24

محمود احمد ساغر کا امیت شاہ کے بیان پر سخت ردعمل سامنے آگیا

اسلام آباد(سٹیٹ ویوز) جموں کشمیر ڈیموکریٹک فریڈم پارٹی کے قائم مقام چیئرمین محمود احمد ساغر نے بھارتی وزیر داخلہ امیت شاہ کے بیان پر سخت رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ مقبوضہ ریاست کے حقیقی باشندے ہونے کے ناطے یہ ہر کشمیری کا ناقابل تنسیخ حق ہے کہ وہ آزادانہ طور پر اپنا مستقبل کی منصوبہ بندی کرنے کیساتھ ساتھ سرکاری یا پرائیویٹ اداروں میں ملازمتیں تلاش کرے۔

امیت شاہ کے بیان کو کشمیری عوام کو ڈرانے یا دہشت زدہ کرنے کا ایک پرانا حربہ قرار دیتے ہوئے محمود احمد ساغر نے کہا کہ بھارت ایک قابض ہونے کے ناطے تعلیم یافتہ کشمیری نوجوانوں کو ملازمتوں سے محروم کرنے کا کوئی اختیار نہیں رکھتا۔ انہوں نے کہا کہ یہ انتہائی بدقسمتی کی بات ہے کہ نئی دہلی کشمیری عوام کو دبانے کیلئے اوچھے ہتھکنڈے استعمال کر رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ مسلمان کشمیری ملازمین کو سرکاری ملازمتوں سے برخاست کرنے کے بعد نسل پرست مودی حکومت نے کشمیری نوجوانوں کو ان کے حقوق اور مراعات سے محروم کرنے کا ایک اور حربہ دریافت کیا ہے جو انہیں بطور کشمیری شہری حاصل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کشمیری عوام کے خلاف توہین آمیز بیانات کا استعمال اور انہیں دہشت گرد یا پتھر باز قرار دینے سے مودی اور اس کے حواریوں کو مقبوضہ جموں و کشمیر میں زمینی حقیقت کو چھپانے میں کوئی مدد نہیں ملے گی۔

“وہ لوگ جو علاقے پر ناجائز بھارتی قبضے کو چیلنج کرتے ہیں اور سڑکوں پر اس غاصبانہ قبضے کے خلاف اپنے غصے کا اظہار کرتے ہیں وہ دہشت گرد نہیں بلکہ آزادی پسند ہیں”،محمود ساغر نے مزید کہا کہ اقوام متحدہ سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق بھارتی حکومت کو خطے میں روزمرہ معاملات چلانے کا محدود مینڈیٹ حاصل ہے۔ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق بھارت من مانی کر سکتا ہے اور نہ ہی کوئی ایسا اقدام کر سکتا ہے جس سے عام کشمیریوں کے بنیادی حقوق متاثر ہوں۔

انہوں نے بھارتی وزیر داخلہ کو یاد دلایا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر ایک متنازعہ علاقہ ہے جو اقوام متحدہ سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق حتمی حل کا منتظر ہے’ تاکہ کشمیری عوام اپنے مستقبل کا فیصلہ کرسکیں ۔ دریں اثنا محمود احمد ساغر نے کشمیری نظربندوں کی حالت زار پر گہری تشویش کا اظہار کیا ہے جو مقبوضہ وادی کشمیر کی دور دراز اور ریاست سے باہر کی مختلف جیلوں میں بند ہیں۔

انہوں نے نظر بند پارٹی چیئرمین شبیر احمد شاہ اور دیگر حریت رہنماؤں کی صحت کی بگڑتی ہوئی حالت زار پر بھی اپنی تشویش کا اظہار کیا جنہیں بھارتی حکومت نے بدنام زمانہ تہاڑ جیل میں سڑنے کیلئے چھوڑ دیا ہے۔ محمود ساغر نے انسانی حقوق کی عالمی تنظیموں پر زور دیا کہ وہ اس معاملے کا موثر نوٹس لیکر شبیر احمد شاہ اور دیگر کشمیری نظر بندوں کی جلد رہائی میں اپنا کردار ادا کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں