آن لائن کلاسز کی بنیاد پر امتحانات ہونگے یا نہیں ؟

اسلام آباد(سٹیٹ ویوز /مانیٹرنگ ڈسک ) وفاقی حکومت کی جانب سے پہلے مرحلہ میں مڈل تک تمام سکولوں کے طلباء کو کورونا وبا کی وجہ سے پروموٹ کر دیا گیا تھا جس کے بعد دوسرے مرحلہ میں نویں سے بارہویں تک کے طلبہ و طالبات کو ایک جاری کردہ پالیسی کے تحت اگلی کلاسوں میں پروموٹ کر دیا گیا تھا۔ تاہم ملک بھر کی جامعات کے بارے میں فیصلہ ہونا ابھی باقی ہے۔

مختلف یونیورسٹیوں نے ہائیر ایجویشن کمیشن کی ہدایات کے مطابق آن لائین کلاسسز کا سلسلہ تو شروع کر رکھا ہے لیکن طلبہ کی جانب سے ان آن لائین کلاسسز کو بے سود قرار دیا گیا ہے طلبہ کی اکثریت نے سوشل میڈیا بالخصوص ٹویٹر پر اس بارے میں مہم چلائی کہ انہیں بھی سابقہ نتائیج کی بنیادپر اگلی جماعتوں میں پروموٹ کیا جائے۔

ہائیر ایجوکیشن کمیشن نے ملک بھر کی جامعات کےبارے میں حتمی پالیسی مرتب کرنے کے مختلف یونیورسٹیز کے وائیس چانسلرز سے تجاویز مانگی ہیں جن کی بنیاد پر آن لاین کلاسسز کو بنیاد بناتے ہوئے جامعات کے طلباء و طالبات کے امتحانات کے بارے میں حتمی فیصلہ کیا جائےگا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں