نقطہ نظر/اے رحمان خیال عباسی

بلدیاتی الیکشنزاورغربی باغ کی یونین کونسلز کی تجزیاتی رپورٹ

یونین کونسل مکھیالہ
کُل ووٹس 13774
دو میجرز کے درمیان کانٹے کا مقابلہ ہے گراوٴنڈ میں دونوں سخت مقابلہ متوقع ہے۔میجر لطیف خلیق صاحب یونین کونسل کی وارڈ ناڑا کوٹ، تنیلاں، اپر ریالہ، لوئر ریالہ، اور ناڑوٹی اور ارد گرد سے جیت جاہینگےجبکہ میجر نصراللہ صاحب غازی آباد، کرنوٹا،اپر اور لوئر مکھیالہ،کنیاٹی، سینکاڑی، سے باآسانی جیت جاہینگے۔ان دونوں کی پوزیشن اس وقت تک 45 میجر لطیف خلیق جبکہ 50% میجر نصراللہ کو ایج حاصل ہے برحال آہندہ کچھ دنوں میں میجر لطیف خلیق صاحب اور انکی ٹیم نے اپنے اعصاب پر قابو رکھا اور میجر نصراللہ صاحب کی مضبوط وارڈز سے تھوڑی سی محنت اور کی تو میجر لطیف جیت کے بہت قریب ہونگے۔تیسرے راجہ مبشر اعجاز صاحب کوئی خاص ڈیمیج دینے کی یا سرپرائز دینے کی پوزیشن میں نہیں لگ رہے۔

یونین کونسل چڑالہ
کُل ووٹس 9696
یونین کونسل چڑالہ میں بہت دلچسپ ماحول ہے آپکو یہ جان کر حیرنگی ہوگی کے سوشل میڈیا میں نظر آنے والے حالات سے گراوٴنڈ پوزیشن یکسر مختلف ہے۔ جاوید عارف صاحب کے مد مقابل مسلم کانفرنس کے امجد عباسی ٹف ٹائم دے رہے ہیں بلکہ اس وقت کی پوزیشن کیمابق 5% کی برتری ہے جاوید عارف صاحب کو جو مسلم کانفرنس کے تجربہ کار کارکنان کسی بھی حربے سے اس خلا کو پُر کر سکتے ہیں۔
چڑالہ یونین کونسل کی ٹوٹل سات وارڈز ہیں۔ جن میں چڑالہ خاص، موہڑہ، نمب سیداں، پانڈی،پونہ برما، سوہاوہ سے جاوید عارف صاحب کی پوزیشن مضبوط ہے جبکہ کاٹھوار، جہالہ، سیری بانڈی، فتخ پور، اور لوئر سوہاوہ سے مسلم کانفرنس جیتنے کی پوزیشن میں ہے۔ انکی جیت کا فیصلہ کرنوٹہ، پونہ مڈل سکول اسٹیشن، کرینگے کیونکہ یہاں دونوں بالکل ون ٹو ون پوزیشن ہے.

یونین کونسل سیسر کلس
کُل ووٹس 6235
یونین کونسل سیسر کلس بھی دلچسپی کا مرکز بنا ہوا ہے ٹوٹل سات وارڈز ہیں اور امیدوار پانچ ہیں ۔اصل مقابلہ ابھی تک تین لوگوں مسلم کانفرنس کے سردار سلیم عباسی، مسلم لیگ ن کے حمایت یافتہ عبدالحق عباسی اور مسلم کانفرنس کے ناراض امیدوار عنصر شہزاد عباسی کے درمیان ہے۔کیری بگلوٹے، کھیران، سیسر سے عبدالحق صاحب کی پوزیشن مضبوط ہے جبکہ اپر کلس، لوئر کلس پجے سے سلیم عباسی صاحب ایک مضبوط پوزیشن کیساتھ میدان میں ہیں جبکہ نیلابٹ ، گراں، بنج، بٹاٹ، بگلیاں لاوڑِی سے عنصر شہزاد صاحب کی پوزیشن مضبوط ہے۔ اس وقت تینوں امیدوار بالکل برابر کھڑے ہیں نیلا بٹ ون وے کر رہے ہیں عنصر شہزاد صاحب جبکہ وہ سیسر، داناہ، اور اپر پجے اپر کلس سے بھی اچھی خاصی ووٹس لے سکتے ہیں۔ اسکی وجہ یہ ہے کے مسلم کانفرنس کے ناراض لوگوں کی سپورٹ بھی انکو حاصل ہے۔ جبکہ عبدلحق صاحب بھی داناہ اور اپر کلس سے ووٹس لینے میں کامیاب ہو جاہینگے۔سردار سلیم صاحب کے پاس پارٹی ٹکٹ ہونے کیوجہ سے انکو ایج حاصل ہے کے کلس پجے سے تو وہ ووٹس اچھی خاصی لے لینگے اور ساتھ باقی پولنگ اسٹیشنز سے بھی پارٹی امیدورا ہونے کے ناطے ووٹس نکال لینگے مسلم کانفرنس کے یونین کونسل سیسر کلس کے صدر عمر حیات صاحب سمیت بڑے سینئر لوگوں کی بھرپور حمایت بھی حاصل ہے اس لیے اس یونین کونسل میں تینوں کی پوزیشن 33% ہے جبکہ کچھ دن پہلے تک آزاد امیدوار عنصر شہزاد کچھ برتری رکھے ہوئےتھے لیکن سردار عتیق کے دورہ کلس سیسر کے بعد حالات ایک بار پھر سلیم عباسی صاحب کیطرف جاتے نظر آ رہے ہیں۔

یونین کونسل رنگلہ
کُل ووٹس 7082
یونین کونسل رنگلہ سے PTI کے فہیم فاروق، MC کے راجہ خورشید حمید، PMLN کے راجہ نواز، اور PPP کے یونس انقلابی ہیں لیکن اس وقت یہاں بہت ہی زبردست مقابلہ ہونے جا رہا ہے۔ راجہ خورشید حمید کے پاس مسلم کانفرنس کا ٹکٹ ہونے کیوجہ سے ہر پولنگ اسٹیشن میں ووٹس تو ملیں گے لیکن انکے مدمقابل راجہ فہیم فاروق اور راجہ نواز سخت ٹکر دے رہے ہیں۔ اپر رنگلہ، ہاڑی چِیڑ، اور چھپڑیاں اور کوڑی کیر سے MC اور PMLN کے راجہ نواز کا مقابلہ ہے جبکہ باڑیاں، ملاچھ، جلالی، ٹوپی کوٹ،کٹ کیر یہاں سے فہیم فاروق صاحب اور MC کا مقابلہ ہے اور یہاں سے راجہ فہیم صاحب کو ایج حاصل ہے۔میرے تجزیے کیمبابق یہاں راجہ خورشید حمید صاحب کو معمولی برتری حاصل ہے لیکن بہت روشن چانسز ہیں ن لیگ یا PTI کسی بھی وقت کہیں سے بھی اپ سیٹ کر سکتی ہیں۔

یونین کونسل ساہلیاں
کُل ووٹس 7932
دو امیدوار مسلم کانفرنس کے ظفر زریف صاحب اور جماعت اسلامی، ن لیگ، اور دیگر جماعتوں کے حمایت یافتہ ناصر عباسی کے درمیان ون ٹو ون مقابلہ ہے۔مسلم کانفرنس کے ظفر عباسی نمب تمنوٹہ، چھجہ موہڑہ، ریں سیال، میرہ سے جیت سکتے ہیں جبکہ مندری، شرقی ، غربی، پنالی، بگلہ ناصر عباسی جیت رہے ہیں۔ جبکہ ڈھیر سکندر آباد ففٹی ففٹی ہے۔ ابھی تک کے تجزیے کیمطابق ناصر عباسی کا پلڑا بھاری نظر آتا ہے۔

یونین کونسل ہل سرنگ
کُل ووٹس 9954
یونین کونسل ہل سرنگ میں تین امیدواروں کا آپس میں کانٹے کا مقابلہ ہے۔ چمن کوٹ کے دونوں پولنگ اسٹیشنز میں JUI کے مولانا امجد صاحب اور مسلم کانفرنس کے ملک امان کا مقابلہ ہے جبکہ مناسہ کے دونوں پولنگ اسٹیشن میں PTI کے توصیف عباسی اور MC کا مقابلہ ہے ۔ ہل سے JUI اور مسلم لیگ ن کے مسرور عباسی اور ملک امان کا مقابلہ متوقع ہے.ملک امان اور توصیف عباسی ایک دوسرے کے ووٹس توڑیں گے جسکا فائدہ چمن کوٹ سے مولانا امجد صاحب کو ہو سکتا ہے۔ ویسے پوزیشن ملک مان کے فیور میں ضرور ہے کیونکہ پارٹی ٹکٹ کیوجہ سے وہ ہر پولنگ اسٹیشن میں کچھ نہ کچھ ووٹس رکھتے ہیں لیکن چونکہ توصیف عباسی ٹف ٹائم دے رہے ہیں اور ہل سے مسرور صاحب کا بھی نقصان ہوگا MC کو جس سے مولانا امجد اپ سیٹ کر سکتے ہیں۔

یونین کونسل چمیاٹی :
کُل ووٹس 10313
یونین کونسل چمیاٹی کو مسلم کانفرنس کا گڑھ تصور کیا جاتا ہے۔ لیکن اس بار مسلم کانفرنس کے دو بڑوں کے درمیان اعصاب شکن مقابلے کی امید ہے۔ چمیاٹی اپر اور لوہر چمیاٹی سے MC کے شوکت افضل صاحب اور مسلم کانفرنس کے ناراض آزاد امیدوار انقلاب عباسی کے درمیان کانٹے کا مقابلہ ہے یہاں پر انقلاب عباسی کو ایج حاصل ہے جبکہ سنگڑھ بٹھارہ کے تینوں پولنگ اسٹیشنز گلی بٹھارہ، سیری ، اپر سنگھڑ سے ایک اور آزاد امیدوار اور صحافی وسیم عباسی اور MC کے شوکت افضل صاحب کے درمیان مقابلہ متوقع ہے۔ سنگڑھ بٹھارہ شوکت افضل صاحب کا ہوم اسٹیشن ہے تو وہاں سے وسیم عباسی صاحب انکی اچھی خاصی ووٹس توڑ سکتے ہیں جسکا انکو نقصان ہوگا اور آل ووٹس میں ۔ کنیاٹی، بڈھیار میں بھی سخت مقابلہ متوقع ہے ۔ برحال انقلاب عباسی اور شوکت افضل اس وقت ففٹی ففٹی ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں