*اقوام متحدہ عالمی سامراج کی لونڈی مسلۂ کشمیر پر کمزوری دکھائی:سردار انوار*

امریکہ(سٹیٹ ویوز)جموں کشمیر لبریشن فرنٹ کے سیاسی شعبہ کے سابق سربراہ سردار انور ایڈوکیٹ نے کہا ھے کہ اقوام متحدہ بین اقوامی سامراج کی لونڈی ھے اگر مسلہ دو کمزور اقوام کے درمیان میں ہوتا ہے تو مسلہ ہی غائب ھو جاتا ھے مسلہ ایک کمزور اور طاقتور اقوام کے درمیان میں ہوتا ہے تو اقوام متحدہ اور کمزور قوم غائب ہو جاتی ہے اور اگر مسلہ دو طاقتور اقوام کے درمیان ہو تو اقوام متحدہ غائب ہو حاتا ھے مسلہ کشمیر پر بھی اقوام متحدہ کا دوغلا کردار پوری دنیا کے سامنے ہے کہ ریاست جموں کشمیر کے ایک بڑے حصے بھارتی مقبوضہ پر دنیا کے سب سے بڑا دہشت گرد مودی نے قتل و غارت کابازار گرم کر کے اس حصے کو دنیا کی سب سے بڑی جیل میں تبدیل کر رکھا ہے

ریاست کے دوسرے حصے پاکستانی مقبوضہ کشمیر گلگت بلتستان اور نام نہاد آذادکشمیر پر پاکستان نے اپنے سہولت کاروں اور آلہ کاروں کے زریع قبضہ کر کے اپنی کالونیاں بنا رکھا ہے 5 اگست 2019 سے قبل ہی ریاست جموں کشمیر کی نماہندہ جماعت جموں کشمیر لبریشن فرنٹ پر پابندی لگا کر اور اس کے چئیرمین موجوہ تحریک کے ترجمان محمد یاسین ملک کو بدنام زمانہ تہاڑ جیل میں پابند سلاسل کر کے بھارتی حکومت نے بین اقوامی سامراج کی سر پرستی اور پاکستانی حکمرانوں کی گٹھ جوڑ سے آہینی دہشتگردی کر ذریع 35A اور 370 ختم کر کے بھارتی مقبوضہ کشمیر کو یونین ٹریٹری میں شامل کر دیا اور اس کے بعد حکومت پاکستان کی طرف سے گلگت بلتستان اور آزادکشمیر کو اپنے سہولت کاروں ذریعے پاکستان کا صوبہ بنانے کا منصوبہ ریاست جموں کشمیر کی مستقل تقسیم کے پلان کا حصہ ھے اور ان غیر قانونی غیرآئینی اور توسع پسندانہ عزاہم پر اقوام متحدہ کی مجرمانہ خاموشی سوالیہ نشان ھے

تاریخ گواہ ہے کہ ظلم جبر اور بربریت کے ذریع کسی بھی قوم کو ہمیشہ ہمیشہ کے لیے محکوم نہیں بنایا جا سکتا بلکہ ظلم جیر اور بربریت کی کوکھ سے ہی تحریکوں کا جنم ہوتا ھے خود مختار کشمیر بھارت پاکستان اور چین کے درمیان دوستی تجارت اور امن کاپل بن سکتا ھے ہم اپنے پابند سلاسل قاہد یاسین ملک کی قیادت میں ریاست جموں کشمیر کی مکمل آذادی اور غیر طبقاتی سماج کےقیام کے لیے جدوجہدجاری رکھیں گے

اپنا تبصرہ بھیجیں