بھارت انسانی حقوق کی پامالی میں ملوث ۔جی 20 ممالک مقبوضہ جموں کشمیر میں اجلاس سے گریز کریں۔کشمیر گلوبل کونسل

نیویارک(پ ر ) کشمیر گلوبل کونسل نے عالمی برادری اور جی 20 ممالک کو متنبہ کیا ہے کہ بھارتی ایما پر مقبوضہ جموں کشمیر میں کسی بھی اجلاس سے گریز کیا جائے۔ کشمیر گلوبل کونسل (KGC) نے بھارت کی طرف سے 2023 کے جی 20 اجلاسوں کے مقامات کی فہرست میں جموں و کشمیر کو شامل کیے جانے پر گہری تشویش اور فکر مندی کا اظہار کیا ہے۔

کے جی سی کے صدر فاروق صدیقی نے خصوصی بیان میں کہا ہے کہ اگر روس کریمیا یا ڈونیٹسک میں جی 20 اجلاسوں کی میزبانی کرتا ہے تو امکان ہے کہ امریکہ، برطانیہ، فرانس، کینیڈا اور جی 20 کے دیگر ممبران ایسے اجلاسوں کا بائیکاٹ کریں گے یا کم از کم اپنا احتجاج درج کرائیں گے۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ جی 20 ممبران کو جموں کشمیر تنازعہ کے اصل حقائق کو مد نظر رکھتے کام کرنا چاہیے اور متنازعہ کشمیر میں اپنی موجودگی سے گریز کرنا چاہیے ورنہ وہ ایک ایسی بدتریت مثال قائم کرنے کا خطرہ مول لیں گے جس سے خطوں پر قبضے اور الحاق کو جائز قرار دیا جائے۔

فاروق صدیقی نے کہا کہ یہ بات قابل ذکر ہے کہ اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفتر نے جموں و کشمیر پر دو رپورٹس(2018 اور 2019 میں) میں جاری کیں جن میں ہندوستانی مسلح افواج کی طرف سے بڑے پیمانے پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو دستاویز کیا گیا تھا۔

مزید برآں، بھارتی حکومت نے کئی دہائیوں سے غیر ملکی صحافیوں، یو این ایچ آر سی کے اہلکاروں، ریڈ کراس کو کشمیر تک سفری رسائی کی اجازت نہیں دی۔ کشمیر میں G20 اجلاسوں کی میزبانی کرنے کا بھارت کا اقدام خطے میں تین چوتھائی ملین سے زیادہ بھارتی مسلح افواج کی موجودگی کے باوجود کشمیر میں حالات معمول پر لانے کی بھارتی حکومت کی خواہش کا حصہ ہے۔

فاروق صدیقی نے کہا کہ مغربی ممالک جن کی خارجہ پالیسی کی اقدار دنیا بھر میں انسانی حقوق کے احترام کے بنیادی اصول پر مبنی ہیں ان کے لیے ایک ایسے علاقے میں کوئی بھی اجلاس منعقد کرنا مضحکہ خیز ہو گا جہاں آرمڈ فورسز سپیشل پاورز ایکٹ (AFSPA) اور پبلک سیفٹی جیسے سخت قوانین موجود ہوں۔

ایکٹ (PSA) کو استثنیٰ کے ساتھ استعمال کیا جا رہا ہے تاکہ اظہار رائے کی آزادی کو دبایا جا سکے، اور اختلاف رائے کی آواز، انصاف کے نظام کا سہارا لیے بغیر لوگوں کو استثنیٰ کے ساتھ قتل کیا جائے۔

صدر کے جی سی نے کہا کہ ہماری تنظیم گزشتہ سال کے شروع میں کینیڈا کی نیو ڈیموکریٹک پارٹی (NDP) کے اس بیان کا خیرمقدم کرتی ہے جس میں کینیڈین حکومت سے کشمیر میں G20 ایونٹس کا بائیکاٹ کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

KGC تمام G20 ممبران سے کہتا ہے کہ وہ کشمیر میں اجلاس منعقد کرنے پر بھارت کو اپنا اختلاف اس بنیاد پر بتائیں کہ کشمیر کا مسئلہ اقوام متحدہ کے چارٹر کے مطابق یا کشمیری عوام کی امنگوں کے مطابق حل نہیں ہوا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں