اصلاحات کے نام پر پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش، فضل الرحمن مارچ عالمی ایجنڈہ کا حصہ، فیصل محمد

لندن (سٹیٹ ویوز ) مشرق وسطی میں اصلاحات کے نام کئ مسلم ممالک کو کمزور کرنے کے بعد اب عالمی اسٹیبلشمنٹ مسلم دنیا کی واحد ریاست پاکستان کو غیر مستحکم کرسکتی ہیں اس حوالے سے عالمی طاقتوں نے باقاعدہ ایک روڈ میپ تیار کیا جس کے تحت سول سپرمیسی کے نام پر ان اداروں کو کمزور کیا جائیگا. جو پاکستان کے دفاع اور نیوکلئیر تنصیبات کے ضامن ہیں تاکہ عالمی برادری میں اس حوالے سے تحفظات پیدا ہوں ان خیالات کا اظہار یورپی یونین میں موجود بین القوامی تنازعات میں ثالثی کے عالمی ماہر فیصل محمد نےکیا.

فیصل محمد کا کہنا تھا کہ پاکستان میں حالیہ سیاسی بحران اسی ایجنڈے کا ابتدائی مرحلہ ہے جس کے پہلے مرحلہ کے تحت پاکستان کی مغربی اور مشرقی سرحدوں پر جنگی صورتحال پیدا کرکے فوج کو سرحدوں پر مصروف کردیا اور اندرون ملک اسلامی شدت پسندوں کو سیاسی اصلاحات اور نظام اسلامی کے حوالے سے جمہوری اور لبرل قوتوں کے ساتھ الجھایا گیا ہے تاکہ خطے میں مغرب کے واحد اتحادی بھارت کو کشمیر پر اسکی گرفت مضبوط کرنے کا موقع فراہم کیا جا ئے.

فیصل محمد کے کہا دنیا اس وقت ایک نیو کلیئر طاقت کے حامل ملک کے دارلخلافہ کو طالبان حامی جماعت کے قبضہ میں دیکھ کر تشویش میں مبتلا ہوسکتی کیونکہ پاکستان میں لبرل ازم اور جمہوریت کی بات کرنے والی جماعتیں بھی طالبان حامی فضل الرحمن کی جماعت کی قیادت کو قبول کرکے انکے ساتھ کھڑی ہیں فیصل محمد کے مطابق اگر پاکستان کی موجودہ حکومت فوری طور پر اس صورتحال پر قابو نہیں کریگی تو مبینہ طور پر عالمی طاقتوں کا یہ ایجنڈہ کامیابی کی راہ اختیار کرسکتا ہے ۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں