خلاف آپ کو کیا شکایت ہے تاکہ ہم اس کا جواب دے سکیں-

اب آپ سوالات پوچھتے ہیں ہم ان کا جواب دیں گے،جب تک ہمیں یہ نہ پتا ہو کہ شکایت کیا ہے تو ہم کیسے آپ کو صحیح جواب دے سکتے ہیں، اس طرح کی ہم بات کرتے آئے لیکن جب ٹھوکھر پر پہنچے تو آگے ایک بہت بڑا پولیس کا اور رینجرز کا دستہ موجود تھا جس نے گاڑی کو روکا اور اصرار کیا کہ وہ انہیں لے کر جانا چاہتے ہیں ہم نے انہیں کہا کہ آپ وارنٹ لیٹر دکھائیں کہ وارنٹ گرفتاری ان کا کدھر ہے تو وہ ان کے پاس نہیں تھا-

پھر ایک کچا سا کاغذ جو فوٹو کاپی تھی اس پر ہی انہوں نے کچے ہاتھ سے لکھ کر کہ ہم آپ کو گرفتار کررہے ہیں وہ پکڑادیا۔ میں سمجھتا ہوں کہ یہ پاکستان کے اندر نازک مرحلہ ہے، ہم فاشزم کی طرف جارہے ہیں جہاں ایک پولیٹیکل ایجنڈے کے تحت اپوزیشن کی آوازیں دبائی جارہی ہیں اور خاص طور پر ان لوگوں کو نشانہ بنایا جارہا ہے جن کی کارکردگی کو زمانہ مانتا ہے۔ شاہد خاقان عباسی نے کیا کرپشن کی ہے-

اس نے یہ کرپشن کی ہے کہ وہ ایل این جی ٹرمینل جو دس سال سے کوئی نہیں لگا سکا تھا اس نے ایک سال میں لگا کر دکھادیا، اس نے یہ کرپشن کی ہے کہ پاکستا ن کی گیس شیڈنگ کے مسئلہ کو ختم کردیا تین برسوں کے اندر۔ اس نے یہ کرپشن کی ہے کہ پانچ ہزار میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کے کارخانے جو سستی بجلی دے رہے ہیں ان کیلئے گیس پائپ لائن ڈال کر پاکستان کو انرجی میں خودکفیل ہونے میں مدد کی۔جس جس نے پاکستان کی ترقی میں پانچ برسوں میں حصہ ڈالا ان سب کو آپ مجرم بنا کر پیش کررہے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں