سیلاب نے کپڑے کے کاروبار بھی کمر توڑ دی

ملک میں سیلاب نے جہاں بڑی آبادی کو براہ راست متاثر کیا ہے تو وہیں فیصل آباد کے تاجر بھی سیلاب کے اثرات سے محفوظ نہیں رہے، کپڑے کی مصنوعات کی فروخت کی منڈیاں اجڑنے سے کاروبار تباہی کے دہانے پر پہنچ گیا ہے۔

فیصل آباد کی کپڑا مارکیٹیں بھی ملک کے بڑے حصے پر تباہی مچانے والے سیلاب کے اثرات سے انتہائی متاثر ہیں، سندھ، بلوچستان اور خیبر پختونخواہ میں کپڑے کی طلب نہ ہونے کے برابر ہے اور کپڑے کا کاروبار خسارے کا شکار ہے.

تاجروں کا کہنا ہے کہ جہاں سیلاب نے کپڑے کی خریداری کو متاثر کیا ہے وہیں مہنگائی نے حالات مزید ابتر کر دیے ہیں، دوسری جانب بجلی کے مہنگے بلوں سے بھی تاجر پریشان نظر آتے ہیں۔سیلاب سے کپڑے کی منڈیاں اجڑنے سے متاثر تاجروں نے حکومت سے اپیل کی ہے کہ کپڑے کی صنعت کو بچانے کے لیے فوری طور پر ریلیف پیکج فراہم کیا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں