زیادتی کے بعد قتل ہونے والی 7سالہ بچی کے والد کی گفتگو نے سب کو آبدیدہ کر دیا

نوشہرہ (ویب ڈیسک) نوشہرہ میں سات سال کی بچی کو مبینہ زیادتی کے بعد قتل کر دیا گیا۔پولیس کے مطابق بچی کی لاش کھیت کے قریب ٹینک سے ملی۔ علاقہ مکینوں بچی کے ساتھ زیادتی

کے الزام میں دو ملزمان کو پکڑ کر تشدد کا نشانہ بنایا اور پھر پولیس کے حوالے کر دیا۔پولیس حکام کے مطابق واقعہ کا مقدمہ درج کر کے تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے اور بچی کی پوسٹ مارٹم رپورٹ کی روشنی میں تفتیش کو آگے بڑھائیں گے۔

آئی جی خیبر پختونخوا ثناء اللہ عباسی کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ صوبے میں وکٹم سپورٹ پروگرام شروع کر رہے ہیں، پروگرام کے لیے پشاور، چارسدہ، مردان اور ابیٹ آباد میں لیڈی پولیس آفیسرز کا انتخاب کیا ہے۔

7 سالہ بچی نور کے والد کا کہنا ہے کہ میری عمران خان اور تمام اداروں سے اپیل ہے کہ مجھے انصاف چاہئیے ، میرے اور میری بیوی کے سامنے لاکر ان ظالموں کو سزا ملنی چاہئے ، جس نے میری معصوم بچی کو زیادتی کا نشانہ بناڈالا ہے۔

نور کے والد اس موقع پر روتے رہے جب موقع پر موجود دیگر لوگ انہیں دلاسہ دیتے رہے۔ سوشل میڈیا پر بھی نور کے قاتلوں کو انجام تک پہنچانے کے لیے ایک مہم چل پڑی ہے جس میں صارفین نے نور کے لیے انصاف کا مطالبہ کیا ہے۔

ایک صارف نے بچی کی تصویر شئیر کرتے ہوئے کہا کہ میرے لیے یہ کہنا مشکل ہے کہ اس بچی کو زیادتی کا نشانہ بنا دیا گیا ہے۔

ایک صارف نے بچیوں کے ساتھ زیادتی کرنے والے مجرموں کے خلاف سنجیدہ اقدامات اٹھانے پر زور دیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں