بلاشبہ آپ اپنے کام میں یکتا ہیں

تحریر: زوہیب بیگ

وابستگی سے ذرا ہٹ کر دیکھ لیں سردار قمر الزمان کو جب بھی اقتدار کا موقع ملا اس کے ثمرات عام آدمی تک پہنچے۔
دنیا کی تاریخ گواہ ہے شہر کاروباری مراکز سے کم اور اداروں کی وجہ سے زیادہ آباد رہتے ہیں ۔

باغ شہر کے تعارف اور اس شہر میں باہر سے آنے والوں کی آمد و رفت ان تمام بڑے اداروں کی وجہ سے جو بلا مبالغہ سردار قمر الزمان کی جرات مندانہ قیادت اور حکومت میں نمائندگی کے باعث ممکن ہوئے ۔
صحت ، تعلیم اور تعمیر کے شعبے میں سردار قمر الزمان کا موازنہ پورے آزاد کشمیر میں کسی کے ساتھ نہیں کیا جا سکتا ۔

یاد رہے کہ باغ سے سردار قمر الزمان کی کاوشوں سے ہونے والے کام کو نفی کر لیا جائے تو آپ کے پاس پبلک سیکٹر میں کچھ نہیں بچتا جو بیرون ضلع کے لوگوں کا باغ آنے کا باعث بن سکتا ہو ۔کون نہیں جانتا کہ باغ کے عوام کے حقوق کی جنگ میں سردار قمر الزمان نے کئی بار اپنی زات کی قربانی تو دے دی لیکن حقوق اور اداروں کے حصول کے لیے اپنے موقف سے ایک انچ بھی پیچھے نہیں ہٹے۔

اسمبلی کا ریکارڈ گواہ ہے کہ جب بھی سردار قمر الزمان نے عوام کے حقوق کی بات کی تو بے مثال کی پاکستانی اعلیٰ حکام کے سامنے اپنا موقف رکھا تو بے لاگ رکھا۔ تعلیمی پیکیج ہو یا ہیلتھ پیکیج یہ وہ کارنامے ہیں جن کے نقوش ان مٹ ہیں۔ ویمن یونیورسٹی ہو یا الائیڈ ہیلتھ انسٹیٹیوٹ ان کے حصول کے لیے ایک ہی جرآت مند آبرو مند اور عوام دوست قیادت کی جدوجھد ہے جیسے اہل وطن شیر باغ کے نام سے جانتے ہیں۔

دوسری طرف ایک باغ میں سیاحتی سرگرمیوں کو دیکھا جائے تو باغ میں ٹورازم کے فروغ کے پیچھے سردار قمر الزمان کا ویژن شامل ہے انہوں نے نہ صرف سیاحتی مقامات تک روڈ مہیا کی بلکہ سیاحتی اور ثقافتی میلے کا انعقاد کر کہ دنیا کی توجہ باغ کے سیاحتی مقامات کی طرف مبذول کرائی اسی لیے آج باغ بھی سیاحوں کی آمد و رفت کے اعتبار سے قابل ذکر اضلاع میں شمار کیا جاتا ہے ۔ محدود ریاستی وسائل کے باوجود سرکاری سطح پر روز گار کے مواقع مہیا کرنے میں بھی سردار قمر الزمان آہنی مثال آپ ہیں ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں