ٹائیفائیڈاورکوروناکی ملتی جلتی علامات،مریضوں کوکیاکرناچاہیے ،ماہرین نے مشورہ دیدیا

اسلام آباد(ویب ڈیسک )طبی ماہرین کاکہناہے کہ کروناوائرس اورٹائیفائیڈ کی ملتی جلتی علامات کے باعث ڈاکٹر کئی مریضوں کے ٹائیفائیڈ ٹیسٹ کروارہے ہیں جومثبت بھی آرہے ہیں مگرانہیں ٹائیفائیڈ کی بجائے کروناٹیسٹ کروانے چاہئیں۔خیبرپختونخواہ کے طبی ماہرین کاکہناہے کہ کرونا وائرس اورٹائیفائیڈ کی ملتی جلتی علامات کے باعث ڈاکٹر کئی مریضوں کے ٹائیفائیڈ ٹیسٹ کروارہے ہیںجومثبت بھی آرہے ہیں۔جوبھی مثبت بھی آرہےہیں.

مگر انہیں ٹائیفائیڈ کی بجائےکوروناکے ٹیسٹ کروانے چاہئیں تاکہ مریضوں میں دونوں بیماریوں سے متعلق تذبذب ختم ہو۔لیڈی ریڈنگ ہسپتال کے ڈاکٹر شمس نے نجی خبررساں ادارے کوبتایاکہ جب مریض مجھ سے رابطہ کرتے ہیں جن کوبخار،جسم میں درداورپیٹ کی خرابی کامسئلہ درپیش ہوتاہے لیکن وہ ٹائیفائیڈ کاعام ٹیسٹ جس کووڈال یاٹائفی ڈاٹ ٹیسٹ کہاجاتاہے کرواکرکہتے ہیں کہ ان کوٹائیفائیڈ ہوگیاہے۔

ڈاکٹر شمس نے بتایا مسئلہ یہ ہے کہ دیہی علاقوں میں ڈاکٹر انہی علامات کولے کرمریض کوٹائیفائیڈ ٹیسٹ تجویز کرتے ہیں جس میں ٹائیفائیڈ تشخیص ہوتاہے تاہم بظاہر وہ فالز پازیٹویعنی مثبت ہوتاہے کیونکہ آج کل کروناکی وبامیں جب بھی بخارہوتاہے توپہلے کروناکاٹیسٹ تجویزکرناچاہیے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں