صلاح الدین کے والد نے ’اللہ کی رضا‘ کے لیے اپنے بیٹے کےقاتلوں کو معاف کر دیا

رحیم یارخا ن(ویب ڈیسک ) پولیس حراست میں ہلاک ہونے والے رحیم یار خان کے صلاح الدین کے والد نے ’اللہ کی رضا‘ کے لیے ’قاتلوں‘ کو معاف کرتے ہوئے مقدمہ واپس لینے کا اعلان کیا ہے۔اس سلسلے میں باضابطہ طور پر صلاح الدین کے آبائی گاؤں گورالی کی جامع مسجد میں تقریب منعقد کی گئی جس میں قائم مقام ڈپٹی کمشنر ذیشان حبیب، اسسٹنٹ کمشنر کامونکی شاہد عباس جوتہ سمیت مقامی لوگوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

مقامی صحافی ارشد چوہدری کے مطابق تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صلاح الدین کے والد ماسٹر افضال نے کہا کہ ’ہمیں کسی سے کوئی گلہ نہیں، بیٹے کی موت کا غم کبھی بھلایا نہیں جاسکے گا۔ اللہ کی رضا کے لیے قاتلوں کو معاف کرتا ہوں۔انہوں نے کہا کہ ’ہم نے حکومت سے کوئی مطالبہ نہیں کیا، ترقیاتی کاموں کے لیے کیے گئے مطالبات گاؤں والوں کی خواہش ہے جسے پورا ہونا چاہیے۔‘

اس موقع پر قائم مقام ڈی سی ذیشان حبیب نے کہا کہ حکومت ورثا کی شکر گزار ہے اور ’ہم لواحقین کی طرف سے کیے گئے تمام مطالبات پورے کرنے کے پابند ہیں۔‘
انہوں نے کہا کہ پولیس اصلاحات حکومت کا ویژن ہے جس پر ہر صورت عمل کرایا جائے گا۔یاد رہے کہ کچھ عرصہ قبل صلاح الدین نامی شخص کو مبینہ طور پر بینک کی اے ٹی ایم مشین سے پیسے نکالنے اور کیمرے کے سامنے زبان چڑانے کی تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد مقامی پولیس نے حراست میں لیا تھا۔ اس دوران ان کی موت واقع ہوگئی تھی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں