سردارتنویرالیاس نے سلامتی کونسل کو کشمیریوں کی بھرپورفیورقراردیدیا

اسلام آبادٟ(سٹیٹ ویوز)ٞپنجاب سرمایہ کاری بورڈ کے چیئرمین سردار تنویر الیاس خان نے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں متفقہ قرارداد کی منظوری اور قومی سلامتی کونسل کے فیصلوں کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہاہے کہ اس سے کشمیری عوام کے ساتھ بھرپور یکجہتی کا اظہار سامنے آیاہے اور پاکستان کی طرف سے مشترکہ آواز سامنے آنے سے مسئلہ کشمیرکو حل کرنے میں مدد ملے گی۔بھارت کے ساتھ سفارتی تعلقات کی سطح کو کم کرنے، دوطرف تجارت منقطع،مسئلہ کشمیر کو سلامتی کونسل میں اٹھانے اور دوطرفہ معاہدہ جات کا ازسرنو جائزہ لینے کا فیصلہ لائق تحسین ہے اور کہاہے کہ پوری قوم یوم آزادی کو کشمیری عوام کے ساتھ یکجہتی کے طورپر منائے گی،بھارت اپنے مذموم مقاصد میں کسی صورت کامیاب نہیں ہوگا پوری پاکستانی قوم کشمیری بھائیوں کے شانہ بشانہ کھڑی ہے۔تفصیلات کے مطابق بدھ کو پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میںمقبوضہ کشمیر کا خصوصی درجہ ختم کرنے پر بھارت کے خلاف قرارداد متفقہ منظورکی گئی ہے یہ قراردادچیئرمین پارلیمانی کشمیر کمیٹی فخر امام نے بھارتی اقدامات اور جارحیت کے خلاف پیش کی۔قرارداد پر تمام پارلیمانی جماعتوں کے رہنما¶ں کے دستخط ہیںجبکہ مذکورہ قرارداد کے متن کے مطابق پارلیمنٹ نے مقبوضہ کشمیر کا سٹیٹس تبدیل کرنے کے بھارتی اقدام کی مذمت کی ہے، قرارداد میں کہاگیاہے کہ پاکستان، بھارت اور کشمیری مسئلہ کشمیر کے تین فریق ہیں،مسئلہ کشمیر اقوامِ متحدہ کی قرارداد وں اور کشمیری عوام کی خواہشات کے مطابق حل کیا جائے۔بھارت کی طرف سے جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی اور سویلین آبادی پر کلسٹر بم استعمال کرنے کی مذمت کرتے ہیں جبکہ کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی مکمل حمایت کا اعادہ کیا گیاہے، قرارداد میںبھارت سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں اور غیر قانونی اقدامات ختم کرنے اور کشمیری قیادت کو فوری رہا کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہاگیاہے کہ کشمیر عالمی سطح پر متنازعہ علاقہ ہے جبکہ مسئلہ کشمیر کا کوئی یک طرفہ حل قبول نہیں ہے۔دوسری جانبوزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت قومی سلامتی کونسل کا اجلاس ہوا ہے جس میںجہاں سول اور عسکری قیادت نے شرکت کی اور بھارت کے حوالے سے پانچ اہم فیصلے کیے گئے ہیں ان کے مطابق بھارت کے ساتھ دوطرفہ تجارت کو معطل کردیا جائے گا اور سفارتی تعلقات کو محدود کرتے ہوئے سفیر کو واپس بلالیا جائے گا۔ پاک،بھارت تعلقات پر نظرثانی کی جائے گی اور بھارت کے غیر قانونی اقدامات کو اقوام متحدہ کے سامنے اٹھایا جائے گا۔ یوم آزادی کو کشمیریوں کے ساتھ یوم یک جہتی کشمیر منایا جائے گا اور مسئلہ کشمیر کو بھرپور انداز میں اجاگر کیا جائے گا، اور 15 اگست کو یوم سیاہ کے طور پر منایا جائے گا۔ دوطرفہ تعلقات کے حوالے سے انتظامات کاجائزہ لیا جائے گا۔اس حوالے سے جاری کردہ بیان میں پنجاب سرمایہ کاری بورڈ کے چیئرمین سردار تنویر الیاس نے مذکورہ بالااقدامات کو مسئلہ کشمیر کے حل کی جانب اہم پیش رفت قرار دیاہے اور کہاہے کہ متفقہ قرارداد کی منظوری اور بھارت کے ساتھ تعلقات کا ازسرنو جائزہ وقت کی ضرورت ہے ،بھارت ظلم و ستم کا بازار گرم کرکے کشمیری عوام کو محکوم بنانے کی سازش میں کبھی کامیاب نہیں ہوگا۔پاکستان کی بہادر افواج اور ملک کا بچہ بچہ کشمیری بھائیوں کے ساتھ شانہ بشانہ کھڑا ہے اور کشمیر ی عوام کو حق خودارادیت ملنے تک ہر ممکن کوشش کرے گا۔انہوں نے کہا کہ یوم آزادی کو کشمیری عوام کے ساتھ یوم یکجہتی کے طورپر بھرپور طریقے سے منایا جائے گا جبکہ اس دوران بھارتی مظالم کو ہر سطح پر بے نقاب کیاجائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں