آزادکشمیر میں پی ٹی آئی حکومت آپسی انتشار کی شکار، ایک سال بھی حکومت قایم نہیں رہ سکتی۔ چوہدری لطیف اکبر

مظفرآباد(بیورورپورٹ)آزادکشمیر قانون ساز اسمبلی میں قائد حزب اختلاف چوہدری لطیف اکبر نے کہا ھے کہ تحریک انصاف کی گورنمنٹ آزاد کشمیر میں قائم ھونے سے پہلے ھی انتشار کا شکار ھو چکی ھے ۔ وزیراعظم پر اتنا پریشر ھے وہ ایک ماہ میں ھی اسمبلی ختم کرنے کا بیان جاری کرتے ہیں ۔

وزراء ‘ دفاتر اور گاڑیوں کیلئے آپس میں لڑ رھے ہیں ۔ تحریک آزادی کشمیر سے حکومت کو کوئی دلچسپی نہیں ھے ۔ علی گیلانی کی وفات پر حکومت تعزیتی ریفرنس تک نہیں کر سکی ۔
پی ٹی آئی کی حکومت آزاد کشمیر میں ایک سال بھی نہیں چل سکتی ۔

ان کی آپس میں لڑائی سے نہ صرف آزاد کشمیر کی عوام مایوسی کا شکار ھے بلکہ مقبوضہ کشمیر کے لوگوں کو بھی کوئی مثبت اور یکجہتی کا پیغام نہیں دیا گیا ۔

اس بات کا اظہار انھوں نے اپنے حلقہ انتخاب میں ایک استقبالیہ تقریب سے خطاب کرتے ھوئے کیا ۔
اپوزیشن لیڈر چوہدری لطیف اکبر نے کہا پاکستان کی عوام اس وقت مہنگائی کی چکی میں پس رھی ھے ‘ لوگ بھوک اور افلاس کی وجہ سے خود کشی کر رھے ہیں ۔

بیروزگاری اپنے عروج پر ھے ۔ بلاول بھٹو سندھ ‘ بلوچستان سے جنوبی پنجاب میں داخل ھو چکے ہیں ۔ لوگ جوق در جوق پاکستان پیپلزپارٹی میں شامل ھو رھے ہیں ۔ پاکستان کی عوام بلاول بھٹو کو ھی اپنی امیدوں کا محور و مرکز سمجھتی ھے ۔

پاکستان کے اگلے وزیراعظم بلاول بھٹو ہیں ۔ اس موقع پر نو منتخب ممبر اسمبلی سید بازل علی نقوی نے کہا کہ آزاد کشمیر پی ٹی آئی کی حکومت چھ ماہ تا سال تک نہیں چل سکتی ۔ آزاد کشمیر میں پاکستان پیپلزپارٹی کی حکومت قائم ھو گی اور لطیف اکبر قائد حزب اختلاف سے قائد ایوان ھوں گے ۔

استقبالیہ تقریب سے پی پی پی تحصیل کے جنرل سیکرٹری چوہدری مراد علی ۔ سردار نواز ۔ سردار نزیر حسین ۔ صغیر مغل و دیگر نے بھی خطاب کیا ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں