کرونا کو عوام نے شکست دیدی، متحدہ عرب امارات میں نافذ کرفیو اٹھا لیا گیا

متحدہ عرب امارات(سٹیٹ ویوز)متحدہ عرب امارات حکومت نے ملک بھر میں نافذ کرفیو اٹھا لیاہے، ملک بھر میں جاری میں جاری ڈس انفیکشن سپرے کرنے کی مہم بھی تکمیل کو پہنچ گئی ہے،حکومتی فیصلے کا فوری اطلاق ایس او پیز کے تحت کردیا گیا.12 سال سے کم عمر بچوں کا شاپنگ مالز میں داخلہ بند ہوگا جبکہ تین سے زیادہ افراد کار میں ایک ساتھ سفر نہیں کرسکیں گے اور بڑے عوامی اجتماعات پر بابندی اب بھی برقرار رہے گی.

یو اے ای کے سرکاری میڈیا کے مطابق متحدہ عرب امارات میں نافذ کرفیو تین امہ کے بعد اب اٹھا لیا گیا ہے. مملکت کے شہریوں پر عائد نقل و حرکت کی پابندیاں اب ختم ہو گئی ہیں. متحدہ عرب امارات کے شہری اب دن کے کسی بھی وقت، کسی بھی علاقے کا سفر کر سکتے ہیں. متحدہ عرب امارات میں مارچ کے ماہ سے جاری نیشنل ڈس انفیکشن مہم بھی اختتام کو پہنچ گئی ہے تاہم پبلک عمارتوں کو ڈس انفیکٹ کیے جانے کا سلسلہ جاری رکھا جائے گا.

متحدہ عرب امارات میں کرونا وائرس پھیلاو کے باعث 26 مارچ کو ڈس انفیکشن مہم کے آغاز کے بعد کرفیو نافذ کیا گیا تھا، ابتداء میں رات 8 بجے سے صبح 6 بجے تک لوگوں کو باہر نکلنے کی اجازت نہیں تھی.بعد ازاں 31 مارچ کو مملکت بھر میں نقل و حرکت، کاروباری اور دیگر سرگرمیوں پر پابندیاں عائد کر دی گئی تھیں.

23 اپریل کو ان پابندیوں میں نرمی کرتے ہوئے مالز اور ریسٹورنٹس محدود پیمانے پر کھولنے کی اجازت دی گئی تھی، جبکہ رات کے کرفیو کے اوقات کار میں تبدیلی کرتے ہوئے رات 10 بجے سے صبح 6 بجے تک کرفیو نافذ کیا گیا. ان سخت پابندیوں کی وجہ سے ہی متحدہ عرب امارات میں کرونا وائرس کنٹرول میں آیا اور عوام نے حکومت کی پالیسی پر مکمل عمل کیا. متحدہ عرب امارات میں کرونا مثبت رپورٹ ہونے والے کل 46 ہزار سے زائد کیسز میں سے 34 ہزار سے زائد صحتیاب بھی ہو چکے ہیں.

اپنا تبصرہ بھیجیں