وزیراعظم آزادکشمیرنے کرونا وائرس کے مریضوں کیلئے سہولیات اور متاثرین کیلئے پیکیج کا اعلان کردیا

مظفرآباد(سٹیٹ ویوز)وزیراعظم آزاد حکومت ریاست جموں وکشمیر راجہ محمد فاروق حیدر خان نے وزیرصحت عامہ ڈاکٹر نجیب نقی کے ہمراہ مرکزی ایوان صحافت کے زیراہتمام کورونا کے حوالے آگاہی سیشن سے خطاب کرتے ہوئے کہاہے کہ کورونا وائر س کیخلاف فرنٹ لائن پر لڑنے والے محکمہ صحت عامہ کے گریڈ ایک سے 20تک ملازمین کو ایک ماہ کی بونس تنخواہ دینگے۔مزید ڈاکٹرز تعینات کرینگے۔آزادکشمیر میں جس کے پاس ڈاکٹرز کی ڈگری ہے ان کو میرٹ پر نوکری دینگے۔ڈیلی ویجز والوں کی مالی معاونت کرینگے۔ کورونا کے ٹیسٹ کیلئے ایمزمظفرآباد میں لیبارٹری فنگشنل ہو چکی ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ رولاکوٹ‘ کوٹلی اور میر پور میں بھی یہ لیبارٹریاں قائم کر رہے ہیں۔ایک فنڈ بھی قائم کردیاہے۔خوراک کی قلت نہیں ہونے دینگے۔ کورونا وائرس سے اس وقت پوری دنیا‘ مملکت پاکستان اور آزادکشمیر متاثر ہے۔ آزاکشمیر میں اس وباء پر قابو پانے کیلئے حکومت نے ہنگامی اقدامات اٹھائے ہیں۔لاک ڈاؤ ن کیا۔ اور فوری طور پر اپنے بجٹ سے 15کروڑ روپے مختص کرکے آلات خریدے۔پاکستان اور انٹر ڈسٹرکٹ نقل وحرکت پر سوائے گڈز ٹرانسپورٹ مکمل پابندی ہے۔یہ ایک ناگہانی آفت ہے جس سے نمٹنے کیلئے کوئی بھی پہلے سے تیار نہیں تھا۔ اس کی کوئی ویکسین بھی نہیں ہے۔ صرف احتیاطی تدابیر سے ہی اس پر قابو پایا جاسکتا ہے۔

اس وقت تک 90لوگوں کے ٹیسٹ ہوئے ہیں جن میں سے صرف دو مثبت آئے ہیں۔ 186لوگ قرنطینہ سینٹرز میں ہیں۔کورونا وباء کے آوٹ بریک کے بعدبیرون آزادکشمیرسے آنیوالے 5ہزار لوگوں کا پتہ لگا لیا ہے۔ 16ہزار کی ایک اور لسٹ ملی ہے۔ یوسی سطح پر ٹیمیں تشکیل دیدی ہیں۔مقبوضہ کشمیر میں بھی ہمارے بھائی انتہائی مشکل حالات سے دوچار ہیں۔ہم ان کیلئے سخت پریشان ہیں۔ وزیراعظم نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ انٹری پوائنٹس پر چیکنگ سخت ہے۔ وزیراعظم پاکستان سے بات ہوئی ہے ان کو بھی بتایا ہے کہ بیرون ملک سے کسی کو نہیں آنے دینگے۔ وفاقی حکومت نے 20کروڑ کا پیکج دینے کی یقین دہانی کرائی ہے۔ کورونا کے خلاف فرنٹ لائن پر فرائض سرانجام دینے والے ڈاکٹرز‘ پاک افواج کے جوان‘ صحت کاعملہ‘پیرامیڈیکل سٹاف‘ پولیس انتظامیہ کے اہلکاروں کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔شہادت پانے والے ڈاکٹر اسامہ کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔

وزیراعظم نے بتایا کہ غلہ کی قلت نہیں ہونے دینگے۔ ایل او سی پر بھی غلہ موجود ہے۔ہماری ضرورت پانچ لاکھ ٹن گندم ہے۔ وزیراعظم پاکستان سے 90ہزار ٹن گندم مفت فراہمی کامطالبہ کیا ہے۔ موجودہ صورتحال میں بلدیاتی اداروں کی آمدن ختم ہوگئی ہے۔ ہم وباء کیخلاف اپنے تما م وسائل استعمال کررہے ہیں۔ڈاکٹر نجیب نقی نے کہاکہ آزادکشمیر میں وائرس باہر سے آیا ہے اسی لئے لاک ڈاؤن کیا گیا۔ اگر کوئی آیا تو وائرس آسکتا ہے۔حفاظتی کٹس بھی آرہی ہیں۔ اس موقع پر صدر مرکزی ایوان سجاد میر نے حکومتی اقدامات کو سراہتے ہو ئے اقدامات مزید سخت کرنے پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی ایوان صحافت‘صحافتی برادری انتہائی محدود وسائل میں کورونا کیخلاف جنگ میں ہر اول دستے کا کردار اد ا کررہی ہے۔ وزیراعظم نے سینٹرل پریس کلب کے اقدامات کی تعریف کی اور کہاکہ صحافی ہر اول دستے کا کردار ادا کررہے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں