Ghulam Ali Khan

کرنل کی بیوی والا معاملہ اب ختم کر دیناچاہیے

پوری قوم کرنل کی بیوی کرنل کی بیوی کا راگ الاپنے لگی ہے.اب دیکھنا یہ ہے کہ اس سڑک کو بند کیوں کیا گیا تھا.جسے کرنل کی بیوی نے زبردستی کھولا. ہم نے اکثر سفر کے دوران دیکھا ہے کئی بار تجربہ بھی ہواہے کہ اکثر سڑک پر شاہی قافلے کے گزرنے کے لئے روٹ لگا ہوا ہوتا ہے اور ساری ٹریفک کو ایک حکم کے تحت روک دیا جاتا ہےاور جب شاہی قافلہ گزر جاتا ہے خواہ اس کوگھنٹہ لگے یا دو گھنٹے لگیں اتنی دیر ٹریفک بند ہی رہتی ہے.

یہ نظام ہی اسی طرح بنا ہے، یہ نظام چند شاہی خاندانوں سرمایہ دار اور جاگیردار طبقے کے لئے بنا ہے. یہ نہ سمجھئے گا کہ تبدیلی سرکارآئی ہے تو روٹ نہیں لگیں گے.بالکل ویسے ہی ن لیگ اور پیپلزپارٹی کی حکومتوں میں جس طرح کے پروٹوکول کے نام پر سڑکوں کو بند کیا جاتا تھا ،اب بھی بالکل اسی طرح پروٹوکول کا سلسلہ جاری ہے.
وہی نظام ہے ،وہی انتظام ہے،سٹیٹس کو کا نظام ہے، اس لئے کرنل صاحب کی بیوی نے اگر تنگ آ کر اپنی دلیری دکھا دی ہے اس پر ان کو اتنا بدنام نہ کیا جائے.
میں کوئی ان کی سپورٹ نہیں کر رہا، مگر عورت ذات ہے اور عورت کا احترام بھی ہم سب پر فرض ہے، اگرچہ انہوں نے غلط کیا ہے ان کا طریقہ کار جارحانہ تھا، اوران کا رویہ بھی بد تمیزی پر مبنی تھا،ان کو ایسے نہیں کرنا چاھیے تھا ۔

بطور خاتون ان کو ایسا کرنا زیب بھی نہیں دیتاتھامگر آپ یہ سوچیں کہ جب آپ خود کسی جگہ روڈ پر لگے روٹ میں پھنس جائیں تو آپ کے کیا جذبات اور احساسات ہوتے ہیں اور جو کرنل کی اہلیہ ہو ان کو تو غصہ آنا ہی ہے اپنے عہدے کا زور تو انہوں نے دکھانا ہےہمارے پاس اگر کوئی اس طرح کا عہدہ ہو تو کیا ہم خاموش رہیں گے.

اپنا تبصرہ بھیجیں