نقطہ نظر /روزینہ علی

کورونا وائرس اور ریٹنگ کی دوڑ

کورونا وائرس کی تباہی اس مرض کا مہلک ہونا، وبا کا تیزی سے پھیلنا ایک شخص کا دوسرے سے متاثر ہونا یہ سب حقیقتیں اپنی جگہ ہیں لیکن خود اپنی ذات اور اپنے دوست احباب کو بچانے کے بجائے معاشرے کے متعدد افراد کی توجہ اپنے یوٹیوب چینلز کی ریٹنگ بڑھانے اور اپنے فیس بک، انسٹا یا ٹویٹر پر فالوورز کی تعداد بڑھانے کے جتن کرنے میں مصروف ہیں اور معصوم عوام جو دیکھا بغیر تحقیق اس پر یقین کر کے دن رات خوف کی زندگی گزار رہے ہیں

ابھی تین دن قبل ایک ویڈیو دیکھی بلاگر نے اپنی ریٹنگ بڑھانے کے لیے عوام کو ڈرانے میں کوئی کسر نہ چھوڑی تھی، ویڈیو کے آغاز میں متعدد بار کہا گیا کہ کمزور دل حضرات نہ دیکھیں، بچے نہ دیکھیں، اگر ویڈیو غلطی سے پلے ہو گئی ہے تو بچے یا کمزور دل حضرات فوری بند کر دیں یہ تمام جملے سنتے ہی میرا تجسس بھی بڑھ گیا دل تو میرا بھی کمزور ہے لیکن سوچا چلو دیکھتے ہیں اگر کمزور دل برداشت نہ کر پایا ہارٹ اٹیک ہوا موت آ گئی تو اللہ کی مرضی لیکن ویڈیو ضرور دیکھونگی،بس پھر کیا تھا میں نے ویڈیو دیکھنا شروع کی، ویڈیو میں بتایا جانے لگا کورونا سے موت کیسے ہوتی ہے اور پھر مرنے کے بعد کیا ہوتا ہے اٹلی میں دیکھیں کیا ہوا، ویڈیو میں ایک دوسرا کلپ دکھایا جاتا ہے کہ لاشوں سے بھرا ٹرک ایک بڑے گڑھے میں انڈیل دیا جاتا ہے اور گڑھا پہلے بھی ہزاروں لاشوں کا مسکن بن چکا ہوتا ہے، ہزاروں دیگر لوگ بھی یہ ویڈیو دیکھ چکے ہوتے ہیں اور سینکڑوں تو استغفار استغفراللہ کا کمنٹ میں ورد کر چکے ہوتے ہیں کلپ کے بعد پوچھا جاتا ہے کہ کیا آپ بھی چاہتے ہیں آپ کے ساتھ ایسا ہو، میرا کمزور سا دل ہارٹ اٹیک سے دھڑکنا تو بند نہ ہوا اس ویڈیو کو دیکھ کر لیکن دماغ شدید گرم ہوا اور دل بے چارہ افسردہ کے ریٹنگ کے چکر میں فلمی سین کو اٹلی سے جوڑ کر لوگوں کو خوفزدہ کرنے کی اچھوتی حرکت کی گئی تھی،

میرا کمزور سا دل اس ویڈیو کو دیکھ کر اس لیے بھی نہیں پھٹا کیونکہ پہلے ہی فلم دیکھ چکی تھی، کونٹیجیئن ہالی ووڈ کی امریکن تھرلر فلم ہے جو کہ وائرس پر بنائی گئی تھی اور بالکل فلم دیکھتے ہوئے ایسا محسوس ہوتا ہے جیسے آپ موجودہ حالت پر مبنی تازہ ترین فلم دیکھ رہے ہیں، ویڈیو دیکھ کر اس بندے پر غصہ اور عوام کی حالت پر رحم آیا، عوام الناس کے لیے اپنی ذمہ داری بھی پوری کی اور کمنٹ میں خوب باتیں بھی سنا دیں کہ اس طرح فلمی سین اٹھا کر لوگوں کو ڈرانا ٹھیک نہیں

سلسلہ یہیں نہیں رکا ابھی ایک دو دن قبل ماموں کا بیٹا دوڑا آیا باجی باجی دیکھو اٹلی میں کیا ہو رہا ہے کیسے لوگوں کو پھینک رہے ہیں یہ سچ ہے دوسرے کزن نے بھیجی ہے، باجی اب کیا ہوگا بس سوالوں کی بھرمار ہو گئی، غصہ پھر سے بہت آیا لیکن اس بار ویڈیو کلپ مختلف تھا تو سچا پہلے کھوج لگایا جائے، بالآخر سراغ مل گیا دوسرا ویڈیو کلپ جسے سوشل میڈیا پر وائرل کر کے لوگوں کو ڈرا کر ریٹنگ اور فالوورز بڑھائے جا رہے ہیں وہ ایک کورین فلم کا سین تھا اور فلم بھی وائرس پر بنائی گئی تھی جس میں مرنے والوں کو کرین کے ذریعے اٹھا کر اونچائی سے لاشوں کو بڑے سے کھڈے میں پھینکا جاتا ہے بس فورا اپنے اس نویں کلاس میں زیر تعلیم کزن شہریار کو بلایا فلم کا سین دکھایا اور سمجھایا کہ بیٹا سوشل میڈیا پر زیادہ تر ریٹنگ کا چکر ہوتا ہے ، کورونا سے ضرور ڈرو لیکن افواہوں پر کان نہ دھرو،

آجکل گھروں میں بند رہنے کا آئسولیشن کا وقت چل رہا ہے اس لیے کافی وقت سوشل میڈیا پر ہر ایک کا گزرتا ہے ان میں سے میں بھی ایک ہوں، اٹلی سے سچ مچ ایک ویڈیو آئی سوشل میڈیا پر ویڈیو دیکھی تو تسلی ہوئی کہ ریٹنگ ہوگی تو صحیح ہے، اور لاشوں کو پھینکنے جلانے یہ تمام باتیں جھوٹ ثابت ہو گئیں ، ویڈیو میں دکھایا گیا کہ اٹلی میں ایک مسلمان کی وفات کورونا سے ہوئی تو مسلمان کا جنازہ قبرستان میں پڑھا گیا، جنازے میں 10 افراد شریک تھے، مرحوم کی میت تابوت میں بند تھی، قبر کے اوپر ایک لوہے کی چوکور مشین تھی جسکے ساتھ دو سبز رنگ کے چوڑے پٹے بندھے تھے ان پٹوں پر تابوت رکھا گیا، اور اس چوکور مشین کا سائید سے لگا ہینڈل گھما کر تابوت قبر میں اتارا گیا، تلاوت بھی کی گئی دعا بھی کی گئی، اس کے بعد بیلچے سے ایک فرد نے مٹی ڈالی باقی مٹی کرین نے ڈالی، قبرستان میں کئی اور قبریں بھی دکھائی گئیں کہ تمام مرنے والوں کو دفنایا گیا،

کورونا ایک عالمی وبا ہے یقیناً ہم سب پر احتیاط لازمی ہے لیکن خدارا عوام سے گزارش ہے اٹلی یا دیگر تمام مالک جہاں بہت سی اموات ہو چکی ہیں تیزی سے مرض پھیل رہا ہے ان سب کے لیے بھی دعا کریں، انسانیت پہلے ہے انسانوں کے لیے دعا کر لیں، اگر اٹلی یا کہیں بھی اموات زیادہ ہو رہی ہیں تو افواہوں کو پھیلانے افواہوں پر یقین کرنے اور افواہوں کا حصہ بننے سے گریز کریں، ریٹنگ کے چکر میں انسانوں کے دل و دماغ سے نہ کھیلیں، وقت کا تقاضا ہے کہ ایک دوسرے کی طاقت بنتے ہوئے ایک دوسرے کی حفاظت کریں، فلمیں دیکھنے کا شوق ہے ضرور دیکھیں لیکن انہیں موجودہ حالات سے جوڑ کر انسانوں کے ذہن و دل سے نہ کھیلیں، آپکی ریٹنگ ایک مثبت پیغام سے بھی بڑھ جائے گی، اللہ سے تمام ممالک کی خیریت کی دعا کرتے ہوئے مثبت پیغامات کو فروغ دیں، ریٹنگ مثبت انداز میں بڑھائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں