جموں کشمیر لبریشن فرنٹ چیئرمین سردار صغیر خان نے اسمبلی کی طرف احتجاجی مارچ کا اعلان کردیا

مظفرآباد(سٹیٹ ویوز)جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ نے وزیراعظم آزاد کشمیر کے انتخاب کے دن اسمبلی کی جانب مارچ کرنے کا اعلان کردیا آئندہ نام نہاد اسمبلی سے ایک قرار داد پاس کروا کر آزادکشمیر کو صوبہ بنانے اور پھر اس خطے کے حصے بخرے کرنے کی سازش ہو رہی ہے جسے کسی صورت تسلیم نہیں کریں گے جموں و کشمیر کے عوام کی آواز احتجاج کے ذریعے دنیا بھر تک پہنچائیں گے 73 سالوں سے جاری غیر جمہوری عمل کو بے نقاب کریں گے

ان خیالات کا اظہار جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین سردار محمد صغیر خان نے راجہ مظہر اقبال ایڈووکیٹ،سردار پرویز خان،راجہ غلام مجبتیٰ،شاہ زیب حبیب،ثاقب اسلم کے ہمراہ مرکزی ایوان صحافت میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ قابض اور مفتوحہ قوتیں کبھی بھی جمہوری روایات کو پروان چڑھنے نہیں دیتی نام نہاد جمہوری عمل میں وزیراعظم کی سلیکشن کے دن ہونے والے ڈرامے کے وقت جموں کشمیر لبریشن فرنٹ بینک روڈ سے احتجاجی ریلی کا آغاز کریگی جو اسمبلی گیٹ کے سامنے اختتام پذیر ہوگی جس کا مقصد دنیا بھر کے سامنے جموں کشمیر کے عوام کی آواز پہنچانا ہے،ایک نام نہاد ڈرامے کے ذریعے منتخب کیے گئے لوگ جموں کشمیر کے عوام کے نمائندئے نہیں ہیں۔

انہوں نے کہا کہ آئندہ اسمبلی سے کوئی ایسی قرار دار جو ریاست کی مستقل تقسیم کا عمل ہو ہمارے لیے ناقابل برداشت ہوگی ایسا عمل اقوام متحدہ کی قرار دادوں کی خلاف ورزی ہے اور انسانی حقوق کے چاٹر کیخلاف بھی ہے۔کسی اسمبلی کو یہ حق حاصل نہیں ہے کہ وہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مغائر خطے کے مستقبل کا کوئی فیصلہ کر سکے۔پاکستان کے 70سال موقف اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق مسئلہ کشمیر کا حل رہا ہے لیکن اگر اس طرح کا کوئی اقدام اٹھایا جارہا ہے تو یہ پاکستان کے موقف کے متصادم اور ریاست کے عوام کے بنیادی جمہوری حق کے مخالف ہے۔

انہوں نے کہا کہ شاردہ میں پیش آنے والے واقع انتہائی قابل مذمت ہے ایف سی نے شاردہ میں انسانی جانوں سے کھیلا،کشمیریوں کو کیڑے مکوڑے سمجھا گیا اور واقع کے بعد انسانی جان کے ضیائع پر صرف ایک ایف آئی آر کاٹی گی ہمارا مطالبہ ہے کہ اس ایف آئی آر میں ایف سی کے اعلیٰ حکام انہیں آزادکشمیر بلانے والوں اور سہولت فراہم کرنے والوں کے نام بھی درج کیے جائیں۔انہوں نے کہا کہ ہم اپنی تحریک کو کسی بھی صورت پرتشدد نہیں بنائیں گے اگر کسی نے اس تحریک کو پرُ تشدد بنانے کی کوشش کی تو اُس کے بعد آنے والے ردعمل کے ہم ذمہ دار نہیں ہوں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں