چیف جسٹس ابراہیم ضیاء کی رخصتی پر جموں کشمیر پیپلز پارٹی کی طرف سے یوم نجات منانے کا اعلان

اسلام آباد(سٹیٹ ویوز) جموں کشمیر پیپلز پارٹی کے صدر و رکن اسمبلی سردار حسن ابراہیم خان نے کہا ہے کہ پوری دنيا کرونا وائرس کی لپيٹ ميں ہے جس سے پاکستان اور آزاد کشمير کے عوام کو شديد خطرات لاحق ہيں۔ ہر گزرتے دن کے ساتھ مريضوں کی تعداد ميں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ اللہ تعالی تمام انسانوں پر اپنا خصوصی کرم فُرمائے۔جموں کشمير پيپلز پارٹی کا ہر کارکن آزاد کشمير بھر ميں کسی بھی ناگہانی صورتحال سے نمٹنے کیلئے پوری ذمہ داری سے عوام کے شانہ بشانہ کھڑا ہو گا اور اسوقت بھی اپنی تمام تر کوششيں جاری رکھے ہوئے ہيں۔

انہوں نے کہا کہ جموں کشمير پيپلز پارٹی آج31 مارچ کو يوم نجات کے طور پر منا رہی ہے عوام ايک ايسے چیف جسٹس سے چھٹکارا حاصل کر رہے ہيں جس نے لوگوں کو انصاف سے محروم رکھا۔ اقرباء پروری، متعصبانہ فيصلے، ميرٹ و انصاف کا قتل عام اور کرپشن اس شخص کے بدترين عہد کا حصہ رہے۔ سردار خالد ابراہیم صاحب نے عدليہ کے اس نام نہاد نظام کو چيلنج کيا اور بلا خوف و خطر آواز بلند کی ۔ ان کی رحلت کے بعد جموں کشمير پيپلز پارٹی نے قانونی اور احتجاجی جنگ جاری رکھی ۔ آج سے ايک مہينہ قبل پارٹی نے فيصلہ کيا تھا کہ آزاد کشمير بھر ميں چيف جسٹس کے اقدامات کے خلاف دھرنے دئيے جائيں گے اور بغير کسی ميرٹ کے محض سفارش اور سیاسی بنيادوں پر لگائے گئے 5 ججز کو گھر بيجھنے تک آرام سے نہيں بيٹھيں گے۔ ليکن آزاد کشمير ميں ہيلتھ ايمرجنسی کے باعث شيڈيول کو موخر کرنا پڑا۔

چيف جسٹس حالات کا فائدہ اٹھاتے ہوئے اپنی مدت ملازمت پوری کر چکا ليکن حالات سازگار ہوتے ہی اس کا مکروہ چہرہ اور سياسی بنيادوں پر لگائے گئے 5 ججوں سميت اسکے تمام غيرقانونی فيصلوں کو چيلنج کيا جائے گا ۔ خواہ اس کے لئے کوئی بھی قربانی کيوں نہ دينی پڑے۔ بڑے منصب عوام کی خدمت اور عزت کمانے کے لئے ہوتے ہيں۔ اگر بڑے منصب عوام کے حقوق کا استحصال کريں تو ايسے منصب پر بيٹھنے والے لوگوں کو تاريخ کے سياہ اوراق ميں لکھا اور ياد کيا جاتا ہے۔جموں کشمير پيپلز پارٹی اس عزم کا اعادہ کرتی ہے کہ ميرٹ اور انصاف کی بحالی تک اپنی جدوجہد جاری و ساری رکھے گی اور ايسے نام نہاد انصاف کے علمبرداروں کے خلاف جنگ جاری رہے گی

اپنا تبصرہ بھیجیں